پاک افغان سرحد ایک ماہ کی بندش کے بعد کھُل گئی | حالات حاضرہ | DW | 21.03.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاک افغان سرحد ایک ماہ کی بندش کے بعد کھُل گئی

پاکستانی سرحدی حکام کے مطابق قریب ایک ماہ کی بندش کے بعد پاکستان اور افغانستان کے درمیان سرحدی گزر گاہیں کھول دی گئی ہیں۔ پاکستانی وزیراعظم نواز شریف نے سرحد کھولنے کا حکم گزشتہ روز جاری کیا تھا۔

خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس نے ایک اعلیٰ سرحدی اہلکار کے حوالے سے بتایا ہے کہ منگل 21 مارچ کو طورخم بارڈر پر سینکڑوں ٹرکوں نے پاکستان اور افغانستان کے درمیان سرحد کو عبور کیا۔ جنوبی ایشیا میں مصروف ترین تجارتی سرحدی گزرگاہوں میں سے ایک طورخم کی سرحدی گزرگاہ بھی گزشتہ ایک ماہ سے بند تھی۔

طورخم بارڈر کراسنگ پر تعینات ایک اعلیٰ سرحدی اہلکار نے ایسوسی ایٹڈ پریس کو بتایا کہ پاکستانی وزیراعظم نواز شریف کی طرف سے جاری کردہ سرحدی گزرگاہ فوری طور پر کھولنے کا حکم نامہ پیر کی رات دیر کو موصول ہوا۔ اس حکم نامے کے بعد آج منگل 21 مارچ کو صبح سات بجے یہ بارڈر کھول دیا گیا۔

طورخم سرحد کھلنے کے بعد کئی ہفتوں سے سرحد کے دونوں اطراف پھنسے سینکڑوں ٹرکوں نے سرحد عبور کی ہے۔ بارڈر کی بندش کے باعث ٹرکوں کی کئی کئی کلومیٹر طویل قطاریں موجود تھیں۔

Pakistan Afghanistan NATO Fahrzeuge werden an der Grenze festgehalten (AP)

بارڈر کی بندش کے باعث ٹرکوں کی کئی کئی کلومیٹر طویل قطاریں موجود تھیں

پاکستان کے مختلف حصوں میں ہونے والے دہشت گردانہ حملوں کے بعد پاکستان نے فروری کے وسط میں یہ سرحد بند کر دی تھی۔ اسلام آباد حکومت کا الزام تھا کہ ان حملوں کے پیچھے اُن دہشت گردوں کا ہاتھ تھا، جو افغانستان میں چھپے ہوئے ہیں۔

ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق پاکستان اور افغانستان دونوں ممالک ایک دوسرے پر دہشت گردوں کی پشت پناہی کا الزام عائد کرتے ہیں اور اپنے ہاں ہونے والوں دہشت گردانہ حملوں کا ذمہ دار دوسرے ملک میں موجود شدت پسندوں کو قرار دیتے ہیں۔