کشمیر میں ’قتل عام‘ ہو سکتا ہے، عمران خان | حالات حاضرہ | DW | 27.09.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

کشمیر میں ’قتل عام‘ ہو سکتا ہے، عمران خان

عمران خان نے جنرل اسمبلی سے خطاب میں کہا کہ بھارت کے زیرانتظام کشمیر میں ’قتل عام‘ ہو سکتا ہے۔ انہوں نے عالمی برادری کو کسی ایٹمی طاقت کی طرف سے آخر تک لڑی جانے والی جنگ کے نتائج سے بھی خبردار کیا۔

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس ميں پاکستانی وزير اعظم عمران خان نے اپنے جذباتی خطاب ميں اسلاموفوبيا، عالمی سطح پر دہشت گردی، افغان جنگ اور کشمير ميں بھارتی اقدامات سميت کئی اہم عالمی امور پر گفتگو کی۔  عمران خان نے جنرل اسمبلی سے اپنی تقرير ميں بالخصوص اسلاموفوبيا اور مسئلہ کشمير پر اپنی توجہ مرکوز رکھی۔ انہوں نے عالمی برادری سے اپيل کی کہ اقوام متحدہ کا قيام اس ليے عمل ميں آيا تھا کہ اگر دو ملکوں کے مابين کسی معاملے پر تنازعہ ہو، تو يہ عالمی تنظيم اس کا حل تلاش کرنے ميں معاونت فراہم کرے۔ اپنی تقرير ميں عمران خان نے بھارتی وزيراعظم نريندر مودی اور ان کے اقدامات پر کڑی تنقيد کی۔

عمران خان نے کہا، ''کشمير ميں نا انصافی صرف مسلمانوں کے ساتھ ہو رہی ہے، کشميری ہندوؤں کے ساتھ نہيں۔‘‘ پاکستانی وزير اعظم نے بھارتی ہندو قوم پرست تنظيم 'آر ايس ايس‘ کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ يہ تنظيم مسلمانوں کی نسل کشی چاہتی ہے۔ عمران خان نے نئی دہلی حکومت کے کشمير ميں اقدامات کو اسی ذہنيت سے جوڑا اور کہا کہ وہاں مسلمانوں کو ہدف بنايا جا رہا ہے۔ وزير اعظم نے عالمی رہنماؤں سے مخاطب ہو کر کہا کہ حاليہ اقدامات سے بھارت کے 180 ملين مسلمان مايوس ہوں گے اور ممکن ہے کہ چند ايک انتہا پسندی کی طرف بھی راغب ہو سکتے ہیں اور ممکن ہے کہ کوئی کارروائی کر بيٹھيں۔ انہوں نے خبردار کيا، ''پھر اس کا الزام ہم پر لگا ديا جائے گا۔‘‘

نریندر مودی کی تقریر میں کشمیر کا ذکر تک نہ تھا

مسئلہ کشمير کا ذکر کرتے ہوئے پاکستانی وزيراعظم نے مزيد کہا کہ اس وقت دنيا بھر ميں مسلمان نا انصافی کا شکار ہيں۔ عمران خان نے روہنگيا مسلمانوں کی حالت زار کا بھی تذکرہ کيا اور عالمی رہنماؤں سے کہا کہ ايسے اقدامات لوگوں کو انتہا پسندی کی طرف دھکيلتے ہيں۔ اختتام ميں عمران خان نے بھارت سے مطالبہ کيا کہ کشمير ميں پچپن ايام سے نافذ کرفيو ہٹايا جائے۔ انہوں نے خبردار کيا کہ اگر دونوں ملکوں کے مابين جنگ ہو جاتی ہے، تو جوہری قوت کی حامل دو قوتوں کے مابين جنگ کے اثرات پوری دنيا پر مرتب ہو سکتے ہيں۔ عمران خان نے کہا کہ ''يہ دھمکی نہيں، فکر ہے کہ ہم کس سمت جا رہے ہيں۔‘‘

عمران خان کا بھارتی فورسز کے ذریعے کشمیر میں سکیورٹی لاک ڈاؤن کی مذمت کرتے ہوئے کہنا تھا کہ کشمیر میں کرفیو فوراﹰ ختم کیا جائے، جہاں بھارت نے اپنے نو لاکھ فوجی تعینات کر رکھے ہیں۔ پاکستانی وزیر اعظم نے کہا، ''کشمیری عوام سڑکوں پر نکلیں گے، تو پھر یہ فوجی کیا کریں گے؟ وہ انہیں گولیوں سے نشانہ بنائیں گے۔‘‘

عمران خان کا مزید کہنا تھا، ''وہاں (بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں) نو لاکھ فوجی موجود ہیں۔ وہ نریندر مودی کے دعووں کے برعکس وہاں کشمیر کی خوشحالی کے لیے نہیں گئے۔ اگر کشمیری باہر آئے، تو یہ فوجی کیا کریں گے؟ وہاں قتل عام ہو گا۔‘‘

ع س، ا ا / ا ا، م م (اے ایف پی، اے پی، روئٹرز)