افغانستان میں جنگی جرائم کا ارتکاب، تفتیش شروع کی جائے | معاشرہ | DW | 21.11.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

افغانستان میں جنگی جرائم کا ارتکاب، تفتیش شروع کی جائے

بین الاقوامی فوجداری عدالت کی پراسیکیوٹر نے افغانستان میں جنگی جرائم کے الزام کی تفتیش کرنے کی درخواست دی ہے۔ پراسیکیوٹر کے مطابق افغانستان میں امریکی فوجیوں پر بھی جنسی زیادتیوں کے الزامات عائد کیےگئے ہیں۔

انٹرنیشنل کریمینل کورٹ کی خاتون مستغیث فاتو بن سُودا نے اپنی عدالت سے اجازت طلب کی ہے کہ افغانستان میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی تفتیش کی جائے۔ بن سُودہ نے عدالت سے درخواست کی ہے کہ افغانستان میں امریکی فوجیوں اور خفیہ ادارے سی آئی اے کے ایجنٹوں پر جنسی زیادتی کے الزامات ہیں۔

افغان طالبان کے خلاف کارروائی میں مدد کر سکتا ہوں، امریکی جنرل

دو افغان صوبوں میں طالبان کے حملے، 37 سکیورٹی اہلکار ہلاک

کابل میں ٹی وی اسٹیشن پر حملہ، متعدد افراد ہلاک

افغانستان میں واٹس ایپ پر پابندی کا فیصلہ

بن سُودا نے عدالت میں پیش کی گئی اس درخواست میں طالبان عسکریت پسندوں کی مسلح سرگرمیوں کے حوالے سے بھی تفتیش کرنے کو اہم قرار دیا ہے۔ پراسیکیوٹر نے عدالت کی توجہ اس جانب مبذول کرائی ہے کہ طالبان پر الزام لگایا جاتا ہے کہ وہ انسانیت کے خلاف جرائم کے علاوہ جنگی جرائم کی مرتکب ہوئے ہیں۔ انہوں نے یہ بھی واضح کیا کہ اس تناظر میں طالبان انتہائی بے خوفی اور بے دھڑک ایسے پرتشدد واقعات کا ارتکاب کرتے چلے جا رہے ہیں۔

Internationaler Strafgerichtshof Fatou Bensouda und Luis Moreno-Ocampo (Bas Czerwinski/AFP/GettyImages))

بین الاقوامی فوجداری عدالت کی چیف پراسیکیوٹر فاتو بن سُودہ

امریکی وزارت خارجہ نے فاتو بن سُودہ کی درخواست پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس کے قانونی پہلووں کا جائزہ لینے کے بعد ہی کوئی حتمی موقف اختیارکیا جائے گا۔ وزارت خارجہ کا یہ بھی کہنا ہے کہ کسی بھی امریکی فوجی کے خلاف تفتیشی عمل شروع کرنے کو یقینی طور پر منصفانہ فعل نہیں قرار دیا جا سکتا۔

امریکی وزارت خارجہ نے اپنے اس بیان میں جہاں انٹرنیشنل کریمینل کورٹ کی جانب سے افغانستان کے اندر رونما ہونے والے واقعات کو اپنے دائرے میں لینے کی مخالفت کی ہے وہاں یہ بھی کہا ہے کہ ایسا کرنے سے افغانستان میں انصاف کے حصول یا امن قائم کرنے کے تقاضے پورے نہیں ہوں گے۔

امریکا انٹرنیشنل کریمینل کورٹ کا رکن ملک نہیں ہے۔ اندازہ لگایا گیا ہے کہ افریقی ملک گیمبیا سے تعلق رکھنے والی انسانی حقوق کی وکیل بن سودہ کی درخواست پر امریکا اور عالمی فوجداری عدالت کے درمیان ٹھن سکتی ہے۔ یہ امر اہم ہے کہ عالمی فوجداری عدالت کسی غیر ملک میں کسی امریکی شہری پر جنسی زیادتی یا جنگی و انسانیت کے خلاف جرم کا ارتکاب کرنے کا الزام لگا کر تفتیشی عمل شروع کرا سکتی ہے۔

DW.COM

اشتہار