پشاور ميں خود کش حملہ ، سينئر پوليس افسر ہلاک | حالات حاضرہ | DW | 24.11.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پشاور ميں خود کش حملہ ، سينئر پوليس افسر ہلاک

پشاور ميں ايک خود کش حملہ آور کی کارروائی ميں ايک سينئر پوليس اہلکار اور ان کا محافظ ہلاک ہو گئے ہیں۔ وزير اعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی نے اس حملے کی شديد الفاظ ميں مذمت کی ہے۔

پاکستانی صوبہ خيبو پختونخوا کے ايڈيشنل انسپکٹر جنرل اشرف نور اور ان کے محافظ آج بروز جمعہ اس وقت ہلاک ہو گئے، جب وہ اپنی گاڑی ميں  دفتر جا رہے تھےکہ ايک خود کش بمبار نے اپنی موٹر سائيکل سے ان کی گاڑی کو نشانہ بنايا۔ دھماکے ميں نور اور ان کے محافظ موقع پر ہی مارےگئے جبکہ پانچ ديگر افراد زخمی بھی ہوئے۔ صوبائی پوليس چيف صلاح الدين محسود نے خبر رساں ادارے اے ايف پی سے بات چيت کرتے ہوئے بتايا کہ زخمی ہونے والوں ميں تين پوليس اہلکار شامل ہيں، جو اس وقت ہسپتال ميں زير علاج ہيں۔

پاکستانی وزير اعظم شاہد خاقان عباسی نے اس واقعے کی سخت الفاظ ميں مذمت کی ہے۔ انہوں نے آج ہی جاری کردہ اپنے بيان ميں کہا، ’’دہشت گردی کی لعنت کو ختم کرنے کے لیے ہمارے ارادے مضبوط ميں اور وہ کمزور نہيں ہوں گے۔‘‘

پشاور پاکستان کے شمال مغربی صوبہ خيبر پختونخوا کا دارالحکومت ہے۔ يہ شہر ايک عرصے سے دہشت گردوں کے نشانے پر رہا ہے جبکہ انسانوں اور منشيات کے اسمگلر بھی وہاں سرگرم ہيں۔