میرے بچے میرے ہاتھوں سے پھسل کر موت کے منہ میں چلے گئے، ایلان کا باپ | حالات حاضرہ | DW | 03.09.2015
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

میرے بچے میرے ہاتھوں سے پھسل کر موت کے منہ میں چلے گئے، ایلان کا باپ

دنیا بھر کو صدمے سے دوچار کرنے والی تصویر میں نظر آنے والے بچے ایلان کُردی کے باپ کا کہنا ہے کہ اسے کے بچے ’اس کے ہاتھوں سے پھسل گئے‘۔ عبداللہ کُردی کے مطابق ربڑ کی کشتی ڈوب رہی تھی اور اندھیرے میں ہر طرف چیخ و پکار تھی۔

آج جمعرات تین ستمبر کو تین سالہ ایلان کُردی کی وہ تصویر دنیا بھر کے اخبارات میں چھپی ہے جس میں یہ ننھا بچہ ترکی کے ایک ساحل پر مردہ حالت میں پڑا ہے۔ ایلان کُردی کی اس تصویر نے مہاجرین کو درپیش ان خطرات کو دنیا کے سامنے اجاگر کیا ہے جن کا وہ جنگ زدہ علاقوں سے نکل کر یورپ پہنچنے کی کوششوں میں سامنا کر رہے ہیں۔

عبداللہ کرُدی کے مطابق بدھ کی شب گنجائش سے زائد افراد سے بھری ربڑ کی کشتی الٹنے کے فوراﹰ بعد ہی وہ سمجھ گیا تھا کہ اس کے بچے اور اس کی بیوی ڈوب گئے ہیں۔ عبداللہ کے مطابق سمندر میں اٹھنے والی بڑی موجوں کے باعث کشتی کا کپتان افراتفری کا شکار ہو گیا اور اس نے سمندر میں چھلانگ لگا کر راہ فرار اختیار کر لی۔ جس کے بعد اس نے کشتی کو سنبھالنے کی کوشش کی: ’’میں نے اسٹیئرنگ سنبھالا مگر لہریں اتنی بلند تھیں کہ کشتی اُلٹ گئی۔ میں نے اپنی بیوی اور اپنے بچوں کو بازوؤں میں بھر لیا اور سمجھ گیا کہ ہم سب مر جائیں گے۔‘‘

آج جمعرات تین ستمبر کو تین سالہ ایلان کُردی کی یہ تصویر دنیا بھر کے اخبارات میں چھپی ہے

آج جمعرات تین ستمبر کو تین سالہ ایلان کُردی کی یہ تصویر دنیا بھر کے اخبارات میں چھپی ہے

کُردی کے مطابق، ’’ہم نے کشتی کو پکڑنے کی کوشش کی مگر ہوا خارج ہونے کے باعث وہ ڈوب رہی تھی۔ گھپ اندھیرا تھا اور ہر کوئی چیخ رہا تھا۔‘‘

بدھ کی شب دو کشتیاں الٹنے کے باعث کُل 12 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ ان ہلاک ہونے والوں میں ایلان کا چار سالہ بھائی غالب اور ان کی والدہ ریحانہ بھی شامل ہیں۔ یہ خاندان شامی شہر کوبانی تعلق رکھتا ہے اور رپورٹوں کے مطابق جنگ زدہ علاقے سے تعلق رکھنے والا یہ خاندان امن کی تلاش اور بہتری زندگی کی امید کے ساتھ کینیڈا جانے کی کوشش میں تھا۔