کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے ویکسین کے بجائے اب گولی، برطانیہ میں استعمال کی اجازت | صحت | DW | 04.11.2021
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

صحت

کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے ویکسین کے بجائے اب گولی، برطانیہ میں استعمال کی اجازت

برطانیہ میں کووڈ انیس کے خلاف امریکی دوا ساز ادارے مَیرک کی تیار کردہ گولی کے استعمال کی اجازت دے دی گئی ہے۔ یہ اجازت فی الحال مشروط طور پر دی گئی ہے اور یہ گولی اٹھارہ برس اور اس سے زیادہ عمر کے افراد کو دی جا سکے گی۔

مَیرک کی تیار کردہ یہ گولی کورونا وائرس سے لگنے والی بیماری کے علاج کے لیے پہلی دوا ہے، جو منہ سے کھائی جا سکے گی۔ ابھی تک اس بیماری کے لیے مدافعتی ویکسین ہی دی جا رہی ہے۔ اس طرح برطانیہ وہ پہلا ملک ہے، جہاں اس نئی دوائی کا باقاعدہ استعمال شروع کیا جائے گا۔

کورونا سے بچاؤ کی گولی زير آزمائش، ابتدائی نتائج حوصلہ بخش

ابھی یہ واضح نہیں کہ مَیرک فارماسوٹیکل کمپنی کی جانب سے برطانیہ کو ان ٹیبلٹس کی فراہمی کا سلسلہ کب شروع کیا جائے گا۔

بہت بڑی پیش رفت

مَیرک کمپنی کی اس دوائی کا نام مولنوپیراویر (Molnupiravir) رکھا گيا ہے۔ طبی ماہرین نے کورونا وائرس کے بچاؤ کے ليے تیار کردہ اس گولی کی صورت میں نئی دوا کو حیران کن اور اہم 'بریک تھرو‘ قرار دیا ہے۔ مَیرک نے امریکی ریگولیٹرز کو بھی اس دوائی کے استعمال کی اجازت کے لیے درخواست دے رکھی ہے۔ اب تک کے ٹرائل ميں سامنے آنے والے نتائج کو ماہرین نے شاندار قرار دیا ہے۔

Coronavirus | Experimentelles Medikament Molnupiravir

مَیرک کمپنی کی اس دوائی کا نام مولنوپیراویر (Molnupiravir) رکھا گيا ہے

کئی ماہرین کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس دوائی کو حقیقت میں اس بیماری کا درست علاج قرار دیا جا سکتا ہے۔ یہ گولیوں کی صورت میں ہے اور پانچ دن استعمال کرنا پڑا کرے گی۔ ماہر معالجین کے مطابق اس کا استعمال مریض کو بیماری سے شفا دے گا اور یوں اس کی زندگی بچائی جا سکے گی۔

سویڈن، ڈنمارک اور نیدرلینڈز میں کورونا پابندیاں تقریباﹰ ختم

دو رخی علاج

کووڈ انیس کے لیے پہلے سے ویکسین دریافت کی جا چکی ہے اور دنیا کے مختلف ممالک میں انسانوں کو اس کے انجیکشن لگائے جا رہے ہیں۔ یہ ویکسین کئی ممالک نے تیار کی ہے اور ان میں روس، چین، بھارت، امریکا اور جرمنی بھی شامل ہیں۔ اب لیکن اس وائرس کے انسداد کی دوائی گولیوں کی صورت میں دستیاب ہو گئی ہے۔

ادویات کی نگرانی کرنے والے امریکی ادارے فوڈ اور ڈرگز ایڈمنسٹریشن کو بھی مَیرک نے اس دوا کی منظوری کی درخواست دے رکھی ہے۔ اس امریکی ادارے نے کہا ہے کہ اس کے ماہرین کا ایک پینل جلد ہی طلب کیا جانے والا ہے اور وہی اس دوا کے باضابطہ استعمال کی اجازت دے گا۔

Neues Corona-Medikament von US-Pharmakonzern Merck

مولنوپیراویر (Molnupiravir) نامی دوا امریکی دوا ساز ادارے مَیرک کی تیار کردہ ہے

گولیوں کی پروڈکشن

مَیرک نے دعویٰ کر رکھا ہے کہ یہ کمپنی اس دوائی کی رواں برس کے اختتام تک دس ملین خوراکیں تیار کر سکتی ہے۔ اس ادارے نے یہ بھی بتایا ہے کہ ان گولیوں کی زیادہ تر مقدار کئی حکومتوں نے پہلے ہی خرید رکھی ہے۔

اکتوبر میں برطانوی حکومتی ذرائع نے بتایا تھا کہ ملکی محکمہ صحت نے پانچ لاکھ کے قریب گولیوں کے کورسز کو محفوظ کر لیا ہے۔ اسی تناظر میں مَیرک کی گولیوں کی منظوری کے حوالے سے برطانوی وزیر صحت ساجد جاوید کا کہنا ہے کہ یہ ایک تاریخی دن ہے کہ برطانیہ دنیا کا وہ پہلا ملک ہے جہاں کورونا وائرس کی خلاف یہ دوائی استعمال کرنے کی اجازت دی گئی ہے اور اب عام صارفین یہ دوائی گھر بیٹھے ہی استعمال کر سکیں گے۔

کورونا کا بُوسٹر: دوا ساز اداروں پر سونے چاندی کی برسات

کئی طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ اس دوائی کا استعمال یقینی طور پر ایسے افراد کے لیے زیادہ مناسب رہے گا، جن پر کورونا ویکسین کا اثر کم رہا ہو۔

USA Zulassung des Corona-Impfstoffs von Biontech-Pfizer für fünf- bis elfjährige Kinder

مَیرک کی گولیوں سے قبل کووڈ انیس بیماری کی روک تھام ویکسین سے کی جا رہی تھی

مَیرک اور اس کے پارٹنر ادارے رِج بیک بائیوتھیراپیوٹک (Ridgeback Biotherapeutic) نے دنیا کے مختلف ممالک کی حکومتوں سے اس دوائی کی منظوری اور باقاعدہ استعمال کے اجازت ناموں کی درخواست کی ہے۔ اس دوائی کے حتمی ٹرائلز کے نتائج کا اعلان مَیرک نے گزشتہ ماہ اکتوبر میں کیا تھا۔

ع ح / م م (اے پی، اے ایف پی)