چین اور مغربی جمہوریتوں میں مسابقتی عمل بڑھتا ہوا | معاشرہ | DW | 15.05.2022

ڈی ڈبلیو کی نئی ویب سائٹ وزٹ کیجیے

dw.com کے بِیٹا ورژن پر ایک نظر ڈالیے۔ ابھی یہ ویب سائٹ مکمل نہیں ہوئی۔ آپ کی رائے اسے مزید بہتر بنانے میں ہماری مدد کر سکتی ہے۔

  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

معاشرہ

چین اور مغربی جمہوریتوں میں مسابقتی عمل بڑھتا ہوا

ماہرین کے مطابق عالمی نظام کو مغربی جمہوریتوں اور چین کے درمیان پیدا مسابقت سے شدید چیلنجوں کا سامنا ہے۔ ان میں وہ ممالک بھی شامل ہیں جہاں آمرانہ حکومتیں قائم ہیں اور ان ملکوں کی قیادت کے چین کے ساتھ گہرے تعلقات ہیں۔

گزشتہ کچھ ماہ کے دوران جمہوری ممالک، جن کی قیادت امریکا کرتا ہے، اس کوشش میں ہیں کی متحد ہو کر یوکرین کی حمایت و مدد کریں تا کہ وہ روس کی فوجی چڑھائی کا بھرپور دفاع کر سکے۔ ان کی ایسی کوششوں نے کسی حد تک ماسکو حکومت پر دباؤ ضرور ڈالا ہے۔

چین بارے تشویش اورجو بائیڈن کی طرف سے ایشیائی لیڈروں کی میزبانی

ایسے حالات میں یہ مغربی جمہورت نواز ممالک چین کی سفارتی کوششوں پر بھی نگاہ رکھے ہوئے ہیں کہ وہ کس انداز میں آمرانہ طرزِ حکومت والے ممالک کے ساتھ تعلقات کو مضبوط کرنے کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہے۔

فروری میں یوکرین پر روسی فوج کشی کے بعد سے مغربی اقوام نے بیجنگ کو کئی مرتبہ متنبہ کیا ہے کہ وہ روس کو فوجی امداد فراہم کرنے سے ہر ممکن انداز میں اجتناب کرے۔

USA Symbolbild US Dollar Inflation

ماہرین کے مطابق عالمی نظام کو مغربی جمہوریتوں اور چین کے درمیان پیدا مقابلے کی فضا سے شدید چیلنجوں کا سامنا ہے

ایک سینیئر امریکی اہلکار نے نیوز ایجنسی روئٹرز کو بتایا کہ انہوں نے چین کی جانب سے روس کو فوجی و اقتصادی امداد کی فراہمی کا کوئی عمل نہیں دیکھا ہے۔ دوسری جانب ابھی تک چینی حکومت یوکرین پر روسی حملے کی مذمت کے لیے تیار بھی نہیں ہے۔

بیجنگ کے آئیڈیل پارٹنرز

گزشتہ دو ماہ کے دوران چین نے میانمار کی فوجی حکومت کے ساتھ چند اعلیٰ سطحی میٹنگوں کا انتظام بھی کیا اور مختلف امور میں ممکنہ امداد کا یقین بھی دلایا۔ اس کے ساتھ بیجنگ نے افغانستان کے ساتھ بھی انسانی ہمدردی اور بحرانی حالات کے تناظر میں کثیر القومی اجلاسوں کا سلسلہ بھی شروع کر رکھا ہے تا کہ اس ملک کو درپیش اقتصادی بحران کی شدت کو کم کیا جا سکے۔

کچھ مبصرین کا خیال ہے کہ چین ان دونوں ملکوں کے ساتھ مشترکہ بارڈر رکھتا ہے اور رابطوں کی ایک وجہ یہ بھی ہو سکتی ہے۔ سنگاپور کی نیشنل یونیورسٹی کے پولیٹیکل سائنٹسٹ ایان چونگ کا کہنا ہے کہ ہمسائیگی کی وجہ سے چین ان ملکوں کے ساتھ روابط مستحکم کرنے کو اہم سمجھتا ہے۔ ایسا ابھی خیال کیا جاتا ہے کہ چین کے اُن ممالک کے ساتھ روابط کو مستحکم کرنے کا سلسلہ بھی جاری ہے جہاں آمرانہ اقدار کی حکومتیں قائم ہیں اور یہی ممالک چین کے آئیڈیل شراکت دار خیال کیے جاتے ہیں۔

