1. مواد پر جائیں
  2. مینیو پر جائیں
  3. ڈی ڈبلیو کی مزید سائٹس دیکھیں
Afghanistan | Bildergalerie | Truppenabzug
تصویر: NOORULLAH SHIRZADA/AFP/Getty Images

افغان طالبان مزید ضلعوں پر قابض

12 جون 2021

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں زوردار دھماکا سنا گیا ہے۔ دوسری جانب طالبان عسکریت پسندوں نے مزید دو اضلاع پر کنٹرول حاصل کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

https://p.dw.com/p/3unyv

شورش زدہ ملک افغانستان میں طالبان عسکریت پسندوں کی مزید علاقوں پر بتدریج کنٹرول حاصل کرنے کا سلسلہ جاری ہے۔ ایک ضلعے کے انتظامی گورنر نے قبضہ مکمل ہونے پر خود کو طالبان کے سامنے پیش کر دیا۔ ان قبضوں کی تصدیق صوبائی پارلیمنٹیرین نے بھی کر دی ہے۔

طالبان سے متعلق بھارتی پالیسی میں بڑی تبدیلی

صوبہ غور کا ایک ضلع، طالبان کے ہاتھوں میں

مغربی افغان صوبے غور کے ایک ضلع تُولک پر طالبان کے قبضے کی تصدیق ہفتہ بارہ جون کو مقامی عمائدین اور شہریوں نے کی ہے۔ ان میں غور اسمبلی کے تین مقامی اراکین بھی شامل ہیں۔ جمعے اور ہفتے کی رات کے دوران حکومتی سکیورٹی فورسز اور عسکریت پسندوں کے درمیاں شدید جھڑپوں کا سلسلہ جاری رہا۔

Afghanistan | Konfliktregion in Nahost
افغانستان کی قومی فوج کو غیر ملکی افواج کے بتدریج انخلا سے مشکل حالات کا سامنا ہےتصویر: Reza Shirmohammadi/AFP/ Getty Images

ان جھڑپوں میں حکومت کی حامی فورسز کے ایک درجن سے زائد اہلکاروں کی ہلاکت بھی ہوئی۔ ہلاکتوں اور زخمیوں کی تصدیق غور اسمبلی کے رکن کرم الدین رضا زادہ نے نیوز ایجنسی ڈی پی اے کو ٹیلی فون پر گفتگو کرتے ہوئے کی۔ رضا زادہ نے ہی ہفتہ بارہ جون کو تُولک کے ضلعی گورنر اور ان کے تمام عملے نے بھی طالبان کے سامنے ہتھیار پھینک دینے کی اطلاع دی۔

افغانستان: طالبان کے حملوں میں حکومتی فورسز کی ہزیمت

شمالی صوبے بلخ کے ضلع زارا کا سقوط

شمالی افغان صوبے بلخ کے ایک ضلع زارا کے بارے بھی بتایا گیا ہے کہ طالبان عسکریت پسندوں نے اس کا کنٹرول سنبھال لیا ہے۔ اس ضلع کے مرکزی علاقے میں واقع حکومتی دفاتر میں سے ملازمین کو جبری طور پر باہر نکال دیا گیا۔ اس شہر کے ایک کونسلر افضل حدید نے یہ بھی بتایا کہ طالبان نے حکومتی سکیورٹی فورسز کو پانی کی سپلائی روک دی ہے۔

افضل حدید کے مطابق حکومت کے حامی فوجی دستوں نے بغیر لڑائی کے زارا شہر کا مرکز خالی کر دیا ہے۔ فوجیوں کو شہر سے نکلنے میں افغان ایئر فورس کے جنگی طیاروں نے بھی مدد کی۔ دوسری جانب افغان فوج کی 209 کور نے بتایا ہے کہ فوجیوں کو شہر سے نکال کر ایک اور اہم جگہ تعینات کیا گیا ہے۔ یہ تعیناتی ضلعی کونسل کی ہدایت پر کی گئی ہے۔

غیر ملکی افواج کی خدمات پر مامور افغان محفوظ رہیں گے: طالبان

طالبان کا قبضہ کرنے میں تیزی

حالیہ چند ہفتوں کے دوران افغانستان کے کئی علاقے طالبان عسکریت پسندوں کے کنٹرول میں چلے گئے ہیں۔ علاقوں پر قبضے میں شدت امریکی اور مغربی دفاعی اتحاد کی افواج کے انخلا کے اعلان کے بعد سے پیدا ہوئی ہے۔ رواں برس یکم مئی کے بعد اب تک سترہ اضلاع پر طالبان قبضہ کر چکے ہیں۔ غیر ملکی فوجوں کا انخلا اسی سال مکمل ہو جائے گا۔ افغانستان کے چونتیس صوبوں میں چار سو کے قریب اضلاع ہیں۔ اقوام متحدہ کے اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ برس جن پانچ اضلاع پر طالبان نے قبضہ کیا تھا، ان میں سے چار کو ملکی فوج نے آزاد کروا لیا تھا۔

Zerstörung Buddha-Statuen in Bamiyan | Taliban Milizen vor zerstörter Buddha Statue
افغان شہر بامیان میں کھڑے دو طالبان عسکریت پسندتصویر: Saeed Khan/dpa/picture alliance

تشدد کے سلسلے میں تسلسل

افغانستان کو ان دنوں شدید عدم استحکام کا سامنا ہے اور اس باعث سلامتی کی مجموعی صورت حال کمزور سے کمزور تر ہوتی جا رہی ہے۔ جمعہ گیارہ جون سے اب تک تیرہ سے زائد افراد کی ہلاکت کی اطلاعات ہیں، جن میں سات سویلین ہیں۔

طالبان کے'غیر معمولی تشدد‘ کا سلسلہ جاری رہے گا، رپورٹ

افغان وازرتِ داخلہ نے تصدیق کی ہے کہ ہزارہ آبادی کے علاقوں میں دو منی وینوں کو نشانہ بنایا گیا اور ان حملوں میں نصف درجن افراد زخمی ہوئے۔ کابل میں ایک زوردار دھماکے کی بھی اطلاع ہے لیکن اس بابت کوئی تفصیل سامنے نہیں آئی ہے۔

 ع ح/ع ت (ڈی پی اے)