فرانسیسی صحافی کی بھارتی زیر انتظام کشمیر میں گرفتاری | حالات حاضرہ | DW | 11.12.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

فرانسیسی صحافی کی بھارتی زیر انتظام کشمیر میں گرفتاری

پولیس نے ایک فرانسیسی صحافی کو بھارتی زیرانتظام کشمیر میں گرفتار کیا ہے۔ پولیس کے مطابق وہ بغیر اجازت ایک دستاویزی فلم کی عکس بندی میں مصروف تھا۔

سری نگر شہر کی پولیس کے ایک سینیئر اہلکار امتیاز اسماعیل پارے نے نیوز ایجنسی روئٹرز کو بتایا کہ فرانسیسی صحافی کے پاس بھارت کا قانونی بزنس ویزا موجود ہے لیکن اس ویزے پر اُسے دستاویزی فلم کی عکاسی  کی اجازت نہیں ہے۔ پارے کے مطابق یہ گرفتاری بھارتی پاسپورٹ ایکٹ کے تحت کی گئی ہے۔ نئی دہلی میں فرانسیسی سفارت خانے کو اس صحافی کی گرفتاری کی اطلاع بھی دے دی گئی ہے۔

کشمیر:پانچ مشتبہ علیحدگی پسندوں سمیت ایک بھارتی کمانڈو ہلاک

کشمیر میں مولانا مسعود اظہر کا ’بھتیجا‘ ہلاک، بھارت کا دعویٰ

’کشمیری ماضی کی غلطیوں کا نتیجہ بھگت رہے ہیں‘

کشمیر پر بات چيت کی پیش کش ’محض فریب ہے‘

گرفتار ہونے والے فرانسیسی صحافی کا نام کومیٹ پال ایڈورڈ ہے۔ اُسے سرینگر کے کوٹھی باغ علاقے سے حراست میں لیا گیا۔ اُسے گرفتار کرنے کی ایک وجہ یہ بھی بتائی گئی کہ وہ بھارت میں سیاسی اور سکیورٹی معاملے پر دستاویزی فلم بنانے کے لیے مواد جمع کر رہا تھا۔

	Indien Kashmir Protest (Picture alliance/AP Photo/K. M. Chaudary)

رواں برس کشمیر میں بھارت مخالف شروع ہونے والی پرتشدد تحریک میں پولیس ایسی بندوقیں استعمال کر رہی ہے

ایک اور سینیئر پولیس اہلکار نے نام مخفی رکھتے ہوئے بتایا کہ سری نگر میں قیام کے دوران کومیٹ پال ایڈوڈ نے علیحدگی پسند لیڈر میر واعظ عمر فاروق کے ساتھ ملاقات بھی کی تھی۔ صحافی نے ایسے متاثرین سے ملاقاتیں کی تھیں، جنہیں چھرے لگے ہوئے ہیں۔ اُس نے سری نگر میں ایک عوامی مظاہرے کے دوران لوگوں کی جانب سے پولیس پر پتھر پھینکنے کی بھی فلم بندی کی تھی۔

سرینگر پولیس کے مطابق فرانسیسی صحافی کو اُس کی سرگرمیوں کے تناظر میں تھانے میں بھی طلب کیا گیا تھا لیکن اُس نے پولیس کے سامنے پیش ہونے سے انکار کر دیا۔ پولیس حکام کے مطابق ایڈورڈ نے بھارتی وزارت دفاع سے کشمیر میں فلم شُوٹ کرنے کی درخواست کی تھی لیکن اُس کی یہ درخواست مسترد کر دی گئی تھی۔

ویڈیو دیکھیے 03:11
Now live
03:11 منٹ

خواتین کے بال کاٹنے کے واقعات، خوف وہراس کا سبب

رواں برس کشمیر میں بھارت مخالف شروع ہونے والی پرتشدد تحریک میں پولیس ایسی بندوقیں استعمال کر رہی ہے، جن سے نکنے والے کارتوسوں میں چھرے ہوتے ہیں۔ ان چھروں کی وجہ سے اڑتیس سو مظاہرین کے زخمی ہونے کا بتایا گیا ہے۔ ان چھروں کے لگنے سے ایک شخص کی ہلاکت بھی ہوئی ہے۔ اعداد و شمار کے مطابق ایک سو سے زائد افراد کی آنکھوں میں چھرے لگنے سے انہیں جزوی یا مکمل نابینائی کا سامنا ہے۔

ویڈیو دیکھیے 01:14
Now live
01:14 منٹ

کشمیری باغی رہنما کی تدفین میں پاکستانی پرچم لہرائے گئے

DW.COM

Audios and videos on the topic

اشتہار