چین کی مسعود اظہر کے معاملے پر بھارت کو مذاکرات کی پیشکش | حالات حاضرہ | DW | 16.03.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

چین کی مسعود اظہر کے معاملے پر بھارت کو مذاکرات کی پیشکش

چین نے عالمی سلامتی کونسل میں مسعود اظہر کو بطور دہشت گرد بلیک لسٹ کرنے کی قرارداد ویٹو کر دی تھی۔ اس چینی فیصلے پر بھارت اور امریکا مایوسی کا اظہار کر چکے ہیں۔

چینی وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ وہ عسکریت پسند گروپ جیشِ محمد کے سربراہ مسعود اظہر کو بلیک لسٹ کرانے سے متعلق بھارت سمیت تمام فریقوں کے ساتھ بات چیت کے لیے تیار ہے۔ اس منابست سے چینی وزارت خارجہ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ بیجنگ کو مسعود اظہر پر پابندیاں عائد کرنے کے معاملے پر غور کرنے کے لیے مزید وقت درکار ہے۔

چینی وزارت خارجہ کے مطابق اس معاملے پر مشترکہ مشاورت کے ساتھ مرتب کیا گیا کوئی طویل المدتی پلان ہی فائدہ مند ہو سکتا ہے۔ چین نے قرارداد کو ویٹو کرنے کے دفاع میں یہ بھی کہا کہ وہ بین الاقومی معاملات میں اپنا ذمہ دارانہ کردار ادا کرنے کا سلسلہ جاری رکھے گا۔

ایک غیر ملکی سفارت کار نے اپنا نام مخفی رکھنے کی شرط پر بتایا کہ ایسا محسوس کیا گیا ہے کہ چین انسداد دہشت گردی کے تناظر میں پاکستانی ترجیحات کو تحفظ دینے کی کوشش میں ہے۔ اس سفارت کار کا مزید کہنا تھا کہ چین نے مسعود اظہر کو دہشت گرد کے طور پر بلیک لسٹ کرنے کی قرارداد کو چوتھی مرتبہ ویٹو کیا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ مسعود اظہر کو بلیک لسٹ کرنے کا یہ معاملہ تقریباً نو ماہ کے لیے لٹک کر رہ گیا ہے۔

Indien Mumbai Proteste von Muslime gegen radikale Islamisten aus Pakistan (Getty Images/AFP/I. Mukherjee)

مسعود اظہر کو دہشت گرد قرار دینے کی قرارداد امریکا، برطانیہ اور فرانس نے سلامتی کونسل میں جمع کرائی تھی

رواں ہفتے کے دوران تیرہ مارچ کو عالمی سلامتی کونسل میں مسعود اظہر کو بلیک لسٹ کرنے سے متعلق ایک قرارداد کو چین نے ویٹو کر دیا تھا۔ یہ قرارداد امریکا، فرانس اور برطانیہ نے مشترکہ طور پر پیش کی تھی۔ ایسی خبریں بھی سامنے آئی ہیں کہ یہی تینوں ملک ایک اور ایسی ہی قرارداد سلامتی کونسل میں پیش کرنے کی تیاری میں مصروف ہیں۔

مسعود اظہر کو بلیک لسٹ کروانے میں ناکامی پر بھارت میں مودی حکومت نے گہری مایوسی کا اظہار کیا تھا۔ چینی ویٹو کے بعد بھارت میں ایسے مطالبے بلند ہونا شروع ہو گئے تھے کہ وہاں چینی مصنوعات کا بائیکاٹ کیا جائے۔ اندازوں کے مطابق بظاہر سوشل میڈیا پر چینی مال کے بائیکاٹ کی مہم قوم پرست ہندووں اور حکمران بی جے پی کے کارکنوں کی جانب سے مشترکہ طور پر شروع کی گئی ہے۔

چین کی جانب سے  جیش محمد کے سربراہ کو دہشت گرد قرار دینے کی قرارداد کے روک دیے جانے پرامریکی ردعمل بھی سامنے آ چکا ہے۔ امریکا کی جانب سے کہا گیا تھا کہ اس قرارداد کے ویٹو کیے جانے سے علاقائی سلامتی اور امن کے مقاصد کو ٹھیس پہنچی تھی۔

ویڈیو دیکھیے 04:15

بھارت کے ساتھ کشیدگی کی وجہ بھارتی جارحیت ہے، جوہر سلیم

DW.COM

Audios and videos on the topic