1. مواد پر جائیں
  2. مینیو پر جائیں
  3. ڈی ڈبلیو کی مزید سائٹس دیکھیں
Proteste gegen COVID-19-Maßnahmen in Xinjiang
تصویر: Video Obtained via REUTERS

سنکیانگ میں غیر معمولی مظاہروں کے بعد لاک ڈاؤن میں نرمی

26 نومبر 2022

لاکھوں چینی سوشل میڈیا صارفین نے حکومت کی سخت گیر زیرو کووڈ پالیسی کا مزاق اڑاتے ہوئے، حکومتی کارکردگی پر سوالات اٹھائے۔ ارمچی میں حکام نے فاتحانہ طور پر کچھ علاقوں میں وائرس کے پھیلاؤ پر قابو پانے کا اعلان کیا ہے۔

https://p.dw.com/p/4K7Kc

چین کے مغربی صوبے سنکیانگ میں  مقامی حکام نے کووڈ لاک ڈاؤن کے خلاف غیر معمولی مظاہروں کے بعد صوبائی دارالحکومت ارمچی میں کچھ محلوں کو کھول دیا ہے۔ یہ مظاہرے چینی حکومت کی  زیرو کووڈ پالیسی کے تحت گزشتہ تین ماہ سے زائد عرصے سے جاری سخت ترین لاک ڈاؤن کے خلاف جمعے رات دیر گئے کیے گئے تھے۔
مظاہرین  لاک ڈاؤن کے دوران ایک رہائشی عمارت میں آتش زدگی کے واقعے میں ہلاکتوں کے بعد سخت ناراض تھے۔  آتش زدگی کے اس واقعے میں کم ازکم دس افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ جمعے کے روز مظاہرین وہاں موجود محافظوں پر چیختے چلاتے رہے۔

Proteste gegen COVID-19-Maßnahmen in Xinjiang
جمعے کے روز مظاہرین وہاں موجود سرکاری محافظوں پر چیختے چلاتے رہےتصویر: Video Obtained via REUTERS

جمعے کی رات چینی سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ویڈیوز کے مطابق سڑک پر چلتے ہجوم نے ’لاک ڈاؤن ختم کرو!‘ کے نعرے لگائے۔ نيوز ايجنسی روئٹرز نے تصدیق کی کہ یہ فوٹیج سنکیانگ کے دارالحکومت ارمچی سے شائع ہوئی تھی۔ ویڈیوز میں ایک پلازہ میں جمع لوگوں کو چین کے قومی ترانے کے بول ’اُٹھو، وہ لوگ جو غلام بننے سے انکار کرتے ہیں!‘ گاتے ہوئے جب کہ دوسروں کو چیخ چیخ کر لاک ڈاؤن سے رہائی کے نعرے لگاتے ہوئے دکھایا گیا۔

لاک ڈاؤن میں نرمی

اس صورتحال کے بعد مقامی حکام نے ہفتے کو اعلان کیا کہ کم خطرے والے علاقوں کے رہائشیوں کو ان کے محلوں میں آزادانہ طور پر نقل و حرکت کی اجازت ہوگی۔ لیکن ابھی بھی بہت سے دوسرے محلے لاک ڈاؤن میں ہی ہیں۔ چینی عہدیداروں نے فاتحانہ طور پر یہ اعلان کیا کہ انہوں نے بنیادی طور پر زیرو کووڈ پالیسی کا سماجی ہدف حاصل کر لیا ہے، اس کا مطلب یہ ہے کہ کمیونٹی میں کورونا مزید نہیں پھیل رہا اور نئے انفیکشن  صرف ان لوگوں میں پائے جا رہے ہیں جو پہلے سے صحت کی نگرانی کے لیے قرنطینہ کی ایک مرکزی سہولت میں ہیں۔

سوشل میڈیا پر ردعمل 

سوشل میڈیا صارفین نے لاک ڈاؤن میں نرمی کی اس خبر کا بے اعتنائی اور طنز کے ساتھ خیر مقدم کیا۔ ویبو پر ایک صارف نے لکھا، ’’صرف چین ہی اس رفتار کو حاصل کر سکتا ہے۔‘‘ چینی سوشل میڈیا پر ٹرینڈ کرنے والے موضوعات کو حکام عام طور پر سینسر کر دیتے ہیں اس کے باجود  ’زیرو کووڈ‘ کا اعلان ویبو، ٹویٹر جیسے پلیٹ فارم اور ٹک ٹاک کے چینی ورژن ڈوئین، دونوں پر نمبر ون ٹرینڈنگ ہیش ٹیگ تھا۔
رہائشی عمارت میں آگ اور مظاہرے نے عوام کا غصہ دو آتشہ کر دیا، کیونکہ لاکھوں سوشل میڈیا صارفین  نے چین کے وبائی امراض کے کنٹرول پر سوال اٹھانے والی پوسٹیں شیئر کیں یا ملک کے سخت پروپیگنڈے اور سخت سنسرشپ کنٹرولز کا مزاق اڑایا۔

Thailand APEC 2022 Gipfel in Bangkok - Xi Jinping
چینی حکام صدرشی جن پنگ کی دستخط شدہ زیرو کووڈ پالیسی کا بھر پور دفاع کرتے ہیںتصویر: Rungroj Yongrit/REUTERS

