1. مواد پر جائیں
  2. مینیو پر جائیں
  3. ڈی ڈبلیو کی مزید سائٹس دیکھیں
 Urban neighbourhood in New Delhi
تصویر: Abdul Rauoof Ganie/DW

بھارت: مسلمانوں کے لیے مکانوں کا حصول مشکل تر ہوتا ہوا

28 ستمبر 2022

بھارت کے شہروں میں کرایے پر مکان دینے یا فروخت کرنے میں تفریق کا مسئلہ کوئی نیا نہیں ہے لیکن ملک میں حالیہ برسوں کے دوران بڑھتی ہوئی مذہبی تفریق اور فرقہ پرستی کے سبب مسلمانوں کے لیے صورت حال مزید مشکل ہو گئی ہے۔

https://p.dw.com/p/4HRRY

عبدالرووف بھارت کے قومی دارالحکومت دہلی میں پچھلے دو ماہ سے کرایے کا مکان تلاش کر رہے ہیں لیکن انہیں ابھی تک کامیابی نہیں ملی ہے۔ تاہم یہ صرف دہلی یا عبدالرووف کی کہانی نہیں ہے۔ مسلمانوں کے لیے کسی مخلوط علاقے میں مکان حاصل کرنا جوئے شیر لانے سے کم نہیں ہے۔

اتوار کا دن ہے اور دوپہر کے بارہ بج رہے ہیں۔ دہلی کے مالویہ نگر محلے میں ایک پارک کے قریب کھڑے عبدالرووف گنائی کرایے پر مکان دلوانے والے ایک ایجنٹ کا انتظار کر رہے ہیں۔ 28 سالہ عبدالرووف جنوبی دہلی میں رہنے کے لیے کرایے پر ایک مکان تلاش کرنے کی پچھلے کئی ہفتوں سے کوشش کر رہے ہیں۔

بھارت: تشدد میں ملوث کا الزام، مسلمانوں کے درجنوں مکانات مسمار

بھارت میں اب آئس کریم اور مسلم ڈرائیور بھی شدت پسند ہندوؤں کے نشانے پر

ایجنٹ نے انہیں یقین دلایا ہے کہ آج فلیٹ مل ہی جائے گا۔ ایجنٹ آتا ہے اور عبدالرووف کو ساتھ لے کر قریب ہی واقع ایک مکان پر جاتا ہے۔ گھنٹی بجنے کے دو منٹ بعد مکان کا مالک خود دروازہ کھولتا ہے اور وہیں کھڑے کھڑے ابتدائی پوچھ گچھ شروع کر دیتا ہے۔ لیکن بات چیت زیادہ دیر تک نہیں چلتی کیونکہ عبدالرووف کا نام سنتے ہی مکان مالک پوچھتا ہے،"محمڈن ہو؟" اور جواب "ہاں" میں ملتے ہی جھٹ سے کہتا ہے "ہم محمڈنز کو مکان کرایے پر نہیں دیتے۔"

اس کے ساتھ ہی وہ ایجنٹ کو بھی ڈانٹ دیتا ہے کہ اس کے بارے میں وہ پہلے ہی بتا چکا تھا پھر بھی "ایک محمڈن" کو لے کر کیوں چلا آیا۔

ایجنٹ مکان مالک اور عبدالرووف دونوں سے معذرت کرتا ہے اور پھر عبدالرووف کو لے کر ایک اگلے مکان پر دستک دینے کے لیے بڑھ جاتا ہے۔ یکے بعد دیگر مختلف مکانات پردستک دینے میں چھٹی کا پورا دن گذر جاتا ہے لیکن عبدالرووف مکان تلاش کرنے کی مہم میں کامیاب نہیں ہو پاتے ہیں۔

مسلمانوں کے لیے کسی مخلوط علاقے میں مکان حاصل کرنا جوئے شیر لانے سے کم نہیں ہے
مسلمانوں کے لیے کسی مخلوط علاقے میں مکان حاصل کرنا جوئے شیر لانے سے کم نہیں ہےتصویر: Abdul Rauoof Ganie/DW

شرنارتھیوں کا محلہ

دہلی کا مالویہ نگر جنگ آزادی کے ایک رہنما مدن موہن مالویہ کے نام پر تقسیم ملک کے بعد پاکستان سے آئے شرنارتھیوں کو پناہ دینے کے لیے بسایا گیا تھا۔ یہاں کے بیشتر مکانات کا یہی پس منظر ہے۔ حکومت نے لوگوں کو تقریباً 100 گز کے پلاٹ دیے تھے جس پر انہوں نے دھیرے دھیرے تین اور چار منزلہ عمارتیں کھڑی کرلیں۔

