وبا کے خاتمے کے لیے یورپ میں کووڈ ویکسین کی مہم شروع | حالات حاضرہ | DW | 27.12.2020
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

وبا کے خاتمے کے لیے یورپ میں کووڈ ویکسین کی مہم شروع

یورپی یونین کے رکن ممالک میں اس امید کے ساتھ کووڈ ویکسین کی مہم شروع ہو گئی ہے کہ کورونا وائرس کی وبا سے پیدا شدہ بحران اب جلد ختم ہو جائے گا۔ برطانیہ، سوئٹزرلینڈ اور سربیا میں بھی ویکسین لگانے کا عمل جاری ہے۔

یورپی میڈیسینز ایجنسی کی جانب سے بیون ٹیک اور فائزر کی تیار کردہ کووڈ ویکسین کو منظور کیے جانے کے بعد 27 رکنی یورپی یونین سمیت یورپ بھر میں کووڈ ویکسین مہم اتوار 27 دسمبر سے شروع کر دی گئی ہے۔

جرمنی، فرانس اٹلی، آسٹریا، پرتگال اور فرانس میں بڑے پیمانے پر ویکسین مہم شروع کرتے ہوئے حکام نے سب سے پہلے معمر افراد اور طبی عملے کو ویکسین فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

یونین کے مختلف ممالک میں بیون ٹیک اور فائزر کمپنی کی مشترکہ تیار کردہ ویکسین کی کھیپ جمعے کی شام اور ہفتے کی صبح پہنچنا شروع ہوئی۔ یورپی یونین کا ہر رکن ملک اپنے طور پر طے کردہ ضوابط اور ترجیحات کے تحت ویکسین مہم شروع کر رہا ہے۔

ویکسین

ابتدا میں معمر افراد کو ویکسین دی جا رہی ہے

27 رکنی بلاک نے ابتدائی طور پر آج اتوار کے روز ایک ساتھ ویکسین مہم شروع کرنے کا فیصلہ کیا تھا تاہم ہنگری نے ویکسین کی پہلی کھیپ ملتے ہی مہم شروع کر دی۔ اس کے بعد سلوواکیہ اور جرمنی نے بھی ہفتے کی شام سے ویکسین مہم شروع کر دی تھی۔

وبا کے خلاف ایک ساتھ لڑنے کا عزم

بیون ٹیک اور فائزر کمپنی کی تیار کردہ ویکسین کی یورپی یونین کی تمام رکن ریاستوں میں تقسیم ایک مشکل عمل ہے۔ اس کی سب سے بڑی وجہ یہ ہے کہ اس ویکسین کو منفی 80 ڈگری درجہ حرارت میں میں رکھ کر ہی منتقل کیا جا سکتا ہے۔

یونین نے تمام رکن ریاستوں میں ویکسین کو محفوظ طریقے سے منتقل کرنے کے لیے ایک مشترکہ منصوبہ تشکیل دے رکھا ہے۔

ویکسین

ویکسین کو منفی 80 ڈگری درجہ حرارت میں رکھنا پڑتا ہے

یورپی یونین کے مطابق یہ منصوبہ کورونا وائرس کی وبا کے خلاف مل کر لڑنے کے عزم اور یورپی اتحاد کی غمازی کرتا ہے۔

جرمنی میں 101 سالہ خاتون کو ویکسین لگائی گئی

جرمنی کی آٹھ کروڑ سے زائد آبادی تک ویکسین کی محفوظ فراہمی یقینی بنانے کے لیے ہسپتالوں کے ساتھ ساتھ ملک بھر میں 400 سے زائد ویکسینیشن سینٹرز بھی قائم کیے گئے ہیں۔

جرمنی میں ویکسین کی پہلی کھیپ ہفتہ 26 دسمبر کو پہنچی۔ ملک کی 16 وفاقی ریاستوں میں سے ہر ایک کو ابتدائی طور پر 10,000 ویکسین ڈوزز فراہم کی جا رہی ہیں۔

وفاقی جرمن ریاست سیکسنی انہالٹ میں بھی ہفتے کی شام کووڈ ویکسین کی پہلی کھیپ پہنچی۔ ملک بھر میں اتوار کے روز ویکسین مہم شروع کی جانا تھی تاہم ریاستی حکام نے ہفتے کے روز ہی ویکسین لگانے کا سلسلہ شروع کر دیا۔

جرمن شہر ہالبرسٹاٹ میں 101 سالہ ایڈیتھ کوائیزالا نامی خاتون کو کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے ویکسین لگائی گئی۔

ش ح / ا ب ا (روئٹرز، اے پی، ڈی پی اے)