سپریم کورٹ کا فیصلہ، سوشل میڈیا پر ردعمل | معاشرہ | DW | 15.12.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

سپریم کورٹ کا فیصلہ، سوشل میڈیا پر ردعمل

پاکستانی سپریم کورٹ نے آج پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان اور پارٹی کے جنرل سیکریٹری جہانگیر ترین کی نااہلی کے لیے دائر درخواستوں پر فیصلہ سنایا۔ اس کے مطابق عمران خان اہل اور جہانگیر ترین نا اہل قرار دیئے گئے۔

سپریم کورٹ کی جانب سے اس معاملے پر فیصلہ سنائے جانے کا بے صبری سے انتظار کیا جا رہا تھا۔ اور آج اس انتظار کے اختتام پر پاکستان میں ہر طبقے اور شعبے سے تعلق رکھنے والے افراد اپنی رائے کا اظہار کرنے میں سوشل میڈیا کا سہارا لے رہے ہیں۔

فیصلہ آنے کے بعد سے سوشل میڈیا پر ہیش ٹیگ کے ساتھ عمران خان، جہانگیر ترین اور سپریم کورٹ ٹاپ ٹرینڈنگ موضوعاعات ہیں۔

تا حیات نا اہل قرار دیے جانے والے جہانگیر ترین اپنی ٹوئیٹ میں کہتے ہیں کہ انہوں نے اپنی پوری طاقت سے پاکستان اور تحریک انصاف کی بہتری کے لیے کام کیا ہے۔

Indien PTI head Imran Khan and the woman is Firdaus Ashiq Awan (twitter.com/PTIofficial)

عمران خان کے دائیں جانب جہانگیر ترین بیٹھے ہوئے ہیں

پی ٹی آئی کے رہمنا اسد عمر اپنی ٹوئیٹ میں لکھتے ہیں کہ وہ جہانگیر ترین کے خلاف اس فیصلے پر افسردہ ہیں۔

پاکستان عوامی تحریک کے قائد ڈاکٹرطاہر القادری کے آفیشل ٹوئیٹر پیج پر اِس فیصلے کے حوالے سے عمران خان کو مبارکباد پیش کی۔

مریم نواز آج کے فیصلے کے حوالے سے ٹوئیٹ کرتی ہیں،

پاکستانی صحافی اور اپنے خیالات کا کھل کر اظہار کرنےوالی ماروی سرمد اپنی ٹوئیٹ میں لکھتی ہیں کہ جہانگر ترین کے خلاف سپریم کورٹ کا فیصلہ عارضی محسوس ہوتا ہے۔

پاکستانی ٹیلی وژن کی معروف شخصیت اور تحریک انصاف سے منسلک سینئیر ایڈوکیٹ نعیم بخاری نے سپریم کورٹ کے اس فیصلے پر جمائما خان کا شکریہ ادا کیا۔

 

اشتہار