بھارت میں اسلامو فوبیا کی لہر، عبادت گاہیں محفوظ نہیں

بھارتی ریاست آسام میں ایک اور اسلامی مدرسہ بلڈوز کر دیا گیا

تاہم سات دہائی قبل زمین کے جس ٹکڑے پر تقسیم وطن کے متاثرین کو پناہ ملی تھی اسی جگہ تعمیر مکانات آج اپنے ہی ملک کے شہریوں کے لیے دروازے کھولنے کو تیار نہیں ہیں۔

ایک تو مسلمان اس پر کشمیری

عبدالرووف میڈیا اسٹڈیز میں پی ایچ ڈی کر رہے ہیں اور دہلی میں ڈی ڈبلیو کے لیے ویڈیو جرنلسٹ کے طور پر کام کرتے ہیں۔ عام طور پر کرایے پر مکان دینے کے لیے کسی شخص کو خود کو معتبر ثابت کرنے کے لیے اتنا کافی ہونا چاہئے۔ لیکن اگر آپ مسلمان ہیں تو ایسا نہیں ہے۔

عبدالرووف گنائی کے ساتھ دوہرا مسئلہ ہے۔ وہ مسلمان ہونے کے ساتھ ساتھ کشمیری بھی ہیں اور بھارت کے شہروں میں مکان کرایے پر نہیں دینے کے لیے یہ ایک اور پیمانہ ہے۔

عبدالرووف کہتے ہیں کہ انہوں نے کئی برس قبل مسلمانوں کے خلاف اس طرح کی تفریق کے بارے میں صرف ٹوئٹر پر پڑھا تھا۔ لیکن انہیں یہ اندازہ نہیں تھا کہ ایک دن ان کے ساتھ بھی یہی سب کچھ ہوگا۔

انہیں سن 2018 میں پہلی مرتبہ حیدرآباد میں اس تفریق کا تجربہ ہوا، جب شہر کے ایک ہندو اکثریتی علاقے میں ایک مکان مالک نے ان سے صاف صاف کہہ دیا کہ وہ انہیں اپنا مکان کرایے پر نہیں دیں گے کیونکہ وہ مسلمان ہیں۔

عبدالرووف کہتے ہیں،"میں بہت ڈر گیا تھا۔ میں پہلی مرتبہ کشمیر سے باہر نکلا تھا اور یہ میری پہلی ملازمت تھی۔ ایک دن تو میں نے طے کرلیا کہ اگر آج شام تک کوئی مکان نہیں ملا تو میں شہر اور ملازمت دونوں چھوڑ کر واپس کشمیر چلا جاوں گا۔"

بہر حال خوش قسمتی سے ملازمت چھوڑنے کی نوبت نہیں آئی۔ انہوں نے حیدرآباد میں پہلے سے ہی مقیم کچھ کشمیریوں سے رابطہ کیا اور پھر ان کی مدد سے انہیں سر چھپانے کے لیے جگہ مل گئی۔

اس بات کو چار برس گزر چکے ہیں اور شہربھی تبدیل ہوچکا ہے لیکن عبدالرووف کے سامنے ایک بار پھر وہی مصیبت کھڑی ہوگئی ہے۔

کیا دہلی کیا ممبئی مذہبی تفریق کے سبب مسلمانوں کے لیے مکان حاصل کرنا ہر جگہ مشکل ہوتا جا رہا ہے
کیا دہلی کیا ممبئی مذہبی تفریق کے سبب مسلمانوں کے لیے مکان حاصل کرنا ہر جگہ مشکل ہوتا جا رہا ہےتصویر: Francis Mascarenhas/REUTERS

اب تو آنکھوں کا پانی بھی مرگیا ہے

عبدالرووف اس پریشانی کا سامنا کرنے والے واحد یا پہلے مسلمان نہیں ہیں۔ یہ سلسلہ عشروں سے جاری ہے اور شہروں میں کرایے پر مکان تلاش کرنے والے یا ملی جلی آبادی والے علاقوں میں مکان خریدنے والے ہر مسلمان کی یہی کہانی ہے۔ اس صورت حال پر کئی تحقیقات بھی کی جاچکی ہیں۔

