1. مواد پر جائیں
  2. مینیو پر جائیں
  3. ڈی ڈبلیو کی مزید سائٹس دیکھیں
Pakistan | Zeitungstand
تصویر: Muhammad Sajjad/AP/picture alliance
آزادی صحافتپاکستان

پاکستان، خوف کا ماحول اور ٹکڑوں میں بٹی صحافت

عبدالستار، اسلام آباد
31 اکتوبر 2022

ارشد شریف کی ہلاکت اور تین مزید صحافیوں کے ملک چھوڑ جانے کے بعد پاکستان کے کئی حلقوں میں یہ بحث ہو رہی ہے کہ آیا یہ ملک ذرائع ابلاغ سے تعلق رکھنے والے افراد کے لیے محفوظ ہے؟

https://p.dw.com/p/4ItdT

کچھ ناقدین کا خیال ہے کہ ملک میں صرف ایک مخصوص نقطہ ء نظر رکھنے والے صحافیوں کو ٹارگٹ کیا جا رہا، جس کا مطلب یہ ہے کہ صحافی برادری بھی تقسیم کا شکار ہے۔ اینکر پرسن ڈاکٹر معید پیرزادہ، صحافی عمران ریاض اور تجزیہ نگار ارشاد بھٹی کے حوالے سے اطلاعات ہیں کہ انہوں نے 'نامعلوم وجوہات کی بنا‘‘ پر ملک چھوڑ دیا ہے۔

خوف کا ماحول اور صحافیوں میں تقسیم

لاہور سے تعلق رکھنے والے تجزیہ کار اور صحافی حبیب اکرم کا کہنا ہے کہ جو صحافی اس وقت پی ٹی آئی کی پالیسی اور نظریے کے قریب ہیں، ان کو خطرات کا سامنا ہے۔ انہوں نے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ''اس لیے ان کے رشتے دار، عزیز واقارب یا بیرون ملک رہنے والے ان کے ہمدرد انہیں یہ مشورہ دے رہے ہیں کہ وہ ملک چھوڑ کے چلے جائیں۔‘‘

صحافی ارشد شریف کا مبینہ قتل، ملک بھر میں سوگ کی فضا

ارشد شریف کی ہلاکت، تحقیقات کے لیے جوڈیشل کمیشن بنایا جائے گا، شہباز شریف

سیاسی حالات اور دباؤ کی نوعیت

حبیب اکرم کے مطابق پاکستان میں سیاسی حالات کے بدلنے کے ساتھ ساتھ صحافیوں پر دباؤ کی نوعیت بھی بدل جاتی ہے، ''دو ہزار چودہ اور دو ہزار سولہ کے دھرنوں اور احتجاج کے دوران پریشر کی نوعیت مختلف تھی اور اس وقت پریشر کی نوعیت مختلف ہے۔ لیکن عمومی طور پر صحافتی حلقوں میں خوف کی فضا ہے۔ بہت سارے صحافی اس صورتحال سے نمٹنے کے لیے سیلف سینسر شپ کر رہے ہیں تاکہ وہ کسی مشکل میں نہ پھنس جائیں۔‘‘

نون لیگ کا مبینہ 'منفی کردار‘

ایک عام تاثر یہ ہے کہ پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ صحافیوں کو ملک کے ''طاقت ور اداروں‘‘ سے شکایات ہیں۔ ناقدین کا خیال ہے کہ ماضی میں ن لیگ ان طاقت ور عناصر کے خلاف بولتی رہی ہے لیکن اب اس کی حکومت ان ہی کے ساتھ شریک کار بنی ہوئی ہے۔ حبیب اکرم اس تاثر کو صحیح قرار دیتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا، ''موجودہ حالات نے نون لیگ اور سیاسی حکومت کے اصل چہرے کو آشکار کر دیا ہے۔ موجودہ حکومت یہ کہہ رہی ہے کہ وہ آزادی اظہار رائے پر یقین رکھتی ہے اور صحافیوں کو ڈرانا دھمکانا اس کا شیوہ نہیں ہے لیکن مقدمات بھی موجودہ سیاسی حکومت کے دور میں ہی بن رہے ہیں، جس سے صحافیوں میں خوف پھیل رہا ہے۔‘‘ ان کا کہنا تھا کہ نون لیگ کے اس عمل سے یقیناﹰ صحافیوں کو نقصان ہو رہا ہے لیکن مستقبل میں اس کا زبردست نقصان ن لیگ کو بھی ہو گا۔

