مودی کو اینٹ کا جواب پتھر سے دیں گے: عمران خان | حالات حاضرہ | DW | 14.08.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

مودی کو اینٹ کا جواب پتھر سے دیں گے: عمران خان

پاکستانی وزیر اعظم نے یوم ازادی کے موقع پر مظفر آباد میں اپنے خطاب میں کہا کہ بھارت کشمیر میں جاری مظالم سے توجہ ہٹانے کے لیے پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں 'ایکشن‘ کر سکتا ہے۔

عمران خان نے بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کو متنبہ کیا کہ وہ کشمیریوں کو غلام نہیں بنا سکتے اور اگر انہوں نے پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں کوئی کارروائی کی، تو پاکستان اس کا بھرپور جواب دے گا۔

پاکستان کے تہترویں یوم آزادی کے موقع پر مظفر آباد میں آزاد جموں کشمیر کی قانون ساز اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ اب اگر جنگ ہوگی، تو اس کی ذمہ داری بین الاقوامی برادری پر ہوگی کیونکہ اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عمل کرانا عالمی برادری ہی کا کام تھا، جو اس نے نہیں کیا۔ عمران خان نے کہا کہ ان کی حکومت مسئلہ کشمیر کو اجاگر کرنے کے لیے دنیا کے ہر فورم پر جائی گی اور اقوام متحدہ کے آئندہ اجلاس کے دوران دنیا دیکھے گی کہ کتنے لوگ کشمیر کے لیے احتجاج کریں گے۔

انہوں نے بھارتی وزیر اعظم کو مخاطب کرتے ہوئے کہا، ''آپ کسی غلط فہمی میں نہ رہیں۔ کشمیری لڑ لڑ کر پکے ہو چکے ہیں۔ ان کا ڈر ختم ہو چکا ہے۔‘‘ پاکستانی وزیر اعظم نے کہا کہ اب دنیا کی نظریں کشمیر اور پاکستان پر ہیں۔ انہوں نے کہا، ''اب میں دنیا میں کشمیر کا سفیر بنوں گا۔‘‘

پاکستانی سربراہ حکومت نے کہا کہ جموں کشمیر کے حوالے سے بھارت کے یکطرفہ اور غیرقانونی اقدامات نریندر مودی کی 'اسٹریٹیجک غلطی‘ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مودی اپنا آخری پتہ کھیل چکے ہیں، جس سے مسئلہ کشمیر ایک بار پھر عالمی سطح پر اجاگر ہوگیا ہے۔

بھارت کی طرف سے جموں کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے اور اس کی انتظامی تقسیم کے اعلان کے بعد اسلام آباد حکومت نے اس مرتبہ پاکستان کے یوم آزادی کو کشمیریوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے دن کے طور پر منانے کا فیصلہ کیا۔ حکومت نے یہ بھی طے کیا ہے کہ پاکستان میں اس بار بھارت کا یوم آزادی یوم سیاہ کے طور پر منایا جائے گا۔ بھارت کے زیر انتظام جموں کشمیر میں کرفیو جیسے حالات کو دس روز ہونے کو آئے ہیں اور مواصلاتی نظام منقطع کیے جانے کی وجہ سے وہاں کے لوگ دنیا سے کٹ کر رہ گئے ہیں۔

اپنے خطاب میں عمران نے بھارت میں حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کے ہندو قوم پرست نظریے کو امن و سلامتی کے لیے خطرہ قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ آر ایس ایس کا نظریہ ایک خوفناک نظریہ ہے، جو ان کے بقول ہٹلر کی نازی پارٹی سے متاثر ہو کر بنایا گیا۔ پاکستانی وزیر اعظم نے کہا کہ آر ایس ایس کا نظریہ کئی برسوں سے چلتا آ رہا تھا لیکن پچھلے پانچ برسوں کے دوران اس سے سب سے زیادہ متاثر جموں کشمیر ہوا ہے۔ عمران خان نے کہا کہ آر ایس ایس کا جن اب بوتل سے نکل چکا ہے اور اب یہ معاملہ بھارت کی دیگر مذہبی اقلیتوں تک جائے گا۔

DW.COM