مستقبل کے جمعے کی گونج، سو سے زیادہ ممالک میں سنی گئی | سائنس اور ماحول | DW | 15.03.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

مستقبل کے جمعے کی گونج، سو سے زیادہ ممالک میں سنی گئی

دنیا بھر میں اسکولوں کےطلبا ’فرائیڈے فار فیوچر‘ کے سلسلے میں اپنی آواز سے آواز ملا رہے ہیں۔ ماحولیاتی تحفط کے لیے گزشتہ برس اگست میں شروع ہونے والے احتجاج کے سلسلے میں اب سو سے زائد ممالک کے طلبہ شریک ہو رہے ہیں۔

سویڈن کی 16 سالہ لڑکی گریٹا تھُنبیرگ نے پورے اعتماد سے موسمیاتی تبدیلی کے تحفط کے لیے گزشتہ سال اگست میں سویڈن کی پارلیمان کے سامنے اس ماحولیاتی تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے  احتجاج کا آغاز کیا۔ تھُنبیرگ کو ناروے کے تین اراکین پارلیمنٹ کی جانب سے نوبل امن انعام کے لیے بھی نامزد کیا گیا ہے۔

تھُنبیرگ سب کی توجہ کا مرکز تب بنی جب دسمبر میں اقوام متحدہ کے ماحولیاتی کانفرنس میں اسے مدعو کیا گیا۔حال ہی میں آسٹریلوی شہر میلبورن کے طلبا کی جانب سےانٹرنیشنل موسمیاتی تبدیلیوں کو روکنے کے لیے ایک بڑا احتجاج دیکھا گیا۔

Deutschland Hamburg Klima Demonstration | Greta Thunberg (picture-alliance/dpa/D. Reinhardt)

سویڈن کی 16 سالہ لڑکی گریٹا تھُنبیرگ

سوڈان کی  ماحولیاتی تحفط کے لیے کام کرنے والی کارکن  توقع کرتی ہیں کہ بچے ان کے والدین اور ان کے تمام حامی اس احتجاج کا حصہ بنیں۔ گریٹا تھُنبیرگ کی توقعات کے مطابق یہ آواز پندرہ سو سے زائد شہروں اور سو ممالک تک پہنچ چکی ہے۔

دنیا بھر سے اسکول طلبا آنے والے دنوں میں گلوبل فرائیڈے احتجاج کا حصہ بننے کے لیے پرجوش تھے۔ مشرقی آسٹریلوی شہر میلبورن میں سب سے بڑا ملک گیر احتجاج دیکھا گیا۔

احتجاج کا آغاز کرنے والے مظاہرین کی وزیر اعظم جیسندا آرڈرن اور موسمیاتی تبدیلی کے وزیر جیمز شا سے ملاقات بہت  تھی۔ان کے مطابق، ’’ ہمیں یقین ہے کہ حکومت اس سلسلے میں مثبت اقدام کرے گی، لیکن یہ ایک بحران ہے اور ہمیں اس  بحران کا جلد حل نکالنا ہے۔‘‘

Fridays for future Schüler Schülerinnen Streik Schulstreik Klima Klimawandel Berlin (AFP/Getty Images/T. Schwarz)

دنیا بھر سے اسکول طلبا آنے والے دنوں میں گلوبل فرائیڈے احتجاج کا حصہ بننے کے لیے پرجوش تھے

مقامی میئر نے نیوزی لینڈ کی خبر رساں ویب سائٹ کو بتایا کہ  ’’نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ میں دو مساجد پر کیے گئے حملوں کے کی وجہ  سے احتجاج روک دیا گیا ہے اور احتجاجی طلبا کو محفوظ مقامات پر منتقل کردیا گیا ہے۔‘‘

آسٹریلیا کے وزیر تعلیم ڈین تیھن نے میلبرن کے رپورٹر کوبتایا کہ، ’’معاملے پر ایکشن لینا یقیناﹰ ضروری ہے مگریہ احتجاج طلبا اسکول کے بعد اور ہفتہ وار چھٹی پر بھی کر سکتے ہیں۔‘‘   

جرمنی میں ایف ڈی پی کی رہنما نے طلبا کے سیاست دانوں سے رجوع کرنے کو مثبت اقدام قرار نہیں دیا۔جرمن چانسلر انگیلا مرکل نے اس احتجاج کو ایک مثبت اقدام قرار دیا۔

ویڈیو دیکھیے 02:03

برلن ميں انٹرنيشنل گرين ويک کا انعقاد، ماحول دوستی کی مثال

DW.COM

Audios and videos on the topic

اشتہار