میانمار کا بحران اور روہنگیا کم سِن دلہنیں | حالات حاضرہ | DW | 15.02.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

میانمار کا بحران اور روہنگیا کم سِن دلہنیں

بارہ سالہ مسلم روہنگیا بچی جب ظلم وستم سے فرار ہونے کی کوشش میں تھی، تو اسے معلوم نہ تھا کہ اس کی زبردستی شادی کر دی جائے گی۔ میانمار سے ہجرت کرنے والی روہنگیا خواتین کو ایسے مسائل کا سامنا تواتر سے کرنا پڑ رہا ہے۔

میانمار کی مسلم روہنگیا کمیونٹی سے تعلق رکھنے والی ایک تیرہ سالہ لڑکی نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو انٹرویو دیتے ہوئے بتایا ہے کہ وہ امن وسکون کی تلاش میں نکلی تو انسانوں کے اسمگلروں نے اسے کس طرح اپنی عمر سے دس برس سے بھی زائد عمر بڑے ایک شخص کے ہاتھ فروخت کر دیا۔ اس لڑکی کا نام نہیں بتایا گیا ہے تاہم جب وہ گزشتہ برس شورش زدہ علاقے راکھین سے فرار ہوئی تھی تو اس کی عمر صرف بارہ برس تھی۔

میانمار حکومت روہنگیا مسلمانوں کی ’نسل کشی‘ میں ملوث: ملائیشیا

میانمار: فوجی کارروائی، روہنگیا مسلمانوں پر قیامت گزر گئی

روہنگیا مسلمانوں پر مبینہ ظلم و ستم، چھان بین کا سلسلہ شروع

ملائیشیا میں مہاجرت اختیار کرنے والے روہنگیا مسلمانوں نے بتایا ہے کہ اس لڑکی کو شادی کی خاطر فروخت کرنا کوئی انوکھا واقعہ نہیں بلکہ اس طرح کے واقعات رونما ہوتے رہتے ہیں۔ یہ لڑکی جب میانمار کی سکیورٹی فورسز کے مبینہ کریک ڈاؤن کی وجہ سے اپنی فیملی کے ساتھ ملک سے فرار ہونے کی کوشش میں تھی، تو اپنے عزیزوں سے بچھڑ گئی۔ تب وہ انسانوں کے اسمگلرز کے ہتھے چڑھ گئی۔ ان اسمگلرز نے اس لڑکی کو کہا کہ اسی کی کمیونٹی سے تعلق رکھنے والا ایک شخص اسے پناہ دینے کو تیار ہے تاہم اس مقصد کے لیے اسے شادی کرنا ہو گی۔

کوالالمپور میں روئٹرز سے گفتگو کرتے ہوئے اس روہنگیا لڑکی نے کہا، ’’انسانوں کے اسمگلروں نے تب مجھے بتایا کہ مجھے فروخت کر دیا گیا ہے۔ میں نے پوچھا کہ ایسا کیسے ہو سکتا ہے؟ اس وقت میں بہت زیادہ خوفزدہ تھی۔‘‘ روئٹرز اس لڑکی کی کہانی کی تصدیق نہیں کر سکا ہے تاہم اس بچی کے گھر والوں نے کہا ہے کہ بازیابی سے قبل وہ کئی ہفتوں تک ایک کیمپ میں مقید رکھی گئی تھی۔

میانمار کے موجودہ بحران کے باعث کم عمر بچیوں کی شادی کر دیے جانے کے واقعات میں بھی اضافہ نوٹ کیا گیا ہے۔ انسانی حقوق کے اداروں کے مطابق ظلم وستم اور بحران کی شکار لڑکیوں کو انہی کی کمیونٹی کے مردوں کے ساتھ شادی کی غرض سے فروخت کرنے کے واقعات بڑھتے جا رہے ہیں۔ صرف ملائیشیا میں ہی ایسی ایک سو بیس کم سن لڑکیوں کی شناخت کی جا چکی ہے، جن کی زبردستی شادی کی گئی ہے۔ تاہم ایسے واقعات کی درست تعداد ابھی تک واضح نہیں ہے۔

میانمار بالخصوص راکھین میں روہنگیا مسلمان کمیونٹی کو سن دو ہزار بارہ سے نسلی امتیاز کا سامنا ہے۔ میانمار کی سکیورٹی فورسز نے گزشتہ برس اکتوبر سے اس ریاست میں ایک آپریشن بھی شروع کر رکھا ہے۔  بنگلہ دیش فرار ہونے والے روہنگیا افراد نے بتایا ہے کہ ملکی فوجی خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی کے مرتکب ہوتے ہیں جبکہ مردوں کو ہلاک کیا جا رہا ہے۔

میڈیا رپورٹوں کے مطابق ان روہنگیا مسلمانوں نے یہ بھی بتایا کہ راکھین میں ان کی املاک کو تباہ کیا جا رہا ہے۔ اقوام متحدہ کی طرف سے حال ہی میں جاری ہونے والی ایک رپورٹ کے مطابق میانمار کی سکیورٹی فورسز روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام، آبرو ریزی اور ان کے دیہات کو جلانے جیسے اقدامات میں ملوث ہے۔

اقوام متحدہ کے اعداد و شمار کے مطابق انہی پرتشدد کارروائیوں کے باعث  ہزاروں روہنگیا باشندے ہمسایہ ممالک کی طرف ہجرت کرنے پر مجبور بھی ہو چکے ہیں۔ عالمی ادارے کے ایک محتاط اندازے کے مطابق ملائیشیا میں اس کمیونٹی کے افراد کی تعداد چھپن ہزار بنتی ہے تاہم انسانی حقوق کے دیگر اداروں کے مطابق ملائیشیا میں روہنگیا مسلمانوں کی حقیقی تعداد ان اندازوں سے کہیں زیادہ ہے۔

DW.COM