یورپی رہنماؤں کے درمیان مہاجرین کے موضوع پر اختلافات برقرار | حالات حاضرہ | DW | 15.12.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

یورپی رہنماؤں کے درمیان مہاجرین کے موضوع پر اختلافات برقرار

یورپی سربراہی کانفرنس میں یونین کی رکن ریاستوں کے رہنماؤں کے درمیان مہاجرین کے موضوع پر اختلاف رائے میں کوئی کمی نہیں ہو سکی ہے۔ اس موضوع پر مشرقی اور مغربی یورپی ریاستوں کے درمیان اختلافات واضح ہیں۔

یورپی یونین کے سربراہی اجلاس میں اس بار اہم موضوع اگلے برس جون کی ڈیڈلائن سے قبل سیاسی پناہ کے متلاشی افراد کی بابت اصلاحات کا تھا، تاہم اس موضوع پر مختلف رکن ریاستوں کی آرا مختلف ہے۔

یورپ کو داخلی یک جہتی کی ضرورت ہے، جرمن چانسلر

ترک کی ساحلی چٹانوں میں پھنسے درجنوں مہاجرین

انٹرنیٹ ادارے منافع میں حصہ دار بنائیں، نیوز ایجنسیز

جمعے کی صبح یورپی رہنماؤں کے درمیان جاری دو گھنٹوں پر محیط بات چیت میں مشرقی یورپی ریاستوں کی جانب سے تارکین وطن کی تقسیم سے متعلق یورپی کمیشن کے منصوبے کی شدید مخالفت کی۔ یورپی کمیشن نے سن 2015ء میں ایک منصوبہ پیش کیا تھا، جس کے تحت یونین کی رکن ریاستوں پر لازم کیا گیا تھا کہ وہ اٹلی اور یونان میں موجود تارکین وطن کو اپنے اپنے ہاں بسائیں، تاہم ہنگری، چیک جمہوریہ، سلواکیا اور پولینڈ تارکین وطن کو قبول کرنے سے انکاری ہیں۔

دوسری جانب یورپی رہنماؤں نے یورپی یونین کی بیرونی سرحدوں کے تحفظ کو مضبوط بنانے پر اتفاق کیا ہے اور اس سلسلے میں مشترکہ حکمت عملی کے تحت ترکی اور لیبیا جیسے ممالک کے ساتھ مل کر کام کرنے پر زور دیا گیا ہے۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے برسلز میں صحافیوں سے بات چیت میں کہا، ’’یورپی یک جہتی فقط بیرونی سرحدوں تک محدود نہیں ہونا چاہیے بلکہ اسے داخلی طور پر بھی دکھائی دینا چاہیے۔‘‘

ویڈیو دیکھیے 03:17
Now live
03:17 منٹ

یورپی یونین کی سرحدوں کی بہتر نگرانی کا نیا منصوبہ

انہوں نے مزید کہا، ’’اس موضوع پر ہمیں بہت سا کام کرنے کی ضرورت ہے۔ نکتہ ہائے نگاہ تبدیل نہیں ہوا مگر ہمارے سامنے ایک واضح راستہ ہے کہ اگلے برس جون تک ہم اس موضوع پر تن دہی سے کام کریں۔‘‘

اس سے قبل یورپی کونسل کے سربراہ ڈونلڈ ٹُسک نے اپنے ایک خط میں کہا تھا کہ یورپی کمیشن کا مہاجرین کی تقسیم سے متعلق منصوبہ ’تقسیم کا باعث‘ اور ’غیرفعال‘ ہے۔ ہنگری، چیک جمہوریہ، سلواکیہ اور پولینڈ نے ڈونلڈ ٹُسک کے موقف کی تائید کی تھی، تاہم جرمنی اور دیگر ممالک کا کہنا ہے کہ تارکین وطن کی تقسیم سے متعلق کوٹا یورپی یک جہتی کو ظاہر کرنے کے لیے انتہائی ضروری ہے۔

DW.COM

Audios and videos on the topic

اشتہار