1. مواد پر جائیں
  2. مینیو پر جائیں
  3. ڈی ڈبلیو کی مزید سائٹس دیکھیں
USA Ned Price
تصویر: Nicholas Kamm/AP Photo/picture alliance

'جھوٹ اور غلط بیانی پاک امریکہ تعلقات خراب نہیں کرسکتے'

11 مئی 2022

امریکہ نے وزیر اعظم عمران خان کی برطرفی میں واشنگٹن کے ملوث ہونے کے ان کے الزامات کی ایک بار پھر تردید کی۔ امریکہ نے کہا کہ وہ 'غلط معلومات اور جھوٹ' کو پاکستان کے ساتھ باہمی تعلقات کی راہ میں حائل ہونے نہیں دے گا۔

https://www.dw.com/ur/%D8%AC%DA%BE%D9%88%D9%B9-%D8%A7%D9%88%D8%B1-%D8%BA%D9%84%D8%B7-%D8%A8%DB%8C%D8%A7%D9%86%DB%8C-%D9%BE%D8%A7%DA%A9%D8%B3%D8%AA%D8%A7%D9%86-%DA%A9%DB%92-%D8%B3%D8%A7%D8%AA%DA%BE-%D8%AA%D8%B9%D9%84%D9%82%D8%A7%D8%AA-%D8%AE%D8%B1%D8%A7%D8%A8-%D9%86%DB%81%DB%8C%DA%BA-%DA%A9%D8%B1%D8%B3%DA%A9%D8%AA%DB%92-%D8%A7%D9%85%D8%B1%DB%8C%DA%A9%DB%81/a-61754196

امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس کی معمول کی پریس بریفنگ میں بدھ کے روز جب پاکستان کے ایک نیوز چینل کے نامہ نگار نے ان سے سوال کیا کہ چونکہ پاکستان کے سابق وزیر اعظم عمران خان اب بھی اپنی حکومت کے خاتمے کا الزام امریکہ پر لگا رہے ہیں اور امریکہ مخالف مہم جاری رکھے ہوئے ہیں تو کیا ان کی اس مہم سے پاکستان اور امریکہ کے تعلقات پر کوئی فرق پڑے گا؟

نیڈ پرائس نے اس کے جواب میں کہا، "ہم کسی پروپیگنڈہ، غلط اطلاعات یا افواہوں او رجھوٹ کو باہمی تعلقات کی راہ میں حائل نہیں ہونے دیں گے۔ ہم پاکستان کے ساتھ اپنے تعلقات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔"

خیال رہے کہ امریکی محکمہ خارجہ پاکستان کے سابق وزیر اعظم عمران خان کے ان الزامات کی تردید کرتا رہا ہے کہ امریکہ پاکستان میں کسی سیاسی جماعت کی حمایت نہیں کرتا بلکہ وہ صرف قانون کی حکمرانی کے اصولوں کی تائید کرتا ہے۔

سابق وزیر اعظم عمران خان نے اپنی برطرفی کے بعد ایک خط دکھا کر عوام کے سامنے دعویٰ کیاتھا کہ یہ دھمکی آمیز خط انہیں امریکہ کی جانب سے موصول ہوا ہے جس میں ان کی حکومت کو ختم کرنے کی دھمکی دی گئی تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ خط پاکستان کی خود مختاری پر حملہ تھا۔

Pakistan l  Bilawal Bhutto Zardari wurde zum Außenminister ernannt
بلنکن اور بلاول بھٹو زرداری کے درمیان گزشتہ ہفتے بات ہوئی ہےتصویر: Anjum Naveed/AP/picture alliance

کیا بلاول بھٹو زرداری اور انٹونی بلنکن میں ملاقات ہوگی؟

امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان سے جب یہ پوچھا گیا کہ اقوام متحدہ کی جانب سے نیویارک میں 18مئی کو مجوزہ فوڈ سکیورٹی کانفرنس میں شرکت کرنے والے پاکستان کے وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری اور امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن میں ملاقات ہوگی تو نیڈ پرائس کا کہنا تھا، "فی الحال کسی دو طرفہ ملاقات کی تفصیل ان کے پاس نہیں ہے۔"

نیڈ پرائس نے تاہم کہا کہ وہ یہ کہنا چاہیں گے کہ سکریٹری بلنکن اور پاکستان کے ان کے ہم منصب بلاول بھٹو زرداری کے درمیان گزشتہ ہفتے بات ہوئی ہے اور دونوں رہنماوں نے امریکہ اور پاکستان کے درمیان باہمی تعلقات کے 75برس مکمل ہونے پر وسیع بنیاد پر باہمی تعلقات کو مزید بہتر بنانے اور آگے لے جانے کے بارے میں گفتگو کی ہے۔

امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے مزید کہا کہ سکریٹری بلنکن نے افغانستان میں استحکام او ردہشت گردی سے نمٹنے کے لیے امریکہ اور پاکستان کے عزم کا اعادہ کیا ہے۔ انہوں نے "معاشی تعلقات، تجارت، سرمایہ کاری، ماحولیات، توانائی، صحت او رتعلیم جیسے موضوعات پر بھی تبادلہ خیال کیا۔ اس لیے یہ دراصل وسیع موضوعات پر مبنی گفتگو تھی۔"

Pakistan | Imran Khan Demonstration in Lahore
عمران خان نے دعویٰ کیا تھا کہ امریکہ کی جانب سے ان کی حکومت کو ختم کرنے کی دھمکی دی گئی تھیتصویر: K.M. Chaudary/AP Photo/picture alliance

کیا آئی ایس آئی کے سربراہ امریکی وزیر خارجہ سے ملاقات کرنے والے ہیں؟

پریس کانفرنس میں جب نیڈ پرائس سے پوچھا گیا کہ چونکہ پاکستانی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کے سربراہ اس وقت امریکہ میں موجود ہیں تو کیا ان کی وزیر خارجہ بلنکن یا محکمہ خارجہ کے دیگر حکام سے ملاقات ہونے والی ہے؟ 

اس کے جواب میں امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان کا کہنا تھا،"میں آپ کو پاکستانی حکام سے رجوع کرنے کا مشورہ دوں گا تاکہ وہ آپ کو ان کے شیڈول کے بارے میں بتاسکیں۔ لیکن میں ان کی وزیر خارجہ بلنکن سے ملاقات کے بارے میں آگاہ نہیں ہوں۔"

 ج ا/ ص ز  (ایجنسیاں)

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ سیکشن پر جائیں

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ

شہباز گل کی گرفتاری، پاکستانی سیاست میں مزید تناؤ کا خدشہ

ڈی ڈبلیو کی مزید رپورٹیں سیکشن پر جائیں
ہوم پیج پر جائیں