کلبھوشن یادیو بھارت کا دہشت گرد چہرہ ہے، پاکستانی دفتر خارجہ | حالات حاضرہ | DW | 25.12.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کلبھوشن یادیو بھارت کا دہشت گرد چہرہ ہے، پاکستانی دفتر خارجہ

بھارتی شہری کلبھوشن یادیو سے اس کے اہل خانہ کی ملاقات کے بعد پاکستانی دفتر خارجہ نے اپنی بریفنگ میں ان کی والدہ اور اہلیہ کی جانب سے صحافیوں سے بات چیت سے انکار پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔

پاکستان میں زیر حراست بھارتی  شہری کلبھوشن یادیو کی والدہ اور بیوی سے ملاقات کے بعد دفتر خارجہ کے ترجمان ڈاکٹر فیصل نے میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ کلبھوشن نے اپنے جرائم کا اعتراف کرتے ہوئے بتایا ہے کہ وہ بلوچستان اور کراچی میں ہونے والی دہشت گردی سمیت پاکستان کی حفاظتی تنصیبات پر حملوں میں بھی ملوث رہا ہے اور وہ ہزاروں پاکستانی کے قتل کا ذمہ دار بھی ہے مگر پھر بھی پاکستان نے اسلامی اصولوں اور تعلیمات کے مطابق خالصتاً انسانی حقوق کی بنیاد پر کلبھوشن سے اس کے اہل خانہ کی ملاقات کرائی ہے۔ کلبھوشن اور اس کے اہل خانہ اس ملاقات پر حکومت پاکستان کے شکرگزار ہیں۔

ڈاکٹر فیصل کے مطابق کلبھوشن کو قونصلر تک رسائی کا تاحال کوئی فیصلہ نہیں ہوا۔ اس ملاقات میں ڈپٹی ہائی کمشنر جی پی سنگھ موجود تھے تاہم انہیں  یادیو سے بات کرنے کی اجازت نہیں تھی۔ اس موقع پر انہوں نے واضح کیا کہ یہ والدہ اور بیوی سے کلبھوشن کی آخری ملاقات نہیں تھی۔

ڈاکٹر فیصل کے مطابق حکومت پاکستان نے بھارت اور کلبھوشن کی والدہ اور اہلیہ کو میڈیا سے بات چیت کرنے کی پیشکش بھی کی تھی جس میں بھارتی میڈیا بھی شامل ہوتا لیکن انہوں نے اس پیشکش کو مسترد کیا۔

ترجمان کے مطابق پاکستان کے پاس بے شمار سوالات ہیں جو اب بھی جواب طلب ہیں مثلا حسین مبارک پٹیل کون تھا جس نے پاکستان اور ایران کے علاوہ سترہ بار بیرون ملک سفر کیا ہے، ’’کلبھوشن کے پاس اس کا پاسپورٹ کہاں سے آیا اور پھر  ہماری تفتیش کے مطابق کلبھوشن حاضر سروس فوجی ہے لہٰذا اگر بھارت کہتا ہے کہ وہ نیوی سے ریٹائرڈ تو اس کی پینشن کی تفصیلات کہاں ہیں‘‘۔

 انہوں نے مزید بتایا کہ بھارتی حکومت سے ملاقات کے حوالے تمام تر معاملات پہلے سے طے شدہ تھے جبکہ نئی دہلی حکومت کو پہلے ہی آگاہ کر دیا تھا کہ کلبھوشن سے اس کے اہل خانہ کی ملاقات بطور قیدی ہو گی اور درمیان میں شیشہ ہوگا اور اس پر بھارت نے رضامندی کا اظہار کیا تھا۔

ترجمان ڈاکٹر فیصل  کے مطابق ملاقات کے حوالے سے بین الاقوامی برادری کا تاحال کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا، ’’ہماری نیک نیتی ہے کہ ہم نے تین دن کا ویزہ پانچ روز پہلے ہی جاری کر دیا تھا جبکہ خواتین کی آمد کے حوالے سے شیڈیول بعد میں دیا گیا تھا۔ اس ملاقات سے قبل کلبھوشن کا سعودی جرمن اسپتال سے طبی معائنہ بھی کرایا گیا ہے۔‘‘

بریفنگ کے دوران کلبھوشن کا ویڈیو پیغام بھی میڈیا کو دکھایا گیا جس میں اس نے قید کے دوران پاکستانی سکیورٹی اداروں کے رویہ کی تعریف کی ہے اور والدہ اور اہلیہ سے ملاقات پر حکومت پاکستان کا شکریہ بھی ادا کیا ہے۔

دفتر خارجہ کے ترجمان نے بتایا کہ پاکستان بین الاقوامی اصولوں پر سختی سے کار بند ہے لیکن کلبھوشن بھارت کا دہشت گرد چہرہ ہے جو پاکستان دنیا کے سامنے لایا ہے۔

ویڈیو دیکھیے 01:07
Now live
01:07 منٹ

کلبھوشن یادیو کی والدہ اور اہلیہ کی پاکستان آمد

Audios and videos on the topic

اشتہار