چین نے سنکیانگ کے وسیع علاقے میں ملک کا سب سے طویل لاک ڈاؤن نافذ کر رکھا ہے۔ ارمچی کے 40 لاکھ باشندوں میں سے بہت سے لوگوں کو 100 دنوں تک اپنے گھروں سے باہر نکلنےسے روک دیا گیا ہے۔ شہر میں پچھلے دو دنوں میں کورونا وائرس کے تقریباً 100 نئے کیسز رپورٹ ہوئے۔
سنکیانگ ميں تقريباً  10 ملین ایغور مسلمان بھی آباد ہيں۔ انسانی حقوق کی تنظیمیں اور مغربی حکومتیں طویل عرصے سے بیجنگ پر اس مسلم نسلی اقلیت کے خلاف بدسلوکی کا الزام لگاتی رہی ہیں۔ ان الزامات میں ایغور باشندوں سے حراستی کیمپوں میں جبری مشقت لینا بھی شامل ہے۔ چین ایسے دعووں کو سختی سے مسترد کرتا ہے۔

آتشزدگی پر رد عمل

ارمچی کی ایک رہائشی عمارت میں آتشزدگی سے دس افراد کی ہلاکت ایک ہفتے میں اس نوعیت کا دوسرا واقعہ تھا۔ مقامی حکام کے مطابق  آگ لگنے کے بعد عمارت کے مکین نیچے جانے میں کامیاب ہو گئے تھے۔ تاہم چینی سوشل میڈیا پر شیئر کی گئی  ہنگامی عملے کی کوششوں کی ویڈیوز نے بہت سے انٹرنیٹ صارفین کو یہ سوچنے پر مجبور کیا کہ عمارت جزوی طور پر بند ہونے کی وجہ سے رہائشی بروقت وہاں سے باہر نہیں نکل سکے۔

Proteste gegen COVID-19-Maßnahmen in Xinjiang
کووڈ سے بچاؤ کےحفاظتی لباس پہنے چینی اہلکار صدر شی کی زیرو کووڈ پالیسی کے نفاذ کو یقینی بنانے کے لیے ہمہ وقت موجود رہتے ہیںتصویر: Video Obtained via REUTERS

ارمچی  کے عہدیداروں نے ہفتے کو علی الصبح اچانک ایک نیوز کانفرنس میں اس بات کی تردید کی تھی کہ کووڈ انیس سے بچاؤ کے اقدامات سے فرار اور بچاؤ میں رکاوٹ پیدا ہوئی ہے لیکن انہوں نے اس بارے میں مزید تحقیقات کرنے کی یقین دہانی کرائی۔ ایک اہلکار کا کہنا تھا کہ اگر عمارت کے رہائشی آگ سےحفاظت کا طریقہ بہتر طور پر سمجھ لیتے تو وہ بچ سکتے تھے۔

'متاثرین پر الزام لگائیں'

شکاگو یونیورسٹی کے ماہر سیاسیات ڈالی یانگ نے کہا کہ اس طرح 'متاثرہ کو الزام دینے‘ کا رویہ لوگوں کو غصہ دلائے گا، 'اس سے صرف عوامی اعتماد  میں کمی آئے گی ۔‘ چین کےسماجی رابطے کے پلیٹ فارم  ویبو کے صارفین نے اس واقعے کو ایک المیہ قرار دیا جو چین کی جانب سے اپنی زیرو کووڈ پالیسی پر قائم رہنے کے اصرار سے پیدا ہوا اور جو کسی کے ساتھ بھی ہو سکتا ہے۔

چین نے صدرشی جن پنگ کی دستخط شدہ زیرو کووڈ پالیسی کا دفاع کرتے ہوئے اسے زندگی بچانے اور صحت کی دیکھ بھال کے نظام کودباؤ سے بچانے کے لیے ضروری قرار دیا ہے۔ عہدیداروں نے عوام کے بڑھتے ہوئے رد عمل اور اس پالیسی کے دنیا کی دوسری سب سے بڑی معیشت کو ہونے والے نقصان کے باوجود اسے جاری رکھنے کا عزم ظاہر کیا ہے۔

جب کہ ملک نے حال ہی میں اپنے اقدامات میں تبدیلی کرتے ہوئے قرنطینہ کو مختصر کیا اور دیگر اہدافی اقدامات کیے، اس کے ساتھ ساتھ بڑھتے ہوئے کیسز نے بیجنگ سمیت بڑے شہروں میں بڑے پیمانے پر الجھن اور غیر یقینی صورتحال پیدا کردی ہے، جہاں بہت سے رہائشی گھروں میں بند ہیں۔ چین میں یومیہ پینتیس ہزار مقامی کیسز ریکارڈ کیے جاتے ہیں، جو عالمی معیار کے لحاظ سے کم ہیں۔ تاہم متعدد شہروں میں انفیکشن پھیلنے کے وجہ سے بڑے پیمانے پر لاک ڈاؤن کے ساتھ ساتھ نقل و حرکت اور کاروبار پر  پابندیاں عائد ہیں۔

چین کے سب سے زیادہ آبادی والے شہر اور مالیاتی مرکز شنگھائی نے ہفتے کے روز ثقافتی مقامات جیسے عجائب گھروں اور لائبریریوں میں داخلے کے لیے معائنے کی ضروریات کو سخت کر دیا۔  جس کے لیے لوگوں کو 48 گھنٹوں کے اندر منفی کووڈ ٹیسٹ پیش کرنے کی ضرورت ہے۔

ش ر ⁄ ا ب ا (روئٹرز)

ملتے جلتے موضوعات سیکشن پر جائیں

ملتے جلتے موضوعات

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ سیکشن پر جائیں

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ

Pakistan Eröffnung des neuen Parlaments 1. Juni 2013

شیخ رشید کی گرفتاری، ’سافٹ ویئر‘ اپ ڈیٹ کی کوشش؟

ڈی ڈبلیو کی مزید رپورٹیں سیکشن پر جائیں
ہوم پیج پر جائیں