گیئرٹ ولڈرز قصور وار مگر سزا کا حقدار نہیں | حالات حاضرہ | DW | 09.12.2016
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

گیئرٹ ولڈرز قصور وار مگر سزا کا حقدار نہیں

ہالینڈ کے اسلام مخالف رہنما گیئرٹ ولڈرز کو نسلی امتیاز اور مراکشی شہریوں کی توہین کے ایک مقدمے میں قصور وار قرار دے دیا ہے۔ یہ فیصلہ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے، جب تین ماہ بعد ہالینڈ میں انتخابات ہونے والے ہیں۔

ہالینڈ کی ایک عدالت کے جج  ہینڈرک اسٹین ہوئس کے مطابق قصور وار قرار دیے جانے کے باوجود گیئرٹ ولڈرز کو کوئی سزا نہیں دی جا رہی۔ جج کے بقول جمہوری طور پر کسی منتخب رکن کو قصو وار قرار دینا کسی سزا سے کم نہیں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ 2014ء میں اپنے خطاب کے دوران ولڈرز نے آزادی اظہار کی حدود کو پار کیا ہے اور اس طرح وہ اس قانون کی خلاف ورزی کے مرتکب ہوئے ہیں۔ سماعت کے دوران گیئرٹ ولڈرز کمرہ عدالت میں موجود نہیں تھے۔

 فریڈم پارٹی کے رہنما گیئرٹ ولڈرز کی عوامی سطح پر مقبولیت میں کافی اضافہ ہو چکا ہے اور اس مقدمے کے دوران ان کی شہرت اور بھی بڑھی ہے۔ اس مقدمے کی کارروائی سے قبل ہی ولڈرز کہہ چکے تھے کہ اگر انہیں مجرم قرار دے بھی دیا گیا تو انہیں اس سے کوئی فرق نہیں پڑے گا، ’’عدالت کا جو بھی فیصلہ ہو، میں مراکشی شہریوں کے حوالے سے ہمیشہ سچ بولتا رہوں گا، مجھے کوئی جج، سیاستدان یا دہشت گرد اس کام سے نہیں روک سکتا۔‘‘

اسلام مخالف فریڈم پارٹی کے سربراہ پر یہ الزامات 2014ء میں لگائے گئے تھےجب ایک جلسے کے دوران ولڈرز نے اپنے حامیوں کو ہالینڈ میں رہائش پذیر مراکشی نژاد شہریوں کے خلاف نعرے بازی پر اکسایا تھا۔ اس موقع پر یہ لوگ نعرے لگا رہے تھے، ’’ہالینڈ میں مراکشی نژاد لوگوں کو کم کیا جانا چاہیں‘‘۔

ولڈرز کو اسے سے قبل بھی مختلف قسم کے مقدمات کا سانما رہا ہے، ان میں مسلمانوں کے خلاف نفرت پھیلانا، غیر یورپی باشندوں سے تعصب ساتھ ساتھ اسلام اور نازی ازم کا موازنہ کرنا شامل ہے۔ اس کے علاوہ انہوں نے اسلام کو ایک فاشسٹ مذہب قرار دیتے ہوئے قرآن اور ہٹلرکی کتاب میری جدوجہد کو ایک دوسرے سے مماثلت رکھنے والی کتاب بھی کہا تھا۔سن 2004 میں قائم ہونے والی گیئرٹ ولڈرز کی فریڈم پارٹی (PW) ہالینڈ کی تیسری سب سے بڑی سیاسی جماعت بن چکی ہے۔

ملتے جلتے مندرجات

اشتہار