پیسیفک کے تارکین وطن، چھان بین کے لیے ٹرمپ اجازت کے منتظر | مہاجرین کا بحران | DW | 27.02.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

پیسیفک کے تارکین وطن، چھان بین کے لیے ٹرمپ اجازت کے منتظر

امریکی حکام پاپووآ نیوگنی میں موجود سینکڑوں تارکین وطن کو ملک میں بسانے سے قبل ان کی جانچ پڑتال کے لیے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے اجازت کے منتظر ہیں۔

پیر کے روز ایک اعلیٰ آسٹریلوی عہدیدار نے بتایا ہے کہ امریکی حکام مانوس اور ناؤرو کے جزائر پر موجود ساڑھے بارہ سو تارکین وطن کو ملک میں بسانے سے قبل ان کی جانچ پڑتال اب تک شروع نہیں کر پائے ہیں، کیوں کہ انہیں اب تک اس سلسلے میں صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے اجازت نہیں ملی ہے۔

امریکا اور آسٹریلیا کی حکومتوں کے درمیان سابق صدر باراک اوباما کے دور میں ایک معاہدہ طے پایا تھا، جس کے تحت ان تارکین وطن کو امریکا میں بسایا جانا ہے۔ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اس معاہدے کو ’بے وقوفانہ‘ قرار دیا تھا، تاہم بادل نخواستہ اسے تسلیم بھی کیا تھا۔

کینبرا حکام نے غیرقانونی طور پر آسٹریلیا میں داخلے کی کوشش کرنے والے ان مہاجرین کو سمندر ہی میں پکڑ کر پاپووآ نیوگنی کے جزائر مانوس اور ناؤرو میں قائم حراستی مراکز پہنچا دیا تھا۔ پاپووآ نیوگنی کی حکومت آسٹریلوی امداد سے یہ مراکز چلا رہی ہے۔ بتایا گیا ہے کہ ان تارکین وطن میں سے زیادہ تر کا تعلق سری لنکا، افغانستان اور ایران سے ہے۔ تاہم ان مراکز پر معیار زندگی کے اعتبار سے دگرگوں حالت پر انسانی حقوق کی تنظیمیں آسٹریلیا کو شدید تنقید کا نشانہ بناتی ہیں۔

USA Präsident Donald Trump Telefonat mit Australiens Premierminister Malcolm Turnbull (picture-alliance/dpa/Pete Marovich/CNP/AdMedia)

ٹرمپ نے منصب صدارت سنبھالنے پر اس معاہدے کو ’بے وقوفانہ‘ قرار دیا تھا

آسٹریلیا کے محکمہء مہاجرت اور سرحدی تحفظ کے سیکرٹری مائیک پیزُولو نے سینیٹ کی ایک کمیٹی کو بتایا کہ امریکی ہوم لینڈ سکیورٹی کے محکمے کے اہلکار ان تارکین وطن کی جلد از جلد امریکا منتقلی سے قبل جانچ کے عمل کو روکے ہوئے ہیں اور اس کے لیے انہیں صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے اجازت درکار ہے۔

پیزُولو نے سینیٹ کی قانونی اور دستوری امور کی کمیٹی کو بتایا کہ انہیں امید ہے کہ یہ عمل اگلے چند ماہ میں شروع ہو جائے گا۔ سینیٹ کی اس کمیٹی کے ایک رکن نِک میکِم نے ٹرمپ کو ’پاگل‘ قرار دیتے ہوئے پیزُولو سے سوال کیا کہ وائٹ ہاؤس کی جانب سے اس بے یقینی کے بعد وہ کس طرح کہہ سکتے ہیں کہ یہ عمل اگلے کچھ عرصے میں شروع ہو جائے گا؟

پیزُولو نے اس سوال کے جواب میں کہا کہ انہیں امریکی ہوم لینڈ سکیورٹی اور محکمہء خارجہ کے اہلکاروں کی جانب سے فراہم کی جانے والی معلومات پر اعتبار ہے۔

پیزُولو کا مزید کہنا تھا کہ امریکی محکمہء خارجہ کے کچھ عہدیداروں نے یہ دیکھنے کے لیے کہ آیا یہ تارکین وطن حقیقی معنوں میں پناہ کے متلاشی ہیں یا نہیں، کچھ تارکین وطن سے بات چیت بھی کی ہے۔