لائن آف کنٹرول پر فائرنگ کا تبادلہ، دو پاکستنانی فوجی ہلاک | حالات حاضرہ | DW | 29.09.2016
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لائن آف کنٹرول پر فائرنگ کا تبادلہ، دو پاکستنانی فوجی ہلاک

پاکستان اور بھارت کے فوجی دستوں کے درمیان متنازعہ خطّے کشمیر میں لائن آف کنٹرول پر فائرنگ کا تبادلے کے دوران دو پاکستانی فوجی ہلاک ہو گئے ہیں۔ دونوں ملکوں نے ایک دوسرے پر بلا اشتعال فائرنگ کا الزام عائد کیا ہے۔

نیوز ایجنسی روئٹرز نے سری نگر اور نئی دہلی سے اپنی رپورٹوں میں سینیئر بھارتی فوج اور پولیس کے سینیئر افسران کے حوالے سے بتایا ہے کہ جمعرات اُنتیس ستمبر کو لائن آف کنٹرول کہلانے والی سرحد پر نوگام نامی سیکٹر میں دونوں ملکوں کے فوجی دستوں کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ جاری ہے۔

ایک بھارتی فوجی افسر نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر روئٹرز کو بتایا:’’پاکستانی دستوں نے نصف شب کو شمالی کشمیر کے نوگام سیکٹر میں بھارتی فوج کی پوزیشنوں پر فائرنگ کی۔ اُنہوں نے مارٹر گولے بھی فائر کیے۔ ایل او سی (لائن آف ک نٹرول) پر موجود فوج نے فائرنگ کا جواب دیا اور فائرنگ کا یہ سلسلہ وقفے وقفے سے جاری ہے۔‘‘

بھارتی فوج کی جانب سے بدھ کی شام لگائے جانے والے اس الزام کے بعد کہ پاکستان نے 2003ء میں طے ہونے والی فائر بندی ڈیل کی خلاف ورزی کی ہے، بھارتی دارالحکومت نئی دہلی میں سلامتی کے امور سے متعلقہ کابینہ کا ایک اجلاس منعقد ہو رہا ہے، جس کی قیادت وزیر اعظم نریندر مودی کر رہے ہیں۔ دفاع اور خارجہ امور سے متعلقہ وزارتوں کے عہدیدار عنقریب اس اجلاس کی تفصیلات کے بارے میں بریفنگ دیں گے۔

مودی کے ایک قریبی ساتھی نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر روئٹرز کو بتایا:’’سیز فائر کی خلاف ورزی سے یہ بات ثابت ہو گئی ہے کہ پاکستان بین الاقوامی ضوابط کی خلاف ورزی پر تُلا ہوا ہے۔ ہم یہ بات تمام عالمی فورمز پر پہنچائیں گے۔‘‘

Grenze zwischen Indien und Kaschmir

لائن آف کنٹرول پر دونوں ملکوں کی افواج کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ پانچ گھنٹوں تک جاری رہا

بھارت نے ابھی تک فائرنگ کے تبادلے میں کسی جانی نقصان کا ذکر نہیں کیا تاہم پاکستانی فوج کے مطابق بھارتی فورسز کے ساتھ فٹائرنگ کے تبادلے میں جمعرات کی صبح دو پاکستانی فوجی ہلاک ہو گئے۔

بتایا گیا ہے کہ لائن آف کنٹرول پر دونوں ملکوں کی افواج کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ پانچ گھنٹوں تک جاری رہا، جس میں ایک سویلین کے زخمی ہونے کی بھی اطلاع ہے۔ پاکستانی فوج نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ گزشتہ نصف شب کے کچھ دیر بعد بھارتی دستوں نے بلا اشتعال بھمبر، کیل، تتّہ پانی اور لیپا کے علاقوں میں فائرنگ شروع کر دی، جس کا مناسب جواب دیا گیا۔

2013ء کے اوائل سے جاری جھڑپوں کے نتیجے میں لائن آف کنٹرول کے دونوں جانب اندازاً کوئی ایک سو افراد ہلاک ہو چکے ہیں، جن میں سے زیادہ تر عام شہری تھے۔

بھارت اُڑی میں اپنے ایک فوجی ہیڈکوارٹر پر اُس حملے کے لیے پاکستان میں موجود ایک کالعدم عسکریت پسند گروپ کو قصور وار قرار دے رہا ہے جبکہ پاکستان اس الزام کو رَد کرتا ہے۔

اشتہار