1. مواد پر جائیں
  2. مینیو پر جائیں
  3. ڈی ڈبلیو کی مزید سائٹس دیکھیں
Indien Kultur Religion l Traditionelle Hochzeit, Trans
تصویر: Satyajit Shaw/Pacific Press/picture alliance

ہم جنس پرستی پر بھارتی فلم، فوج نے عکس بندی کی اجازت نہیں دی

18 فروری 2022

بھارت میں مودی حکومت پر الزام لگایا جاتا ہے کہ وہ منظم انداز میں سینسر شپ کا نفاذ جاری رکھے ہوئے ہے۔ اس مناسبت سے انسانی حقوق کے کارکنوں، صحافیوں اور غیر حکومتی تنظیموں کو حکومتی شکنجے کا سامنا ہے۔

https://www.dw.com/ur/%DB%81%D9%85-%D8%AC%D9%86%D8%B3-%D9%BE%D8%B1%D8%B3%D8%AA%DB%8C-%D9%BE%D8%B1-%D8%A8%DA%BE%D8%A7%D8%B1%D8%AA%DB%8C-%D9%81%D9%84%D9%85-%D9%81%D9%88%D8%AC-%D9%86%DB%92-%D8%B9%DA%A9%D8%B3-%D8%A8%D9%86%D8%AF%DB%8C-%DA%A9%DB%8C-%D8%A7%D8%AC%D8%A7%D8%B2%D8%AA-%D9%86%DB%81%DB%8C%DA%BA-%D8%AF%DB%8C/a-60829067

بھارت میں ایک مشہور فلم ساز و ہدایتکار اونیر ایک ایسی فلم کو پروڈیوس کرنے کی خواہش رکھتے ہیں، جس میں ایک بھارتی فوجی افسر اپنے ہم جنس پرستانہ رجحان کی وجہ سے فوج میں میجر کے عہدے کی نوکری کو خیرباد کہہ دیتا ہے۔

بھارت: کروا چوتھ کے اشتہار میں ہم جنس جوڑے پر نیا تنازعہ

اونیر کو اس موضوع پر فلم بنانے کی اجازت نہیں دی گئی حالانکہ اس ملک کا بظاہر تشخص سیکولر اور جمہوری ہے۔ فلم کے اسکرپٹ کو بھارتی فوج نے منظور نہیں کیا اور نہ ہی اس کی عکس بندی کی اجازت دی گئی۔

Gay Pride Parade in Indien
بھارت میں ہم جنس پرستوں کی جد و جہد ایک طویل سلسلے کا نام ہےتصویر: DPA

اونیر کے راستے میں حائل قانون

سن  2020 میں نریندر مودی کی ہندو قوم پرست حکومت نے ایک قانون کی منظوری دی تھی اور اس کے مطابق بھارتی فلم سازوں کو فوج کے موضوع پر بنائی جانے والی فلم کی کلیئرنس لینا لازمی قرار دیا گیا تھا۔

یہ کلیئرنس کوئی سول محکمہ نہیں بلکہ وزارتِ دفاع اور فوج نے ہی دینا ہوتی ہے۔ اس قانون کو حقوق کےط سبھی حلقوں نے آزادئ اظہار کے منافی قرار دے رکھا ہے۔ انسانی حقوق کے ورکرز اور حقوق کی غیر حکومتی تنظیموں نے اس قانون کو 'اورویلیئن‘ اور غیر دستوری قرار دیا تھا۔

فوجيوں کو ہم جنس پرستی سے روکنے پر بھارتی آرمی چيف پر تنقيد

یہی قانون فلم ساز اونیر کے راستے کی سب سے بڑی رکاوٹ ثابت ہوا اور انہیں فلم بنانے کی اجازت نہیں دی گئی۔ یہ امر اہم ہے کہ فلم ساز اونیر، جو اپنا صرف ایک نام استعمال کرتے ہیں، خود بھی کھلے ہم جنس پرست ہیں۔ وہ بالی ووڈ انڈسٹری کے پہلے ایسے فرد ہیں، جنہوں نے اپنے جنسی میلان کو کُلی طور پر واضح کر رکھا ہے۔

Gay Pride Parade in Indien
ہم جنسی پرستی پر بھارت میں کئی فلمیں بھی بنائی جا چکی ہیںتصویر: DPA

بھارتی فوجی افسر کی حقیقی کہانی پر فلم

اونیر یہ فلم بھارتی فوج کو خیرباد کہنے والے میجر جے سریش کے کرادر پر بنانا چاہتے ہیں، جنہوں نے آرمی چھوڑنے پر کہا تھا کہ وہ، ''آزاد، آؤٹ، اور پراؤڈ‘‘ ہیں۔

سابق فوجی افسر جے سریش نے اپنے بلاگ میں تحریر کیا کہ وہ ایک گَے یا ہم جنس پرست ہیں اور اپنے ہم جنس پرست ہونے پر فخر بھی محسوس کرتے ہیں۔

یہ امر اہم ہے کہ سابق میجر سریش بھارت کے کئی افراتفری کے شمار علاقوں میں متعین رہے تھے۔ اس میں خاص طور پر کشمیر میں بھی ان کی تعیناتی کی گئی تھی۔

ملازمت چھوڑنے کے بعد جے سریش کا ایک انٹرویو ملکی ٹیلی وژن پر بھی نشر کیا گیا تھا اور اس کو جہاں بہت زیادہ عوامی پذیرائی حاصل ہوئی وہاں بعض حلقوں کی شدید تنقید کا سامنا بھی رہا تھا۔

BdT Pride March in Indien
بھارت میں ہم جنسی پرستی اب ایک مضبوط تحریک کا روپ دھار چکی ہےتصویر: AP

 

اونیر کی فلم

بھارت کے ہم جنس پرست فلم ساز و ہدایتکار اونیر کی ممکنہ فلم کا نام 'ہم ہیں‘ تجویز کیا گیا تھا۔ اونیر کے مطابق اس فلم میں ایک ساتھ چار مختلف ہم جنس پرست کرداروں کی کہانیوں کو شامل کیا گیا تھا۔

ان چار کرداروں میں ایک ٹرانس جینڈر عورت، ایک لیزبیئن عورت، ایک بائی سیکسوئل مرد اور ایک ہم جنس پرست مرد کی ایک کشمیری لڑکے کے ساتھ فرضی محبت کی کہانی شامل کی جانا تھی۔

ہم جنس پرستی پر پابندی کا خاتمہ بہترین اقدام ہے، ابھیشک بچن

اونیر کے مطابق اس کہانی کو بھارتی وزیر دفاع کی جانب سے نو اوبجیکشن سرٹیفیکیٹ نہیں جاری کیا گیا اور یہ فلم بس کاغذوں میں ابھی تک دھری ہے۔ اونیر کے مطابق وزارتِ دفاع کا کہنا ہے کہ فلم کی کہانی میں فوج کے ایک میجر کو ہم جنس پرست دکھایا گیا ہے اور یہ غیرقانونی ہے۔

ع ح /  ا ا (اے ایف پی)

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ سیکشن پر جائیں

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ

external

پاکستان کا یوم آزادی: نوجوان اپنے وطن کے بارے میں کیا کہتے ہیں؟

ڈی ڈبلیو کی مزید رپورٹیں سیکشن پر جائیں
ہوم پیج پر جائیں