1. مواد پر جائیں
  2. مینیو پر جائیں
  3. ڈی ڈبلیو کی مزید سائٹس دیکھیں
New York  Liz Truss und Jair Lapid
اسرائیلی وزیر اعظم یائر لیپیڈ برطانیہ کی نئی وزیر اعظم لز ٹرس سے ملاقات کرتے ہوئےتصویر: Toby Melville/AP/picture alliance

لز ٹرس کا برطانوی سفارت خانہ یروشلم منتقل کرنے پر غور

22 ستمبر 2022

برطانیہ کی نئی وزیر اعظم لز ٹرس نے کہا ہے کہ ان کی حکومت اسرائیل میں برطانوی سفارت خانے کی تل ابیب سے یروشلم منتقلی پر غور کر رہی ہے۔ اسرائیلی وزیر اعظم یائر لیپیڈ نے اس بات پر اپنی برطانوی ہم منصب کا شکریہ ادا کیا ہے۔

https://p.dw.com/p/4HD1k

برطانوی وزیر اعظم کی ترجمان نے جمعرات بائیس ستمبر کے روز بتایا کہ لز ٹرس نے اسرائیل میں برطانوی سفارت خانے کی تل ابیب سے ممکنہ یروشلم منتقلی کا ذکر نیو یارک میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے موقع پر اسرائیلی ہم منصب یائر لیپیڈ کے ساتھ ہونے والی ایک ملاقات میں کیا۔

غزہ کی لڑائی کا تیسرا دن: اسرائیلی فضائی حملے جاری، ہلاکتیں کم از کم تیس

اس ملاقات کے بعد اسرائیلی سربراہ حکومت نے ٹوئٹر پر اپنے ایک پیغام میں لکھا کہ وہ نئی برطانوی وزیر اعظم کی طرف سے اس بارے میں غور و فکر کیے جانے پر ان کے شکر گزار ہیں۔

یائر لیپیڈ نے ٹرس کو 'اسرائیل کی ایک حقیقی دوست‘ قرار دیتے ہوئے اپنی ٹویٹ میں لکھا، ''ہم مل کر برطانیہ اور اسرائیل کے دو اتحادی ممالک کے طور پر تعلقات کو مزید مضبوط بنائیں گے۔‘‘

New York  Liz Truss und Jair Lapid
یائر لیپیڈ نے اپنی ایک ٹویٹ میں لز ٹرس کو ’اسرائیل کی ایک سچی دوست‘ قرار دیاتصویر: Israeli Prime Minister/APA Images/ZUMA/picture alliance

یروشلم کی متنازعہ حیثیت

اسرائیل میں دیگر ممالک کے سفارت خانوں کی تل ابیب سے یروشلم منتقلی اس لیے بہت متنازعہ معاملہ ہے کہ یروشلم شہر کی حتمی حیثیت ابھی طے نہیں ہوئی۔ اسرائیل متحدہ یروشلم کے اپنا دارالحکومت ہونے کا دعویٰ کرتا ہے حالانکہ یروشلم کا مشرقی حصہ اس نے 1967ء کی عرب اسرائیل جنگ کے دوران اپنے قبضے میں لیا تھا۔

اسرائیل و فلسطین میں تشدد میں اضافہ، اقوام متحدہ کی تشویش

اس کے علاوہ فلسطینیوں کا بھی دعویٰ ہے کہ ان کی مستقبل کی آزاد اور خود مختار ریاست فلسطین کا دارالحکومت یروشلم ہی کا مشرقی حصہ ہو گا۔

جہاں تک بین الاقوامی برادری کا تعلق ہے تو وہ یروشلم شہر کی موجودہ حیثیت کو قطعی متنازعہ سمجھتی ہے۔ عالمی برادری کی رائے میں اسرائیل اور فلسطینیوں کے مابین مستقبل میں کسی بھی وقت بحال ہونے والے امن مذاکرات میں اہم ترین نکتہ یروشلم کے تاریخی شہر کی حتمی حیثیت کا تعین ہی ہو گا۔

ڈونلڈ ٹرمپ کے متنازعہ فیصلے

جہاں تک تل ابیب سے کسی بھی دوسرے ملک کے سفارت خانے کی یروشلم منتقلی کا سوال ہے تو امریکہ نے 2017ء میں ایک ایسا فیصلہ کیا تھا، جس نے ساری دنیا کو حیران کر دیا تھا۔تب صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے تاریخی حد تک جانب دارانہ اور وائٹ ہاؤس کی طرف سے قطعی یک طرفہ فیصلہ کرتے ہوئے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کر لیا تھا۔

یروشلم میں سفارتخانہ کھولنے کے منصوبے پر یورپی یونین کی تنبیہ

اس کے بعد مئی 2018ء میں ٹرمپ انتظامیہ ہی کے دور میں امریکہ نے تل ابیب سے اپنا سفارت خانہ یروشلم منتقل کر دیا تھا۔

تب ٹرمپ انتظامیہ کے ان دونوں اقدامات پر عالمی برادری اور خاص طور پر فلسطینیوں نے بھی کڑی تنقید کی تھی۔

اب تک چند دیگر ممالک بھی اسرائیل میں اپنے سفارت خانے تل ابیب سے یروشلم منتقل کر چکے ہیں۔

م م / ع ا (ڈی پی اے، اے پی)

ملتے جلتے موضوعات سیکشن پر جائیں

ملتے جلتے موضوعات

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ سیکشن پر جائیں

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ

Pakistan Karatschi Premierminister Mian Shahbaz

ن لیگ نے عمران خان کی ’مشروط‘ مذاکرات کی پیشکش مسترد کر دی

ڈی ڈبلیو کی مزید رپورٹیں سیکشن پر جائیں
ہوم پیج پر جائیں