صحافیوں سے اظہار یکجہتی

پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس کی فیڈرل ایگزیکٹیو کونسل کے رکن اور سابق سکریٹری جنرل پی ایف یو جے ناصر زیدی نے اس حوالے سے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ''حالانکہ معید پیر زادہ، ارشاد بھٹی اور عمران ریاض تبصرہ نگار یا تجزیہ نگار ہیں لیکن پھر بھی ہم ان کے ساتھ ہیں اور ان سے اظہار یکجہتی کرتے ہیں۔ ہم سمجھتے ہیں کہ کسی کو بھی ایک مختلف رائے رکھنے کی وجہ سے نشانہ نہیں بنانا چاہیے۔ تاہم ہمارا یہ شکوہ ہے کہ ان حضرات کو کم از کم یونین کو ان خطرات سے آگاہ کرنا چاہیے تھا، جو ان کو درپیش تھے تاکہ ہم حکومت سے بات کرتے۔‘‘

میڈیا کی آزادی کی جنگ لڑنے کا ’نامناسب طریقہ‘

ناصر زیدی کے مطابق میڈیا کی آزادی کی جنگ کے نام پر ملک چھوڑ کر چلے جانے کا طریقہ مناسب نہیں ہے، ''پاکستان میں بہت سارے ایسے صحافی اس وقت بھی کام کر رہے ہیں، جن کو ماضی میں نشانہ بنایا گیا، جیلوں میں پھینکا گیا اور کوڑے لگائے گئے۔ انہوں نے پوری آزادی اظہار رائے کی لڑائی ملک میں رہ کر لڑی اور حالات کا مقابلہ کیا۔‘‘ ناصر زیدی کے مطابق اس طرح ملک سے چلے جانا اور بعد میں یہ کہنا کہ ملک میں آزادی اظہار رائے نہیں ہے، مناسب نہیں ہے۔

ملک کے خلاف 'سازش‘

 ملک میں میڈیا کے لیے پابندیوں کے حوالے سےپاکستان مسلم لیگ نون کی حکومت پر زبردست تنقید ہو رہی ہے۔ کئی ناقدین پاکستان پیپلز پارٹی اور دوسری اتحادی جماعتوں کو ان کا ماضی یاد دلا رہے ہیں، جب وہ اظہار رائے کی آزادی کے حوالے سے بلند و بانگ دعوے کرتے تھے۔

تاہم نون لیگ ان تمام الزامات کو غلط قرار دیتی ہے۔ سابق سینیٹر اور نون لیگ پنجاب کے نائب صدر سعود مجید کا کہنا ہے کہ ملک سے جانے والے ان تینوں صحافیوں نے حکومت کو خطرات کے حوالے سے کوئی اطلاع نہیں دی۔ انہوں نے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ''اگر وہ حکومت کو خطرات کے حوالے سے آگاہ کرتے تو یقیناﹰ حکومت فوری طور پر ایکشن لیتی۔‘‘

سعود مجید کا کہنا ہے کہ ایسا لگتا ہے کہ ان صحافیوں کا اس طرح ملک سے جانا ملک کو بدنام کرنے کی سازش کا ایک حصہ ہے،''ان صحافیوں کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ یہ پاکستان تحریک انصاف کے قریب ہیں اور عمران خان نے پہلے آئی ایم ایف کو خط لکھے۔ ماضی میں انہوں نے چینی صدر کے دورے کو سبوتاژ کیا اور اب جیسے ہی وزیراعظم نے چین جانے کا اعلان کیا تو انہوں نے پہلے لانگ مارچ کا اعلان کیا اور اب یہ صحافی یہاں سے چلے گئے ہیں تاکہ یہ پروپیگنڈہ کیا جا سکے کہ پاکستان میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہو رہی ہے اور یہ کہ اس ملک پر عالمی پابندیاں لگائی جائیں۔‘‘

 موجودہ حالات سے سبق

ناصر زیدی کا کہنا ہے کہ موجودہ حالات سے یہ سبق ملتا ہے کہ صحافی برادری کو کسی کے ایجنڈے پر کام کرنا نہیں چاہیے، کسی سیاسی جماعت کا ترجمان نہیں بننا چاہیے بلکہ انہیں معروضی انداز میں صحافت کرنی چاہیے، ’’اگر ان کو کہیں سے کوئی خبر ملتی ہے، تو اس کو بڑی چھان بین کے بعد اس کا تجزیہ کرنا چاہیے اور پھر اس کو آگے بڑھانا چاہیے، بد قسمتی سے ایسا نہیں ہوا اور ہمارے کچھ دوستوں نے ایک مخصوص ایجنڈے کو ایک طویل عرصے تک فروغ دیا، جس کی وجہ سے صحافتی برادری میں تقسیم کا تاثر ابھرا۔‘‘

ناصر زیدی کا کہنا تھا کہ ملک کی صحافتی برادری آج بھی پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس کے پلیٹ فارم سے متحد ہے۔

ملتے جلتے موضوعات سیکشن پر جائیں