'دی ہاوسنگ ڈسکریمینیشن پروجیکٹ' کے تحت قانون، سماجیات اور عمرانیات جیسے مختلف شعبوں سے وابستہ محققین نے 2017 سے 2019 کے درمیان دہلی اور ممبئی کے 14محلوں میں تقریباً 200 ایجنٹوں، 31 مکان مالکان اور تقریباً 100 مسلم کرایے داروں سے بات چیت کی تھی۔

سروے میں نہ صرف یہ بات ثابت ہوئی کہ یہ ایک بڑا مسئلہ ہے بلکہ یہ بات بھی سامنے آئی کہ کرایے پر مکان دلانے کے سسٹم میں کلیدی کردار ادا کرنے والے کاروباری ایجنٹوں میں سے بھی بہت سے اس طرح کی تفریق کرتے ہیں۔

بھارتی تاریخ میں پہلی مرتبہ حکومت میں ایک بھی مسلم وزیر نہیں

مصنف، فلم ساز اور اپنی 'ہیریٹیج واک' کے ذریعہ دہلی کی تاریخ سے لوگوں کو آگاہ کرانے والے سہیل ہاشمی بتاتے ہیں کہ انہیں اس تفریق کا سامنا پہلی مرتبہ 1980 کی دہائی میں ہوا تھا۔

وہ کہتے ہیں کہ فرق صرف اتنا ہوا ہے کہ اس وقت لوگوں کی 'نگاہوں میں شرم' تھی جس کی وجہ سے کوئی صاف صاف انکار نہیں کرتا تھا کہ مسلمان ہونے کی وجہ سے مکان نہیں دیا جائے گا۔

ہاشمی بتاتے ہیں کہ صاف صاف جواب دینے کے بجائے وہ،"آپ تو گوشت کھاتے ہوں گے" یا "ہم تو آ پ کو ہی مکان دینے والے تھے لیکن اچانک میرے بھائی نے نیویارک سے واپس لوٹنے کا فیصلہ کرلیا" جیسے بہانے بناکر مسلمانوں کو ٹال دیا کرتے تھے۔

تفریق کے مسئلے نے ہندو اور مسلمانوں کی الگ الگ بستیوں کو بھی بڑھاوا دیا ہے
تفریق کے مسئلے نے ہندو اور مسلمانوں کی الگ الگ بستیوں کو بھی بڑھاوا دیا ہےتصویر: Charu Kartikeya/DW

گھیٹوائزیشن کا سبب

اس مسئلے نے ہندو اور مسلمانوں کی الگ الگ بستیوں (گھیٹوائزیشن) کو بھی بڑھاوا دیا ہے۔

 اس مسئلے کا شکار ہوچکے سینیئر بھارتی صحافی مہتاب عالم کہتے ہیں،"آج آپ جن بستیوں کو مسلمانو ں سے جوڑ کر انہیں "مسلم گھیٹو'' کہتے ہیں وہ محلے تو اسی وجہ سے بسے ہیں کیونکہ ان مسلمانوں کو دوسری بستیوں میں رہنے والوں نے اپنے مکانات نہیں دیے۔ "

بہر حال جنوبی دہلی کے حوض خاص علاقے میں واقع اپنے دفتر کے قریب مکان تلاش کرتے کرتے عبدالرووف گنائی کو دو ماہ سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے لیکن وہ آج بھی دفتر سے دور اپنے ایک دوست کے مکان میں رہنے کے لیے مجبور ہیں۔

بھارت: کامیڈین منور فاروقی کو دہلی میں بھی شو کی اجازت نہیں

عبدالرووف نے تھک کر کچھ دنوں کی چھٹی لے لی ہے اور کشمیر جارہے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ واپس آنے کے بعد نئی جوش اور جذبے  سے مکان کی تلاش کا سلسلہ شروع کریں گے۔ دیکھئے کب تک کامیابی مل پاتی ہے۔

 چارو کارتیکیہ/ جاوید اختر

بھارت میں مسلمان ماہی گیروں کا عدالت سے موت کے حق کا مطالبہ

اس موضوع سے متعلق مزید سیکشن پر جائیں

اس موضوع سے متعلق مزید

ملتے جلتے موضوعات سیکشن پر جائیں

ملتے جلتے موضوعات

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ سیکشن پر جائیں

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ

Afghanistan | Bombenexplosion in Herat

افغانستان کے ایک مدرسے میں دھماکے سے متعدد طلبہ ہلاک

ڈی ڈبلیو کی مزید رپورٹیں سیکشن پر جائیں
ہوم پیج پر جائیں