میانمار میں خطاب، پوپ فرانسس نے روہنگیا کا حوالہ نہ دیا | حالات حاضرہ | DW | 28.11.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

میانمار میں خطاب، پوپ فرانسس نے روہنگیا کا حوالہ نہ دیا

پوپ فرانسس نے میانمار میں ایک تقریب سے خطاب میں کہا کہ یہ ملک میں خانہ جنگی اور تشدد کی وجہ سے تقسیم کا شکار ہوتا جا رہا ہے۔ تاہم اس دوران انہوں نے روہنگیا مسلم اقلیت کے خلاف جاری حکومتی کریک ڈاؤن کا کوئی حوالہ نہیں دیا۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے بتایا ہے کہ اٹھائیس نومبر بروز منگل پوپ فرانسس نے میانمار میں ایک اجتماع سے خطاب میں کہا ہے کہ تشدد سے بچنے کی خاطر مذہبی اختلافات کو دور کرتے ہوئے قومی مصالحت کی راہ اختیار کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ انسانی حقوق کے تحفظ کی خاطر قیام امن کی کوششیں کرنا ہوں گی اور اںصاف کا بول بالا کرنا ہو گا۔

پوپ فرانسِس میانمار کے اولین دورے پر

’روہنگیا مہاجرین کی وطن واپسی کا عمل آئندہ دو ماہ میں شروع کر دیا جائے گا‘، بنگلہ دیش

بدھ قوم پرستی کی آگ میں جلتا میانمار اور پوپ کا دورہ

ویڈیو دیکھیے 03:12
Now live
03:12 منٹ

بنگلہ دیش پہنچنے والے روہنگیا مہاجرین کے مصائب

کیتھولک مسیحیوں کے رہنما پوپ فرانسس کا مزید کہنا تھا، ’’مذہبی اختلافات کسی تقسیم یا بداعتمادی کی وجہ نہیں بننا چاہییں بلکہ یہ تو ایسی طاقت ہے، جس کی وجہ سے اتحاد، درگزر، برداشت اور قوم کی ترقی کو تقویت دی جانا چاہیے۔‘‘ منگل اٹھائیس نومبر کو آنگ سان سوچی سے ملاقات کے بعد اس اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے پوپ فرانسس نے کہا کہ میانمار میں قیام امن کی کوششوں کو تیز کر دینا چاہیے۔

تاہم اس خطاب میں پوپ فرانس نے روہنگیا مسلم اقلیت کا حوالہ نہیں دیا، جس کے خلاف جاری حکومتی کریک ڈاؤن کی وجہ سے میانمار میں ایک بحران کی کیفیت پیدا ہو چکی ہے۔ رواں برس اگست میں شروع ہونے والے اس کریک ڈاؤن کی وجہ سے چھ لاکھ سے زائد روہنگیا مسلم افراد بنگلہ دیش فرار ہو چکے ہیں۔

انسانی حقوق کے اداروں نے زور دیا تھا کہ پوپ فرانسس کو روہنگیا اقلیت کا حوالہ دینا چاہیے تاکہ ان کا کیس زیادہ بہتر طریقے سے نمایاں ہو سکے۔ تاہم  میانمار میں کیتھولک چرچ نے مشورہ دیا تھا کہ اگر پوپ فرانسس اس ملک میں اس طرح کا کوئی براہ راست بیان دیں گے تو مقامی کیتھولک مسیحیوں کے لیے مشکلات پیدا ہو سکتی ہیں۔

اقوام متحدہ کے ساتھ امریکا نے بھی میانمار میں روہنگیا کمیونٹی کے خلاف جاری اس کریک ڈاؤن کو ’نسل کشی‘ قرار دے دیا ہے۔ میانمار کی حکومت پر دباؤ بڑھ رہا ہے کہ وہ اس بحران کے خاتمے کی خاطر فوری اقدامات اٹھائے۔ میانمار اور بنگلہ دیش کی حکومتوں کے مابین ان مہاجرین کی واپسی کے ایک معاہدے کے باوجود ایسی اطلاعات ہیں کہ روہنگیا مسلمان بنگلہ دیش ہجرت پر مجبور ہیں۔

اس تناظر میں پوپ فرانسس کے اس دورے کو انتہائی اہم قرار دیا جا رہا ہے۔ ان کے اس دورے سے قبل روہنگیا مہاجرین نے اس امید کا اظہار کیا تھا کہ ان کے مصائب عالمی منظر نامے پر زیادہ بہتر طریقے سے اجاگر ہو سکیں گے۔ دوسری طرف ایک اور پیشرفت میں آکسفورڈ سٹی کونسل نے میانمار کی رہنما آنگ سان سوچی کو دیا گیا ’فریڈم آف دی سٹی‘ کا ایوارڈ واپس لے لیا ہے۔

بتایا گیا ہے کہ میانمار میں روہنگیا مسلمانوں کے خلاف جاری حکومتی کریک ڈاؤن پر سوچی کی خاموشی کی وجہ سے یہ اعزاز واپس لیا گیا ہے۔ آکسفورڈ یونیورسٹی کی سابق طالبہ سوچی کو امن کا نوبل انعام بھی دیا گیا تھا۔ سماجی حلقوں کے مبصرین کا مطالبہ ہے کہ ان سے یہ انعام بھی واپس لے لینا چاہیے۔

DW.COM

Audios and videos on the topic