چندریاں ٹو میں خرابی، بھارتی خواب شرمندہ تعبیر نہیں ہو سکا | حالات حاضرہ | DW | 15.07.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

چندریاں ٹو میں خرابی، بھارتی خواب شرمندہ تعبیر نہیں ہو سکا

بھارت نے چاند کے لیے آج پیر کو اپنا مشن روانہ کرنا تھا۔ تاہم اس روانگی کو مؤخر کر دیا گیا ہے۔ حکام نے اس کی وجہ تکنیکی خرابی بتائی ہے۔

بھارتی خلائی ادارے نے مشن کی روانگی سے ایک گھنٹہ قبل آج علی الصبح اعلان کیا کہ مشن کو خلا میں پہچانے والے راکٹ میں تکنیکی خرابی کی نشاندہی ہوئی ہے، جس کے وجہ سے اس مشن کو مؤخر کیا جا رہا ہے۔ 

انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن (ISRO) نے ٹویٹر پر لکھا، ''حفاظتی اقدامات کے پیش نظر چندریاں ٹو کی روانگی کو آج مؤخر کر دیا گیا۔ لانچنگ کی اگلی تاریخ کا بعد میں اعلان کیا جائے گا۔‘‘

’چندريان دوئم‘ نامی مشن پر 141 ملين ڈالر کی لاگت آئی ہے اور اس ميں چاند پر روانہ کيا جانے والا جہاز، بھارت ميں ہی تيار کيا گيا ہے۔ اس مشن کا مقصد چاند کی سطح کا جائزہ لينا، پانی اور معدنیات تلاش کرنا ہے۔

بھارت چاند کی سطح پر کامیابی کے ساتھ اپنا مشن اتارنے والا دنیا کاچوتھا ملک بننا چاہتا ہے تاہم اسے ابھی اپنا یہ خواب پورا کرنے میں مزید انتظار کرنا پڑے گا۔

 

اس ادارے کی جانب سے مزید کوئی تفصیلات بیان نہیں کی گئی ہیں۔ سنسکرت میں چندریان کے معنی چاند گاڑی کے ہیں۔ اسے ملک کے جنوبی حصے میں واقع سری ہری کوٹہ کے مرکز سے مقامی وقت کے مطابق صبح دو بج کر اکاون منٹ روانہ کیاجانا تھا۔

انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن کے چیئر مین کے سوان نے قبل ازیں کہا تھا کہ اگر پیر کو کوئی تاخیر ہوئی تو چاند مشن منگل کو بھی روانہ کیا جا سکتا ہے۔

DW.COM