ہٹلر میں سیاسی بصیرت تھی، کرشمہ سازی نہیں: نئی جرمن کتاب | معاشرہ | DW | 07.11.2015
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

ہٹلر میں سیاسی بصیرت تھی، کرشمہ سازی نہیں: نئی جرمن کتاب

لگتا ہے کہ جرمن مؤرخ پیٹر لونگیرِش کی نئی تصنیف نازی آمر اڈولف ہٹلر کی سوانح عمری ایک متنازعہ کتاب ثابت ہو گی کیوں کہ اس میں ہٹلر کو کرشمہ سازی سے تو محروم لیکن سیاسی بصیرت کا حامل قرار دیا گیا ہے۔

اس نئی سوانح عمری میں کہا گیا ہے کہ ہٹلر ایک مخصوص سیاسی بصیرت رکھتا تھا اور اس کی اس صلاحیت کو اب تک اصل سے کم سمجھا گیا ہے جب کہ دوسری طرف اس دور کے جرمن عوام پر اس کی جذباتی گرفت کو بڑھا چڑھا کر پیش کیا گیا ہے۔

پیٹر لونگیرِش کی یہ کتاب ’ہٹلر‘ پیر نو نومبر کے روز شائع ہو رہی ہے اور اس 1295 صفحات پر مبنی کتاب میں نازی دور کے پروپیگنڈا سربراہ جوزف گوئبلز کی ڈائریوں اور ہٹلر کی تقاریر کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

اس حوالے سے روئٹرز کے ساتھ اپنے ایک انٹرویو میں لونگیرِش نے کہا، ’’مجموعی طور پر آپ کے دماغ میں ایک آمر کی تصویر ہے، جس کی گرفت انتہائی زیادہ تھی، جو انفرادی فیصلوں میں ہماری اب تک کی سوچ سے زیادہ شامل تھا۔ میں اس تصویر میں ہٹلر کو بطور شخصیت درمیان میں رکھنا چاہتا ہوں۔‘‘

لونگیرِش کی اس نئی تصنیف میں نازی تحریک ابھرنے کے پس پردہ سیاسی اور سماجی ماحول پر زور دیا گیا ہے اور اس میں کہا گیا ہے کہ نازی تحریک کی مقبولیت کی بنیادی وجہ پہلی عالمی جنگ میں جرمنوں کی شکست اور ان پر پڑنے والا مطالبات اور محصولات کا دباؤ بنا۔

تاہم دوسری عالمی جنگ کے بعد جرمنوں کو یہ سمجھنے میں زیادہ دیر نہ لگی کہ وہ ایک مجرم گروہ کے شکنجے میں پھنسے ہوئے تھے اور اس گروہ کا سرغنہ اڈولف ہٹلر تھا، جس کی بظاہر کرشماتی ذات کے جھانسے میں وہ یورپ کو فتح کرنے کی کوشش اور یہودیوں کے قتل عام میں ملوث رہے۔

اپنی اس کتاب میں لندن یونیورسٹی کے پروفیسر اور جرمن مؤرخ لونگیرِش یہ دلیل دیتے ہیں کہ ایک طرف تو ہٹلر کی پالیسیوں کے تباہ کن نتائج نکلے تاہم مخصوص حالات میں اس نے نہایت ذہانت سے بھی کام لیا، ’’اس سوال کی وضاحت کہ وہ کس طرح اس حد تک آگے پہنچ گیا تھا، ابھی جواب طلب ہے۔ لیکن ظاہر ہے کہ اس میں یہ صلاحیت موجود تھی کہ وہ مخصوص صورت حال کو اپنے مفاد اور مقاصد کے حصول کے لیے استعمال کر سکتا تھا۔‘‘

پیٹر لونگیرِش کے مطابق ہٹلر کی نسلی منافرت کی پالیسیاں، جن کے نتیجے میں کم از کم چھ ملین یہودی مارے گئے، زیادہ تر اس کی سیاسی موقع پرستی کی آئینہ دار تھیں۔ لونگیرِش کا خیال ہےکہ ہٹلر اپنی ابتدائی عمر میں بہت زیادہ یہودی مخالف نہیں تھا، ’’سن 1919 تا 1920 اس نے سوچا کہ وہ سیاست میں صرف اسی صورت میں کامیاب ہو سکتا ہے کہ وہ یہودیوں کے خلاف نفرت کا پرچار کرے۔‘‘ تاہم لونگیرِش کہتے ہیں کہ ہٹلر کو اسے نکتے کو اپنی سیاست کا مرکز بنانے میں ایک عشرہ لگا۔

اشتہار