کشمیر پر سلامتی کونسل کا اجلاس بلایا جائے، پاکستانی درخواست | حالات حاضرہ | DW | 14.08.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

کشمیر پر سلامتی کونسل کا اجلاس بلایا جائے، پاکستانی درخواست

پاکستان نے کشمیر کی صورت حال پر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا اجلاس طلب کیے جانے کی درخواست کر دی ہے۔ اس مناسبت سے پاکستانی وزیر خارجہ نے سکیورٹی کونسل کی صدر کو ایک خط بھی لکھ دیا ہے۔

پاکستانی وزارت خارجہ کے مطابق یہ خط وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے سلامتی کونسل کی صدر ژوانا ورونَیکا (Joanna Wronecka) کے نام تحریر کیا ہے۔ پاکستان اس اجلاس میں کشمیر کی موجودہ صورتحال کو زیربحث لانے کی خواہش رکھتا ہے۔ اسلام آباد نے اس میٹنگ کی درخواست بھارت کے زیر انتظام کشمیر کی خصوصی دستوری حیثیت کے بدلے جانے کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال کے تناظر میں کی ہے۔

سکیورٹی کونسل کے نام لکھے گئے خط میں پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے واضح کیا کہ موجودہ حساس صورت حال میں پاکستان کوئی اشتعال انگیزی نہیں کرے گا لیکن پاکستان کے اس ضبط و تحمل کو بھارت اس کی کوئی کمزوری خیال نہ کرے۔ اس خط کے مندرجات کو نیوز ایجنسی روئٹرز نے دیکھ کر رپورٹ کیا ہے۔

Indien Gesperrte Straße in Jammu (Reuters/M. Gupta)

پانچ اگست کے بعد سے بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں نقل و حرکت پر سخت پابندیاں عائد ہیں

شاہ محمود قریشی نے مزید تحریر کیا ہے، ''اگر بھارت طاقت کے استعمال کا انتخاب کرتا ہے تو پھر پاکستان بھی مجبور ہو جائے گا کہ وہ ایسے بھارتی اقدامات کا مناسب جواب اپنی تمام تر صلاحیتوں کے ساتھ دے اور یہ اس کے اپنے تحفظ کے تناظر میں ہو گا۔‘‘ یہ امر اہم ہے کہ کشمیر کئی دہائیوں سے پاکستان اور بھارت کے درمیان ایک متنازعہ اور منقسم خطہ ہے۔

یہ ابھی تک واضح نہیں کہ پندرہ رکنی سلامتی کونسل اس پاکستانی خط پر کس طرح کا ردعمل ظاہر کرے گی۔ پاکستان کا موقف ہے کہ میٹنگ طلب کرنے کے معاملے پر اُسے چین کی حمایت حاصل ہے۔ ابھی یہ بھی واضح نہیں کہ آیا سلامتی کونسل کا کوئی مستقل رکن بھی کشمیر کے معاملے پر اجلاس طلب کرنے کی کوئی باقاعدہ درخواست کرتا ہے۔

رواں ماہ کے لیے اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل کی صدارت پولینڈ کے پاس ہے۔ پولستانی وزیر خارجہ یاسیک کاپوٹوویچا (Jacek Czaputowicz) نے اقوام متحدہ میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانی خط کونسل کو موصول ہو گیا ہے۔ کاپوٹوویچا نے مزید کہا کہ اس خط کے مندرجات پر بحث کے بعد ہی کوئی فیصلہ کیا جائے گا۔

Indien Kaschmir-Konflikt nach Änderung Artikel 370 (AFP/R. Bakshi)

عید الاضحیٰ کے دن لوگوں کو سخت پابندی میں نماز ادا کرنے کی اجازت دی گئی تھی

دوسری جانب بھارت کے زیر انتظام کشمیر کی اندرونی صورت حال بدستور نازک ہے۔ کشمیر کے گورنر ستیہ پال ملک نے کہا ہے کہ پندرہ اگست کو ملکی یوم آزادی کے بعد سے کرفیو میں نرمی پیدا کر دی جائے گی۔ انہوں نے یہ بھی واضح کیا کہ کرفیو میں نرمی کے باوجود ٹیلی فون رابطے منقطع رہیں گے اور انٹرنیٹ سروس بھی بحال نہیں کی جائے گی۔

ریاستی گورنر نے بھارتی اخبار ٹائمز آف انڈیا کو بتایا کہ مواصلاتی رابطے بدستور منقطع رکھے جائیں گے کیونکہ حکومت 'دشمن قوتوں‘ کو کوئی موقع نہیں دینا چاہتی۔ بھارت کے زیر کنٹرول کشمیر کے خصوصی دستوری تشخص کو نریندر مودی حکومت نے پانچ اگست کو ختم کر دیا تھا اور اُسی دن سے وادی میں نقل و حرکت اور مواصلاتی رابطوں پر سخت پابندیاں عائد ہیں۔

ع ح، م م ⁄ روئٹرز، اے ایف پی

ویڈیو دیکھیے 03:55

کیا کشمیری اپنوں سے رابطے کر پا رہے ہیں؟

 

DW.COM

Audios and videos on the topic

ملتے جلتے مندرجات