پوپ فرانسِس میانمار کے اولین دورے پر | حالات حاضرہ | DW | 27.11.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پوپ فرانسِس میانمار کے اولین دورے پر

پوپ فرانسِس اپنے دورے پر میانمار پہنچ گئے ہیں۔ وہ یہ دورہ ایک ایسے موقع پر کر رہے ہیں، جب میانمار کی راکھین ریاست میں جاری عسکری کارروائی کی وجہ سے چھ لاکھ روہنگیا بنگلہ ديش ہجرت پر مجبور ہو چکے ہیں۔

کیتھولک مسیحیوں کے روحانی پیشوا پوپ فرانسِس کا آج ینگون سے شروع ہونے والا دورہ دو دسمبر کو ڈھاکا میں یوتھ ریلی کے ساتھ اختتام پذیر ہو گا۔ ڈھاکا میں پوپ روہنگیا مسلمانوں کے ایک وفد سے ملاقات کے علاوہ اعلیٰ حکومتی شخصیات سے بھی ملیں گے۔ خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کا کہنا ہے کہ اس وقت عالمی میڈیا پر اہم ترین سوال یہ اٹھایا جا رہا ہے کہ آیا اپنے اس دورے میں پوپ فرانسِس ’روہنگیا‘ کا لفظ استعمال کریں گے یا نہیں؟

بدھ قوم پرستی کی آگ میں جلتا میانمار اور پوپ کا دورہ

مہاجرين کی مدد کے ليے پاپائے روم کی مہم ’داستان سفر‘

پوپ نے دینی شعبے کے سربراہ کو برخاست کر دیا

ان کا یہ دورہ اس اعتبار سے انتہائی اہم ہے کہ اس وقت میانمار میں بدھ قوم پرست جذبات انتہائی زوروں پر ہیں۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق پوپ فرانسِس اپنے اس دورے میں بین المذاہب مکالمت اور مفاہمت کا پیغام عام کریں گے۔

سخت گیر خیالات کے حامل بدھ بھکشوؤں کا ایک گروپ حالیہ کچھ برسوں سے مسلسل اسلام سے خطرات کے نعرے بلند کر کے مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز کارروائیوں میں مصروف ہے۔ خبر رساں اداروں کے مطابق ان بدھ بھکشوؤں کی کارروائیاں اس قدر جارحانہ رہی ہیں کہ انہیں ’بدھ دہشت گردی‘ تک کے القابات سے پکارا جا رہا ہے۔

رواں برس اگست میں ملکی فوج نے راکھین ریاست میں روہنگیا مسلمانوں کے خلاف عسکری کارروائی کا آغاز کیا، تو ملک کے مختلف علاقوں میں ان سخت گیر خیالات کے حامل بدھ بھکشوؤں کی جانب سے عسکری کریک ڈاؤن کے حق میں مظاہرے بھی کیے جاتے رہے۔ اے ایف پی کا کہنا ہے کہ ایسے گروپوں کی مقبولیت میں حالیہ کچھ عرصے میں خاصا اضافہ ہوا ہے۔ راکھین میں جاری عسکری کارروائی کے نتیجے میں چھ لاکھ سے زائد روہنگیا مسلمان سرحد عبور کر کے بنگلہ دیش ہجرت پر مجبور ہوئے ہیں۔

اسی تناظر میں میانمار کی حکومت کو اقوام متحدہ، امریکا اور عالمی برادری کی جانب سے شدید تنقید کا سامنا ہے جب کہ اس کے جواب میں میانمار میں داخلی سطح پر سخت گیر موقف کی حامل آوازوں کو مزید پذیرائی ملی ہے۔

ویڈیو دیکھیے 00:45
Now live
00:45 منٹ

ہزاروں کی تعداد میں روہنگیا کی بنگلہ دیش آمد کا سلسلہ جاری

میانمار اور بنگلہ دیش میں مسیحیوں کی ایک معمولی اقلیت بستی ہے اور اس دورے میں ان مسیحیوں سے ملنے کے علاوہ میانمار کی نوبل امن انعام یافتہ سویلین لیڈر آنگ سان سوچی اور فوجی سربراہ جنرل کے علاوہ بدھ مذہبی رہنماؤں سے بھی ملیں گے۔

DW.COM

Audios and videos on the topic