مصر ميں مسجد کے باہر دھماکے، بیسیوں افراد ہلاک | حالات حاضرہ | DW | 24.11.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مصر ميں مسجد کے باہر دھماکے، بیسیوں افراد ہلاک

مصر کے شمالی سينائی علاقے ميں ايک مسجد کے باہر ہونے والے دھماکوں کے نتيجے ميں پچاس سے زائد افراد ہلاک اور اسّی کے قريب زخمی ہو گئے۔

مصری دارالحکومت قاہرہ میں سکيورٹی ذرائع نے بتايا کہ جنگجوؤں نے مسجد کے باہر دھماکہ خيز مواد نصب کر رکھا تھا اور عين اس وقت جب نمازی مسجد سے باہر نکل رہے تھے، اس مواد کو استعمال کرتے ہوئے دھماکے کیے گئے۔ ابتدائی رپورٹوں میں کم از کم 155 افراد کی ہلاکت اور 120 سے زائد کے زخمی ہونے کی اطلاع ہے۔ يہ دھماکے سینائی کے علاقے میں العريش نامی شہر ميں آج چوبیس نومبر کو جمعے کی نماز کے وقت  کیے گئے۔

نیوز ایجنسی روئٹرز کے مطابق مصری سکيورٹی ذرائع نے اپنی شناخت مخفی رکھنے کی شرط پر مزيد بتايا کہ ان دھماکوں کے بعد مشتبہ جنگجوؤں نے موقع پر موجود افراد پر فائرنگ بھی کی۔ مصری وزارت صحت کے ایک ترجمان نے بتایا کہ دھماکوں میں زخمی ہونے والے درجنوں افراد اس وقت مختلف ہسپتالوں میں زیر علاج ہیں۔

اشتہار