مہاجرین کا بحران: ’جرمن کامیاب ہوں گے‘، ڈی ڈبلیو کا تبصرہ | مہاجرین کا بحران | DW | 31.08.2016
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

مہاجرین کا بحران: ’جرمن کامیاب ہوں گے‘، ڈی ڈبلیو کا تبصرہ

جرمنی میں مہاجرین کو پہلے تو کھلے دل کے ساتھ خوش آمدید کہا گیا لیکن پھر اس حوالے سے شکوک و شبہات بھی پیدا ہو گئے۔ ڈی ڈبلیو کی تبصرہ نگار ڈاگمار اینگل کے خیال میں جرمنی مہاجرین کے بحران پر قابو پانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

ایک سال پہلے جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے مہاجرین کے بحران کے حوالے سے کہا تھا کہ جرمن اس مسئلے پر قابو پانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ ڈی ڈبلیو کی تبصرہ نگار ڈاگمار اینگل لکھتی ہیں کہ در حقیقت جرمن اپنے اس مقصد میں کامیاب رہے ہیں۔ میرکل کے اس جملے پر کہ ’ہم کامیاب ہوں گے‘، اب تک بہت کچھ کہا اور لکھا جا چکا ہے۔ پھر بھی اس بات کا اعادہ کیا جا سکتا ہے کہ جرمن اپنے اس نصب العین پر ضرور پورا اُتریں گے۔

مثال کے طور پر ایک مسئلہ دس لاکھ مہاجرین کے اندراج کا تھا۔ کئی مہینوں تک ایسا لگ رہا تھا کہ یہ کام مکمل نہیں ہو سکے گا۔ اس عمل سے پہلے ہم سمجھتے تھے کہ انتظامی معاملات میں جرمن بے پناہ صلاحیتوں کے مالک ہیں لیکن ہم نے اس مرحلے پر آ کر یہ جانا کہ ہم نے اپنی صلاحیتوں کا غلط اندازہ لگایا تھا۔

موسم سرما کے ابتر حالات کے بعد ترک وطن اور مہاجرین سے متعلق وفاقی جرمن محکمے کے ہزاروں نئے ملازمین اب ایک ایسی تنظیم تشکیل دینے میں مصروف ہیں،جو مؤثر بھی ہو گی اور فعال بھی۔ اس محکمے کے سربراہ کے مطابق یہ کام اس سال کے آخر تک مکمل ہو جائے گا۔

اینگل مزید لکھتی ہیں کہ ایک کامیابی یہ بھی ہے کہ مہاجرین کی ایک کثیر تعداد اب اسکولوں کے ہالوں میں نہیں بلکہ رہائشی علاقوں میں منتقل ہو چکی ہے۔ گزشتہ بارہ مہینوں کے دوران ہم نے دیکھا کہ جرمن شہریوں کی ایک بڑی تعداد ان مہاجرین کی مدد کرنے کے لیے باہر نکلی اور اس دوران ہماری خود کو ہر لحاظ سے مکمل اور کامل سمجھنے کی غلط فہمی بھی دور ہوگئی۔ وہ مزید لکھتی ہیں کہ اس بات کا فیصلہ تاریخ کرے گی کہ مہاجرین کے حوالے سے جرمنی نے جو پالیسیاں اپنائیں وہ کس حد تک کامیاب یا ناکام رہیں۔

ڈی ڈبلیو کی تبصرہ نگار کے بقول اس دوران جرمنوں کے اُس حوصلے اور ہمت کا ذکر بھی ضرور کیا جائے گا، جس کا مظاہرہ انہوں نے تمام تر خطرات، مسائل اور بڑی بڑی مشکلات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے ہنگامی حالات سے دوچار مہاجرین کے مدد کے لیے کیا تھا۔ وہ لکھتی ہیں کہ تاریخ میں یہ بھی درج کیا جائے گا کہ جرمنوں نے 2015ء میں کامیابی کی جوکہانی لکھنا شروع کی تھی، اُس میں وہ کامران بھی رہے تھے۔

ویڈیو دیکھیے 02:45
Now live
02:45 منٹ

مہاجرین کا بحران: کیا بدلہ اور کیا نہیں؟

Audios and videos on the topic