PK EU-China-Gipfel | Ursula von der Leyen

چین کے صدر شی جن پنگ کے ساتھ ورچوئل سمٹ کے بعد یورپی کمیشن کی صدر پریس کانفرنس میں

امریکی قیادت میں قائم نظام کو چینی چیلنج

فن لینڈ کی ہیلسنکی یونیورسٹی کے ایک خاتون ریسرچر ساری ارہو ہاورن کا کہنا ہے کہ چین کے حالیہ مہینوں کے کئی اقدام نے امریکی قیادت میں قائم انٹرنیشنل آرڈر کو یہ اشارہ دیا ہے کہ یہ آرڈر اب ایک جائز اور حقیقی حیثیت نہیں رکھتا۔ ہاورن نے ڈی ڈبلیو کو بتایا کہ چین کی کمیونسٹ پارٹی کی اشرافیہ واضح کرتی ہے کہ ان کا نظامِ حکومت انتظامی اور اقتصادی استحکام کا عملی نشان ہے اور اس کا وہ ایک ثبوت حالیہ مہینوں میں کووڈ وبا سے پیدا بحرانی حالات کے چیلنج سے نمٹنے کو بیان کرتے ہیں۔

خاتون ریسرچر ساری ارہو ہاورن نے کہا کہ چین کی ترقی بھی امریکا کے لیے چیلنج بن رہی ہے۔ چینی ماہرین کہتے ہیں کہ اس وقت دنیا کی سب سے مضبوط قوت چین ہے اور خاص طور عالمی دائرے کے جنوب میں اس کا ہمسر کوئی نہیں اور ویسے بھی چین کھل کر امریکی قیادت کے انٹرنیشنل آرڈر کو تسلیم بھی نہیں کرتا۔

گلوبل سکیورٹی انیشیئیٹو

ہیلسنکی یونیورسٹی کی ریسرچر کا ڈی ڈبلیو سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ چینی صدر شی جن پنگ کی گلوبل سکیورٹی انیشیئیٹو کی تجویز بھی اس ملک کے مخفی عالمی سکیورٹی کے تصور کو واضح کرتی ہے اور بیجنگ حکومت کا اس تناظر میں اپنی پالیسیوں کو آگے بڑھانے کا سلسلہ نظرانداز نہیں کیا جا سکتا۔

China, Shanghai | US-Flagge an einem Fahrzeug des US-Konsulats

شنگھائی اسکائی لائن اور امریک قنصل خانے پر لہراتا امریکی پرچم

چینی صدر نے گلوبل سکیورٹی انیشیئیٹو کو سالانہ اکنامک میٹنگ بوآو ایشیا فورم میں تجویز کیا تھا۔ اس میں تقریر کرتے ہوئے شی جن پنگ نے کہا تھا کہ اب اقوام کو ایک پائیدار، متوازن، مستحکم اور قابل عمل سکیورٹی کے قیام پر توجہ مرکوز کرنا چاہیے۔

شنگھائی بندرگاہ کی بندش کے جرمن برآمدی صنعت پر سنگین نتائج

ایک اور مبصر ایوانا کارساکووا کا خیال ہے کہ چینی صدر کے گلوبل سکیورٹی انیشیئیٹو کا خاکہ کسی حد تک مبہم ہے۔ ان کا خیال ہے کہ اس منصوبے میں چین اور روس ترقی پذیر اقوام کے علاوہ وسطی اور مشرقی یورپی ممالک کو بھی اپنے زیر اثر لانے کی تمنا رکھتے ہیں۔

ولیم یانگ، تائی پے (ع ح/ ع ا)