یورپی عدالت کی طرف سے پولینڈ کو ایک ملین یورو روزانہ جرمانہ | حالات حاضرہ | DW | 27.10.2021
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

یورپی عدالت کی طرف سے پولینڈ کو ایک ملین یورو روزانہ جرمانہ

یورپی عدالت انصاف نے پولینڈ کو اپنے ہاں قانون کی بالا دستی کی نفی کرنے پر روزانہ ایک ملین یورو جرمانے کی سزا سنا دی ہے۔ یہ حکم ایسے مقدمے میں سنایا گیا، جس کی وجہ پولش سپریم کورٹ میں قائم ججوں کے لیے تادیبی چیمبر بنا۔

پولینڈ میں متنازعہ قانونی اصلاحات کے خلاف اور یورپی یونین کے حق میں مظاہرہ کرنے والے عام شہری

پولینڈ میں متنازعہ قانونی اصلاحات کے خلاف اور یورپی یونین کے حق میں مظاہرہ کرنے والے عام شہری

پولینڈ کے دارالحکومت وارسا سے بدھ ستائیس اکتوبر کو موصولہ رپورٹوں کے مطابق یورپی یونین کی اعلیٰ ترین عدالت نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ وارسا حکومت نے ملکی سپریم کورٹ کے ججوں کے خلاف تادیبی کارروائی کے لیے اسی عدالت عظمیٰ میں جو خصوصی چیمبر قائم کر رکھا ہے، وہ یونین کے رکن اس ملک میں قانون کی بالا دستی کے ضوابط کے صریحاﹰ منافی ہے۔

پولینڈ: شہریوں کی اجتماع کی آزادی کو ’شدید خطرہ‘، ایمنسٹی

یورپی یونین کی عدالت انصاف یا CJEU نے وارسا حکومت سے کہا تھا کہ وہ پولش سپریم کورٹ میں ججوں کے لیے بنائے گئے تادیبی چیمبر کو معطل کرے۔ لیکن وارسا نے ایسا نہ کیا۔ اسی لیے اب اس معاملے میں اپنا فیصلہ سناتے ہوئے یورپی عدالت نے پولینڈ کو روزانہ ایک ملین یورو (1.16 ملین ڈالر) کے حساب سے جرمانہ کر دیا ہے۔

وارسا اور برسلز کے مابین تصادم کا ماحول

یورپی یونین کا ایک بنیادی اصول یہ ہے کہ کئی کلیدی معاملات میں اس بلاک کے رکن ممالک یورپی قوانین اور فیصلوں پر عمل درآمد کے پابند ہوتے ہیں۔ پولینڈ میں گزشتہ چند برسوں سے حکمرانوں کی سیاسی سوچ اور یونین سے متعلق ان کے رویوں کے باعث دیکھنے میں آیا ہے کہ وارسا حکومت بہت سے معاملات میں اپنی من مانی کرتی ہے، حالانکہ اس کے کئی اقدامات یورپی معیارات کے منافی ہوتے ہیں۔

EuGH Youtube | ECJ to rule on Schremps against Facebook

لکسمبرگ میں قائم یورپی یونین کی عدالت انصاف

اسی پس منظر میں وارسا اور برسلز کے مابین تعلقات نہ صرف کئی حوالوں سے کھچاؤ کا شکار ہیں بلکہ مستقبل میں ان میں مزید پیچیدگیاں پیدا ہونے کا بھی قوی خدشہ ہے۔

پولینڈ میں متنازعہ عدالتی اصلاحات

یورپی یونین کی ایک بنیاد قانون کی بالا دستی کو تسلیم کرنا بھی ہے۔ مطلب یہ کہ اس بلاک میں عدالیہ کو ہر حوالے سے قطعی آزاد اور خود مختار ہونا چاہیے۔ لیکن وارسا حکومت نے گزشتہ کچھ عرصے سے ملکی عدلیہ میں جو متنازعہ اصلاحات متعارف کرائی ہیں، یورپی یونین کا الزام ہے کہ ان سے پولستانی عدلیہ کی خود مختاری متاثر ہوئی ہے۔

