ہر بیس میں سے ایک موت کا سبب شراب نوشی | صحت | DW | 21.09.2018
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

صحت

ہر بیس میں سے ایک موت کا سبب شراب نوشی

عالمی ادارہ صحت نے کہا ے کہ شراب نوشی سے دنیا بھر میں ہر سال تین ملین افراد لقمہ اجل بن جاتے ہیں۔ یہ تعداد ایڈز اور سڑک پر ہونے والے حادثات میں مجموعی طور پر مرنے والے افراد کی تعداد سے بھی زیادہ ہے۔

اقوام متحدہ کے ادارہ صحت کی جانب سے جاری ہونے والی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ شراب نوشی کے نتیجے میں ہونے والی ہلاکتوں میں زیادہ تعداد مرد حضرات کی ہوتی ہے۔ مے نوشی کے صحت پر اثرات سے متعلق اس جائزے میں بتایا گیا ہے کہ ہر سال بیس میں سے ایک فرد شراب نوشی کے سبب اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھتا ہے۔ یہ ہلاکتیں زیادہ تر نشے میں ڈرائیونگ، تشدد اور بدسلوکی کی وجہ سے ہوتی ہیں۔ علاوہ ازیں شراب نوشی مختلف النوع نفسیاتی اور ذہنی عارضوں کا سبب بھی بنتی ہے۔

ڈبلیو ایچ او کے سربراہ ٹیڈروس ادھانوم نے ایک بیان میں کہا،’’ شراب نوشی کے مضمر اثرات صرف پینے والے پر ہی نہیں پڑتے بلکہ اُن کے خاندانوں اور معاشرے پر بھی پڑتے ہیں۔ ایسا ان افراد کی جانب سے تشدد، بدسلوکی اور ذہنی صحت کی ابتری کے باعث بھی ہوتا ہے اور مے نوشی کی کثرت سے سرطان اور فالج جیسی بیماریوں کے سبب بھی۔ وقت آ گیا ہے کہ معاشروں کو کمزور کرنے والی اس بری عادت کے خلاف جنگ کی جائے۔‘‘

سن 2016 میں الکوحل کے استعمال سے قریب تین ملین اموات ہوئی تھیں۔ صحت کی قریب دو سو طرح کی خرابیاں مہ نوشی سے منسلک کی جاتی ہیں۔

ان میں جگر کی بیماریاں اور بعض طرح کے سرطان بھی شامل ہیں۔

اس کے مقابلے میں ایچ آئی وی/ ایڈز عالمی سطح پر اموات کے لیے ایک اعشاریہ آٹھ فیصد جبکہ روڈ حادثات کو دو اعشاریہ پانچ فیصد ذمہ دار پایا گیا ہے۔

عالمی ادارہ صحت کی جانب سے کرائے گئے اس مطالعے کی رُو سے بین الاقوامی سطح پر دو سو سینتیس ملین مرد جبکہ چھیالیس ملین خواتین شراب نوشی سے منسلک عارضوں میں مبتلا ہوتے ہیں۔

ڈبلیو ایچ او نے اقوام عالم پر زور دیا ہے کہ شراب نوشی کے سد باب کے لیے بھر پور کوشش کریں اور اس کے ساتھ ساتھ دنیا بھر میں اس کا استعمال دس فیصد تک کم کیا جائے۔

ص ح / ع ت / نیوز ایجنسی