مودی کی زندگی پر بنی فلم کی بھارتی الیکشن سے قبل نمائش ممنوع | فن و ثقافت | DW | 10.04.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

فن و ثقافت

مودی کی زندگی پر بنی فلم کی بھارتی الیکشن سے قبل نمائش ممنوع

بھارتی الیکشن کمیشن نے ملک میں کل گیارہ اپریل سے شروع ہونے والے قومی پارلیمان کے لیے انتخابی عمل کی تکمیل کے بعد تک ہندو قوم پسند وزیر اعظم نریندر مودی کی زندگی پر بنائی گئی ایک کمرشل فلم کی نمائش ممنوع قرار دے دی ہے۔

بھارتی دارالحکومت نئی دہلی سے بدھ دس اپریل کو موصولہ نیوز ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس کی رپورٹوں کے مطابق الیکشن کمیشن آف انڈیا کے اعلیٰ حکام نے آج یہ حکم دیا کہ اس فلم کو قومی پارلیمانی انتخابات کی تکمیل تک کسی بھی سینما گھر میں ریلیز نہیں کیا جا سکتا۔

یہ فلم بھارت کی بالی وُڈ کہلانے والی فلمی صنعت کی تازہ ترین اور کافی مہنگی پروڈکشن ہے، جسے اس کے فلم ساز اور تقسیم کاروں نے پورے ملک میں کل جمعرات گیارہ اپریل کو عین اسی دن ریلیز کرنے کا پروگرام بنا رکھا تھا، جس دن سے لوک سبھا کہلانے والے قومی پارلیمان کے ایوان زیریں کے نئے اراکین کے عوامی انتخاب کا عمل بھی شروع ہو رہا ہے۔

اس بارے میں ملکی سطح پر اپوزیشن کی سب سے بڑی جماعت کانگریس اور حزب اختلاف کی کئی دیگر پارٹیوں نے بھی الیکشن کمیشن کو درخواست دے رکھی تھی کہ حکومت اس فلم کی 11 اپریل ہی کے روز ریلیز کے ساتھ وزیر اعظم نریندر مودی کی ہندو قوم پسند جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی یا بی جے پی کے لیے عوامی ہمدردیاں حاصل کرنے کی غیر قانونی اور غیر جمہوری کوشش کر رہی ہے۔

Bildergalerie: Bollywood

اس فلم کو پورے ملک میں گیارہ اپریل کو عام انتخابات کے طویل عمل کے آغاز کے دن ریلیز کیا جانا تھا

اہم بات یہ ہے بھارت آبادی کے لحاظ سے دنیا کا دوسرا سب سے بڑا ملک ہے، جہاں فلم بینی کی داخلی منڈی بھی بہت ہی بڑی ہے، کیونکہ عام بھارتی شہریوں میں سینما گھر جا کر فلمیں دیکھنے کا رجحان بہت زیادہ ہے۔ اس پس منظر میں یہ بات سمجھنا بھی آسان ہو جاتا ہے کہ بھارت میں قومی اور صوبائی پارلیمانی اداروں میں ہمیشہ ہی فلمی صنعت سے وابستہ شخصیات بھی رکن رہی ہیں۔

ایک اور اہم بات یہ بھی ہے کہ ملکی الیکشن کمیشن نے مودی کی زندگی پر بنائی گئی جس تجارتی فلم کی نمائش اب تقریباﹰ ڈیڑھ ماہ تک کے لیے روک دی ہے، اس کا نام ہی ’پی ایم نریندر مودی‘ یا ’وزیر اعظم نریندر مودی‘ ہے۔

اس بارے میں الیکشن کمیشن کے مختلف سیاسی جماعتوں کی طرف سے دائرہ کردہ اعتراضات کی سماعت کرنے والے اعلیٰ حکام نے اپنے حکم کی بنیاد اس بات کو بنایا کہ کل جمعرات سے اس فلم کی ریلیز اس لیے نہیں کی جانا چاہیے کہ اس فلم سے مودی کی ہندو قوم پسند جماعت بی جے پی کو اس کی دوبارہ انتخاب کی سیاسی کوششوں میں ایک غیر منصفانہ فائدہ حاصل ہو جائے گا۔ اس فلم کے پروڈیوسر سندیپ سنگھ ہیں۔

بھارتی پارلیمانی الیکشن میں رائے دہی کا عمل 11 اپریل کو شروع ہو کر 19 مئی کو مکمل ہو گا اور ووٹوں کی گنتی 23 مئی سے شروع ہو گی۔

دریں اثناء بھارتی الیکشن کمیشن کی طرف سے اپوزیشن جماعتوں کی ایسی درخواستوں کا جائزہ بھی لیا جا رہا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کے نام سے ایک ٹی وی چینل کا اجراء بھی ممکنہ طور پر ملکی انتخابی قوانین کی خلاف ورزی کے زمرے میں آتا ہے۔ اس چینل کے لیے رقوم بھی بھارتیہ جنتا پارٹی فراہم کرتی ہے۔

م م / ع ا / اے پی

DW.COM