1. مواد پر جائیں
  2. مینیو پر جائیں
  3. ڈی ڈبلیو کی مزید سائٹس دیکھیں

بھارت پڑوسی ممالک سے خطرات کے مدنظر میزائل سسٹم نصب کرے گا

جاوید اختر، نئی دہلی
18 مئی 2022

پنٹاگون کے ایک اعلٰی افسر کا کہنا ہے کہ بھارت پاکستانی اور چینی خطرات کے تناظر میں اگلے ماہ تک روسی ساخت کا جدید ترین میزائل سسٹم ایس 400 نصب کرے گا۔ نئی دہلی اپنے ڈیفنس کی جدید کاری اور استحکام پر خصوصی توجہ دے رہا ہے۔

https://p.dw.com/p/4BSY6
Russland | Patsir-S Abwehrsystem
تصویر: picture-alliance/dpa/Sputnik/Russian Defence Ministry

امریکہ کے ڈیفنس انٹیلیجنس کے ڈائریکٹر لفٹیننٹ جنرل اسکاٹ بیریئر کا کہنا ہے کہ بھارت اپنی دفاع کے لیے ایک طرف جہاں فوج کے تمام شعبوں بشمول فضائی، زمینی، بحری اور اسٹریٹیجک جوہری فورسز،کی جدیدکاری پر عمل کررہا ہے وہیں پاکستانی اور چینی خطرات سے نمٹنے کے لیے روسی ساخت کا ایس 400 میزائل سسٹم بھی نصب کررہا ہے۔

لفٹیننٹ جنرل بیریئر نے امریکی سینیٹ کی مسلح سروسز کمیٹی کے اراکین کو بتایا،''بھارت کو دسمبر میں روسی ساخت فضائی دفاعی سسٹم ایس 400 کی پہلی کھیپ ملی تھی اور وہ اس سسٹم کو جون 2022 ء تک پاکستانی اور چینی خطرات سے دفاع کے لیے نصب کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔‘‘

پنٹاگون کے افسرنے مزید کہا،''بھارت اپنے ہائپر سونک بیلسٹک، کروز اور ایئر ڈیفنس میزائل صلاحیتوں کو فروغ دینے کے لیے مسلسل اقدامات کررہا ہے اور اس نے سن 2021 میں متعدد تجربات بھی کیے تھے۔ خلاء میں بھارتی سیٹلائٹس کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے اور یہ اپنے خلائی اثاثوں مثلاً خلائی حملے کی صلاحیتوں کو وسعت دے رہا ہے۔‘‘

مودی کا ملکی دفاعی صنعت کی توسیع پر زور

وزیر اعظم نریندر مودی نے سن 2019 میں بھارت کی گھریلو دفاعی صنعت کی توسیع کرتے ہوئے ملک کی معیشت کو مضبوط کرنے پر زور دیا تھا۔ بھارت نے اس سلسلے میں غیر ملکی سپلائرز سے دفاعی خریداریوں کو کم کرنے کے لیے ایک منفی درآمداتی فہرست بھی تیار کی ہے۔

لفٹیننٹ جنرل بیریئر کا کہنا تھا کہ بھارت وسیع ترفوجی جدیدکاری کے پروگرام پر عمل کررہا ہے اور اپنی گھریلو دفاعی پیداوار پر توجہ دے رہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ بھارت قائدانہ رول ادا کرنے اور بحیرہ ہند کے علاقے میں سکیورٹی فراہم کرنے والے ملک کے طورپر اپنی خارجہ پالیسی کو مسلسل آگے بڑھارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت انڈو پیسیفک علاقے میں خوشحالی کو فروغ دینے اور استحکام کو یقینی بنانے کے لیے باہمی اور کثیرفریقی میکانزم کے ذریعہ اپنے اثرات کا دائرہ وسیع کرنے کے لیے اسٹریٹیجک پارٹنرشپ قائم کررہا ہے۔

Ukraine Krieg | Russland deutet Strategiewechsel an
تصویر: Russian Defence Ministry/dpa/picture alliance

پاکستان اور چین سے خطرہ

لفٹیننٹ جنرل بیریئر کا کہنا تھا، ''بھارت نے یوکرین پر روس کے فوجی حملے کے معاملے پر غیر جانبدار موقف اپنایا۔ روس کے ساتھ بھارت کے دیرینہ تعلقات اب بھی مستحکم ہیں اور اس نے روس کے ساتھ وزیر خارجہ اور وزیر دفاع پر مشتمل ' ٹو۔ ٹو فارمیٹ‘  کی پہلی میٹنگ دسمبر میں کی۔ بھارت نے اس سے پہلے اس طرح کی میٹنگ صرف امریکہ، جاپان اور آسٹریلیا کے ساتھ کی تھی۔

امریکی ڈیفنس انٹیلیجنس کے سربراہ لفٹیننٹ جنرل بیریئر کا کہنا تھا کہ افغانستان میں طالبان حکومت کے قیام کے بعد نئی دہلی پاکستان سے لشکر طیبہ اور جیش محمد جیسے سرگرم عسکریت پسند گروپوں کی جانب سے ممکنہ حملوں کے حوالے سے فکر مند ہے۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان سے بھارتی اہلکاروں کے انخلاء کی وجہ سے ممکنہ خطرات پر نگاہ رکھنا مشکل ہوگیا ہے۔

حالانکہ اس دوران ایسی خبریں بھی ہیں کہ بھارت افغانستان میں اپنے سفارت خانے دوبارہ کھولنے پر غور کررہا ہے تاہم فی الحال اپنے سفیر وہاں نہیں بھیجے گا۔

امریکی اعلٰی فوجی عہدیدار کا کہنا تھا کہ بھارت اور پاکستان کے درمیان سن 2003 میں جنگ بندی معاہدے کے باوجود بھارت کسی بھی دہشت گردانہ خطرے کا مقابلہ کرنے کے لیے پوری طرح تیار ہے اور اس نے کشمیر میں دہشت گردی مخالف کارروائیوں کا سلسلہ بھی جاری رکھا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سن 2020 میں حقیقی کنٹرول لائن پر بھارتی اور چینی فوج کے درمیان جھڑپ کے بعد سے دونوں ملکوں کے تعلقات کشیدہ ہیں۔ گوکہ پچھلے برس سے دونوں ملکوں کے مابین اعلٰی سطحی فوجی اور سفارتی بات چیت کا سلسلہ چل رہا ہے لیکن تعطل اب بھی برقرار ہے اور دونوں ملکوں نے تقریباً پچاس ہزار افواج اپنی اپنی سرحدوں پر تعینات کررکھی ہیں۔

 

 

اس موضوع سے متعلق مزید سیکشن پر جائیں

اس موضوع سے متعلق مزید

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ سیکشن پر جائیں

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ

Pakistan Mastung | Selbstmordanschlag
ڈی ڈبلیو کی مزید رپورٹیں سیکشن پر جائیں
ہوم پیج پر جائیں