ڈی ڈبلیو کے گلوبل میڈیا فورم کا آغاز، افتتاحی خطاب میرکل نے کیا | حالات حاضرہ | DW | 14.06.2021
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

ڈی ڈبلیو کے گلوبل میڈیا فورم کا آغاز، افتتاحی خطاب میرکل نے کیا

جرمنی کے بین الاقوامی نشریاتی ادارے ڈوئچے ویلے کا امسالہ گلوبل میڈیا فورم شروع ہو گیا ہے۔ فورم سے اپنے افتتاحی خطاب میں جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے آزادی جیسے بنیادی حقوق کے واضح فہم اور مسلسل دفاع کی ضرورت پر زور دیا۔

گزشتہ کئی برسوں سے بون میں ڈوئچے ویلے (ڈی ڈبلیو) کی طرف سے بین الاقوامی ذرائع ابلاغ، ان کی آزادی اور کارکردگی سے متعلقہ موضوعات پر ہر سال گلوبل میڈیا فورم (جی ایم ایف) کے نام سے ایک ایسے تین روزہ عالمی اجتماع کا اہتمام کیا جاتا ہے، جس میں دنیا بھر سے آنے والے ہزاروں مہمان شرکت کرتے ہیں۔

صحافیوں کو مارنا ضروری ہے کیا؟

گزشتہ برس یہ اجتماع کورونا وائرس کی عالمی وبا اور لاک ڈاؤن کی وجہ سے منسوخ کر دیا گیا تھا۔ اس سال، جب کہ کووڈ انیس کی وبا ابھی ختم نہیں ہوئی، اس فورم کا اہتمام ورچوئل سطح پر کیا گیا، جس میں دنیا کے 120 سے زائد ممالک کے مندوبین آن لائن حصہ لے رہے ہیں۔ امسالہ جی ایم ایف کا دورانیہ بھی کم کر کے دو دن کر دیا گیا ہے۔

چانسلر میرکل کا افتتاحی خطاب

آج پیر چودہ جون کو اس عالمی اجتماع کے شرکاء سے اپنے افتتاحی خطاب میں جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے کہا کہ دنیا بھر میں ڈیجیٹل میڈیا سمیت ذرائع ابلاغ کی اہمیت اور ان کے کردار کو مدنظر رکھتے ہوئے ''ہم سب کے لیے لازمی ہے کہ ان جمہوری معاشروں میں، جہاں بدلتے ہوئے حالات سے ہم آہنگ رہتے ہوئے ہم ترقی کی منزلیں طے کرنا چاہتے ہیں، ایک بات لازمی طور پر ذہن میں رکھی جائے: ہمارے لیے آزادی کے ٹھوس اور واضح معانی کیا ہیں اور ہم آزادی جیسے بنیادی حقوق کا ہر قیمت پر کامیابی سے تحفظ کیسے کر سکتے ہیں؟‘‘

چانسلر کے عہدے کے لیے امیدوار لاشیٹ کا خطاب

گلوبل میڈیا فورم کے پہلے دن کی کارروائی میں ایک اہم خطاب آرمین لاشیٹ کا بھی تھا، جن کا تعلق چانسلر میرکل کی قدامت پسند یونین جماعت کرسچن ڈیموکریٹک یونین یا سی ڈی یو سے ہے اور جو سب سے زیادہ آبادی والے جرمن صوبے نارتھ رائن ویسٹ فیلیا کے وزیر اعلیٰ ہونے کے ساتھ ساتھ اس سال موسم خزاں میں ہونے والے قومی انتخابات میں وفاقی چانسلر کے عہدے کے لیے سی ڈی یو کے امیدوار بھی ہیں۔

پاکستان میں تنقیدی یوٹیوب چینلز، حکومتی ارادے کیا ہیں؟

Impulse Armin Laschet | DW Global Media Forum 2021

چانسلر میرکل کی جماعت سی ڈی یو کے وفاقی چانسلرشپ کے امیدوار آرمین لاشیٹ گلوبل میڈیا فورم کے افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے

آرمین لاشیٹ نے فورم کے شرکاء سے اپنے خطاب میں کہا کہ کورونا وائرس کی وبا نے ثابت کر دیا ہے کہ آج کی گلوبل دنیا میں کس طرح سبھی انسان ایک دوسرے پر انحصار کرتے ہیں۔ ایسے میں اصل حقائق تک پہنچنے کے لیے گہری چھان بین کے نتیجے میں سامنے آنے والی وہ غیر جانبدارانہ معلومات اور بھی اہم ہو جاتی ہیں، جنہیں معیاری صحافت کا نام دیا جاتا ہے۔

