نئی جوہری ڈیل مسترد کر سکتے ہیں، اسرائیلی وزیر اعظم | حالات حاضرہ | DW | 23.11.2021

ڈی ڈبلیو کی نئی ویب سائٹ وزٹ کیجیے

dw.com کے بِیٹا ورژن پر ایک نظر ڈالیے۔ ابھی یہ ویب سائٹ مکمل نہیں ہوئی۔ آپ کی رائے اسے مزید بہتر بنانے میں ہماری مدد کر سکتی ہے۔

  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

نئی جوہری ڈیل مسترد کر سکتے ہیں، اسرائیلی وزیر اعظم

اسرائیلی وزیر اعظم نفتالی بینیٹ نے عندیہ دیا ہے کہ ان کا ملک کسی نئے بین الاقوامی ایرانی جوہری معاہدے کا پابند نہیں ہوگا۔ اس طرح انہوں نےایران کے ساتھ تصادم کے بڑھتے امکانات کی طرف اشارہ کیا ہے۔

ایران کے ساتھ اُس کے متنازعہ ایٹمی معاہدے کی بحالی کے لیے مذاکرات کا سلسلہ 29 نومبر کو شروع ہونے جا رہا ہے۔ اس تناظر میں اسرائیلی وزیر اعظم نے ایران کیساتھ اپنے دیرینہ کشیدہ تعلقات اور تصادم کی صورتحال میں اضافے کے امکانات کی نشاندہی کی ہے۔  نفتالی بینیٹ نے اس امر کا اعادہ کیا ہے کہ اگر عالمی طاقتوں کے ساتھ ایران کا کوئی نیا ایٹمی معاہدہ طے پاتا ہے تو تل ابیب حکومت اُس کی پابند نہیں ہوگی۔

ایران: فردو میں زیر زمین جوہری تنصیب، مغربی دنیا کی تشویش

ایران جوہری ڈیل سے نکلنے کا اعلان سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے 2018 ء میں کیا تھا۔ امریکا اور اسرائیل کا مشترکہ نقطہ نظر یہ تھا کہ یہ ڈیل ایران کی ایٹمی ہتھیار بنانے کی صلاحیت کے حامل منصوبوں کو روکنے کے لیے ناکافی ہے۔ اسرائیلی وزیراعظم نفتالی بینیٹ جنہوں نے رواں سال جون میں عہدہ سنبھالا ہے، نے ایک تقریر میں کہا ہے کہ '' ایران اپنے جوہری پروگرام کے اعلیٰ درجے تک پہنچ چُکا ہے۔‘‘

Rafael Grossi im Iran

بین الاقوامی ایٹمی توانائی ایجنسی کے سربراہ رافائل گروسی تہران میں

 ممکنہ تنازعے کی دھمکی

 نفتالی بینیٹ کی حکومت گرچہ پہلے یہ کہہ چُکی ہے کہ وہ ایران کے ساتھ ایک نئی جوہری ڈیل کا کھلے دل سے ساتھ دے گی بشطریکہ نیا معاہدہ ایران پر مزید سخت پابندیاں عائد کرے تاہم وزیراعظم  نفتالی بینیٹ نے اسرائیلی خود مختاری پر دوبارہ زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ اپنے 'دیرینہ دشمن‘ کے خلاف کارروائی کرے گا۔

ایٹمی ہتھیار بنانا اور استعمال کرنا اسلام میں حرام ہے، خامنہ ای

تل ابیب کےنزدیکی علاقے میں قائم 'رائش من یونیورسٹی‘ کے ایک ٹیلی وژن پر نشر ہونے والی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے نفتالی بینیٹ کا کہنا تھا،'' ہم اس وقت بہت پیچیدہ حالات کا سامنا کر رہے ہیں۔ ایسے میں عین ممکن ہے کہ ہمارے بہتریں دوستوں کے ساتھ کوئی تنازعہ کھڑا ہو جائے۔‘‘ ان کا مزید کہنا تھا،'' کسی بھی صورت میں اور چاہے کسی بھی معاہدے کی واپسی ہو، اسرائیل یقیناً اس معاہدے کا فریق نہیں ہوگا نہ ہی اسرائیل اس ڈیل کا پابند ہوگا۔‘‘

 

Iran I Atomkraft I Atomanlage Natanz

تہران یورینیم کی افزودگی سے ایٹمی ہتھیار سازی کے الزام کو مسترد کرتا رہا ہے

نفتالی بینیٹ نے ساتھ ہی قدرے مایوس لہجے میں کہا کہ اسرائیل کی '' ایرانی گوریلا اتحادیوں‘  کے ساتھ جھڑپیں چھوٹے پیمانے پر ہوتی رہی ہیں ۔‘‘ نفتالی کے بقول،'' ایران نے اسرائیلی ریاست کو گھیر رکھا ہے۔‘‘ ان کا کہنا تھا،'' ایرانی خفیہ قُدس فورس کی طرف سے بھیجے گئے دہشت گردوں کا تعاقب کافی نہیں ہے بلکہ بھیجنے والے تک پہنچنا ہوگا۔‘‘

ٹرمپ کی مدت صدارت، عالمی سطح پر یکطرفہ امریکی فیصلوں کا دور

اسرائیلی وزیر اعظم کا ماننا ہے کہ سائبر ٹکنالوجی کے ضمن میں بہت ہی واضح جنگ کے خطرات کو اب تک روکے رکھا گیا ہے تاہم اسرائیل کے لیے نفتالی بینیٹ جن امور کو فائدہ مند سمجھتے ہیں وہ رنگ لا سکتے ہیں، یعنی اسرائیلی جمہوریت اور بین الاقوامی حمایت۔ انہوں نےکہا، '' ایران اُس سے کہیں زیادہ کمزور ہے جتنا اُسے عام طور سے سمجھا جاتا ہے۔‘‘

ک م/ ع ح/ روئٹرز