عدالتی اصلاحات کے قانون کو ویٹو کر دوں گا، پولستانی صدر

اس بارے میں وارسا اور برسلز کے اختلافات اس سال اور بھی شدید ہو گئے اور اب یورپی عدالت انصاف نے اپنا فیصلہ سناتے ہوئے اس تنازعے میں یونین کو حق بجانب اور پولستانی حکومت کو غلط ثابت کر دیا ہے۔

وارسا نے اپنا وعدہ پورا نہ کیا

پولینڈ اپنی آبادی اور معیشت کے حجم کے حوالے سے یورپی یونین کی رکن سب سے بڑی مشرقی یورپی ریاست ہے۔ یورپی عدالت انصاف کے مطابق وارسا حکومت کو ملکی سپریم کورٹ میں قائم کردہ وہ تادیبی چیمبر لازمی طور پر معطل کرنا چاہیے، جس کے ذریعے ججوں کو انتقامی کارروائی کا نشانہ بنایا جا سکتا ہے اور ملک کی اعلیٰ ترین عدالت کی خود مختاری بھی متاثر ہو رہی ہے۔

Polen Bogatynia | Kohleabbau in Turow

پولینڈ میں کان کنی کا وہ متنازعہ منصوبہ جس کی وجہ سے وارسا کو پانچ لاکھ یورو روزانہ جرمانہ کیا گیا

ماضی قریب میں وارسا حکومت کی طرف سے یونین کو بتایا گیا تھا کہ پولش سپریم کورٹ کا متنازعہ چیمبر ختم کر دیا جائے گا مگر ایسا ملک میں جامع اور وسیع تر اصلاحات کے دوران کیا جائے گا۔ اس وعدے کے باوجود کافی عرصے بعد تک وارسا حکومت نے ایسا نہ کیا اور اب یورپی عدالت انصاف نے اپنا فیصلہ سنا دیا ہے۔

یورپی عدالت انصاف کا بیان

CJEU کے جاری کردہ ایک بیان میں بدھ ستائیس اکتوبر کے روز کہا گیا، ''آج سنائے جانے والے اپنے فیصلے میں اس عدالت کے نائب سربراہ نے حکم دیا کہ پولینڈ روزانہ ایک ملین یورو جرمانہ ادا کرے۔ اس جرمانے کی ادائیگی اس تاریخ سے شروع ہو گی، جس دن اس عدالت نے وارسا کو اپنے فیصلے سے آگاہ کیا تھا۔‘‘

پولینڈ کی دستوری اصلاحات، عوام ناراض، یورپی یونین کی وارننگ

پولینڈ کے نائب وزیر انصاف سباستیان کالیٹا نے اس عدالتی فیصلے پر اپنے رد عمل میں غصے کا اظہار کیا اور کہا کہ پولینڈ کے بارے میں ''سزاؤں اور بلیک میلنگ کا راستہ درست راستہ نہیں ہے۔‘‘

ماضی میں بھی پولینڈ کو جرمانہ کیا گیا

یورپی عدالت انصاف کی طرف سے یہ پہلا موقع نہیں ہے کہ اس کورٹ نے پولینڈ کو جرمانہ کیا ہے۔ اس سے قبل بھی یہ عدالت وارسا کو پانچ لاکھ یورو روزانہ کے حساب سے جرمانے کی سزا سنا چکی ہے۔

پولش سپریم کورٹ پر سیاستدانوں کا کنٹرول، متنازعہ قانون منظور

اس جرمانے کی وجہ اسی عدالت کے اس فیصلے پر عمل درآمد نہ کرنا تھا، جو یورپی عدالت نے چیک جمہوریہ کے ساتھ سرحد کے قریب تُوروف کے مقام پر کوئلے کی کان کنی سے متعلق ایک مقدمے میں سنایا تھا۔

اس وقت بھی پولینڈ کی حکومت نے اپنے ردعمل میں کہا تھا کہ وہ چیک جہوریہ کے ساتھ سرحد کے قریب کان کنی جاری رکھے گی اور پانچ لاکھ یورو روزانہ جرمانہ بھی ادا نہیں کرے گی۔

م م / ع ح (روئٹرز، اے ایف پی)