غیر جانبدارانہ صحافت کی ضرورت پہلے سے کہیں زیادہ

چانسلر میرکل کی جماعت کے وفاقی چانسلرشپ کے امیدوار لاشیٹ نے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا، ''دنیا کے کسی بھی حصے میں پھیلنے والا کوئی بھی وائرس پوری دنیا کے انسانوں کو متاثر کر سکتا ہے، جیسے کورونا وائرس نے کیا۔ ایسی صورت حال میں صرف یہی کافی نہیں کہ دنیا کے شمالی نصف حصے کے امیر ممالک کے عوام کو تو ویکسین دستیاب ہو لیکن باقی ماندہ خاص کر ترقی پذیر دنیا اس سے محروم رہے۔‘‘

اب کسی صحافی پر حملہ نہ ہو، حامد میر کی تنبیہ

آرمین لاشیٹ نے م‍زید کہا، ''دنیا میں کورونا وائرس کی عالمی وبا سے قبل بھی آزادی اظہار اور آزادی رائے کو دبایا جا رہا تھا اور اس وبا کے دوران ایسے جابرانہ رجحانات میں مزید اضافہ ہوا ہے۔‘‘ انہوں نے کہا کہ ان حالات میں بااصول، باہمت اور غیر جانبدارانہ صحافت کی ضرورت آج پہلے سے کہیں زیادہ ہے۔

Opening ceremony | Director General Peter Limbourg | DW Global Media Forum 2021

ڈوئچے ویلے کے ڈائریکٹر جنرل پیٹر لمبورگ افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے

امسالہ گلوبل میڈیا فورم کا مرکزی موضوع

گلوبل میڈیا فورم 2021ء کا مرکزی موضوع یہ ہے کہ کورونا کی عالمی وبا کے بعد صحافت کیسی ہو گی؟ اسی لیے موجودہ جی ایم ایف میں شرکاء کے مابین مختلف نشستوں میں اس بارے میں تفصیلی تبادلہ خیال ہو رہا ہے کہ کورونا وائرس کے باعث عالمی بحران کے بعد کی غیر جانبدارانہ صحافت کے لیے وبا کی وجہ سے پیدا ہونے والے تعطل کو جدیدیت اور اختراع کے لیے کیسے استعمال کیا جائے۔

پیٹر لمبورگ کا خطاب

گلوبل میڈیا فورم کے پہلے روز ڈی ڈبلیو کے ڈائریکٹر جنرل پیٹر لمبورگ نے اپنے خطاب میں کہا کہ آج کی دنیا میں آزادی صحافت کو کیسے دبایا جا رہا ہے، اس کی خود یورپ میں سب سے بڑی مثال بیلاروس اور صدر لوکاشینکو ہیں۔

دہلی پولیس کا ٹویٹر کے دفتر پر چھاپہ

پیٹر لمبورگ نے کہا، ''جو کچھ بیلاروس میں ہو رہا ہے، وہ پورے یورپ کے لیے شرم کا باعث پے۔ اور اس سچ کا اظہار بھی بہت ضروری ہے کہ بیلاروس میں خود پسند حکمران جو کچھ کر رہے ہیں، وہ روسی حکومت کی طرف سے لوکاشینکو کی بھرپور حمایت کے بغیر ممکن ہی نہیں تھا۔‘‘

DW Freedom of Speech Award Laureate 2021: Nigerian investigative journalist Tobore Ovuorie

ڈوئچے ویلے کا آزادی اظہار کا ایوارڈ حاصل کرنے والی نائجیریا کی صحافی توبورے اُووُواوری

ڈی ڈبلیو کا آزادی اظہار کا ایوارڈ

ڈوئچے ویلے کی طرف سے ہر سال گلوبل میڈیا فورم کے موقع پر بین الاقوامی سطح پر آزادی اظہار کا ایوارڈ بھی دیا جاتا ہے۔ اس سال یہ Freedom of Speech Award نائجیریا کی 33 سالہ خاتون صحافی توبورے اُووُواوری کو دیا گیا۔

ساکھ بہتر کرنے کے لیے مودی حکومت ٹی وی چینل کھولنا چاہتی ہے

انہوں نے کئی ماہ تک چھپ کر اور بہت پرخطر حالات میں یہ چھان بین کی تھی کہ کسی طرح افریقہ سے انسانوں کی اسمگلنگ کرنے والے جرائم پیشہ گروہ نائجیریا سے خواتین کو جسم فروشی کے لیے جبراﹰ یورپی ممالک میں بجھجواتے ہیں۔ اس انکشاف کے بعد نائجیریا میں حکام نے اس جرائم پیشہ گروہ کے خلاف کارروائی شروع کی تھی۔

منگل پندرہ جون گلوبل میڈیا فورم 2021ء کا دوسرا اور آخری دن ہو گا۔

فرانک ہوفمان (م م / ع ح)