ليونارڈو ڈی کيپريو بھارت ميں، کسی کو کانوں کان خبر نہيں | فن و ثقافت | DW | 02.11.2015
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

ليونارڈو ڈی کيپريو بھارت ميں، کسی کو کانوں کان خبر نہيں

ہالی وُڈ کے عالمی شہرت يافتہ اسٹار ليونارڈو ڈی کيپريو نے موسمياتی تبديليوں کے موضوع پر ايک دستاويزی فلم بنانے کے ليے بھارت کا دورہ کيا، جس کے بارے ميں اُنہوں نے کسی کو مطلع نہيں کيا تھا۔

بھارتی دارالحکومت نئی دہلی سے موصولہ نيوز ايجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں کے مطابق ڈی کيپريو اِس خصوصی اور خفيہ دورے ميں تاج محل بھی گئے ۔ چاليس سالہ فلمی ستارے نے اپنی دستاويزی فلم کے سلسلے ميں نئی دہلی ميں قائم سينٹر فار سائنس اينڈ انوائرمنٹ (CSE) کی ڈائريکٹر سنيتا نرين کا انٹرويو کيا۔

اس ادارے کے ايک اہلکار نے اپنی شناخت مخفی رکھنے کی شرط پر بتايا، ’’اس دورے کو خفيہ رکھا گيا ہے۔ ہم نے انٹرويو کے بعد جمعے کے روز ذرائع ابلاغ کے ساتھ ايک نشست کی درخواست کی تھی تاہم فلم کے پروڈيوسر اس پر رضامند نہ ہوئے۔‘‘

يہ امر اہم ہے کہ ليونارڈو ڈی کيپريو موسمياتی تبديليوں اور امن کے موضوعات پر اقوام متحدہ کے خصوصی نمائندہ ہيں۔ اس وقت دنيا کے کئی ممالک موسمياتی تبديليوں کے حوالے سے رواں برس دسمبر ميں فرانسيسی دارالحکومت پيرس ميں ہونے والی انتہائی اہم سمٹ کی تياريوں ميں مصروف ہيں۔ اس سربراہی اجلاس ميں فريقين کو موسمياتی تبديلیوں کے مضر اثرات سے بچنے کے ليے ايک معاہدے پر متفق ہونا ہے۔

اسٹار ليونارڈو ڈی کيپريو نے گزشتہ ويک اينڈ پر آگرہ کے معروف تاج محل کا دورہ کيا

اسٹار ليونارڈو ڈی کيپريو نے گزشتہ ويک اينڈ پر آگرہ کے معروف تاج محل کا دورہ کيا

ہالی وُڈ کے عالمی شہرت يافتہ اسٹار ليونارڈو ڈی کيپريو نے گزشتہ ويک اينڈ پر آگرہ کے معروف تاج محل کا دورہ کيا۔ بھارتی اخبار ہندوستان ٹائمز کے مطابق اپنی شناخت چھپانے کے ليے انہوں سر پر ٹوپی اور سياہ رنگ کے چشمے لگا رکھے تھے۔ ڈی کيپريو نے بھارت کا دورہ اپنی والدہ اور اہل خانہ کے چند ديگر افراد کے ہمراہ کيا۔ تاج محل کے احاطے اور باغيچے ميں انہوں نے کچھ ’سيلفياں‘ يعنی اپنی تصاوير بھی ليں۔ ساتھ موجود سکيورٹی کے عملے نے وہاں موجود ديگر افراد کو ان کے ساتھ سيلفی لينے يا تصاوير کھينچنے سے منع کر ديا تھا۔

جس طرح ليونارڈو ڈی کيپريو کے اس دورے کی تفصيلات کو خفيہ رکھا گيا، اسی طرح ان کی روانگی کے بارے ميں بھی تاحال کوئی اطلاعات دستياب نہيں ہیں ۔ کچھ رپورٹوں کے مطابق وہ اپنا دورہ پچھلے ويک اينڈ پر ہی ختم کر چکے ہيں۔

اشتہار