غیرقانونی جوہری حملے سے انکار ممکن ہے، امریکی جنرل | حالات حاضرہ | DW | 19.11.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

غیرقانونی جوہری حملے سے انکار ممکن ہے، امریکی جنرل

ایک اعلیٰ امریکی جنرل کا کہنا ہے کہ غیرقانونی ایٹمی حملے سے انکار کیا جا سکتا ہے۔ قبل ازیں ایک ریٹائرڈ امریکی جنرل نے بھی کانگریس میں بیان دیتے ہوئے صرف جائز احکامات کی تعمیل کو فوج کے لیے لازم قرار دیا تھا۔

امریکی ایئر فورس کے جنرل جان ہائی ٹین کا کہنا ہے کہ امریکی صدر ٹرمپ یا اُن کے کسی جانشین کی جانب سے ایٹمی حملے کا حکم دیا جاتا ہے اور اگر وہ غیرقانونی خیال کیا گیا تو ایسے حکم کی تعمیل نہیں کی جائے گی۔ جنرل جان ہائی ٹین امریکا کی اسٹریٹیجیک کمانڈ کے سربراہ ہیں۔

جنرل ہائی ٹین نے اِن خیالات کا اظہار کینیڈا کے صوبے نووا سکاشیا کے دارالحکومت ہیلی فیکس میں منعقدہ انٹرنیشنل سکیورٹی فورم میں کیا۔ امریکی جنرل کا یہ بھی کہنا ہے کہ وہ امریکی صدر پر بھی یہ واضح کر سکتے ہیں کہ کسی بھی غیرقانونی جوہری حملے کے حکم کی تعمیل نہیں کی جا سکتی۔

امریکا ایران کا اوّلین دشمن ہے، ایرانی سپریم لیڈر خامنائی

شمالی کوریا کے جوہری حملے کا بھرپور جواب دیا جائے گا، میٹِس

’ایٹمی جنگ کسی بھی لمحے چھِڑ سکتی ہے‘

جوہری ڈیل امریکی مفاد میں نہیں، ڈونلڈ ٹرمپ

ہیلی فیکس انٹرنیشنل سکیورٹی فورم میں تقریر کرتے ہوئے امریکی جنرل نے مزید واضح کیا کہ ایسے کسی حکم کے جواب میں صدر کے ساتھ بات کی جا سکتی ہے اور انہیں متبادل صورت حال سے آگہی بھی دی جا سکتی ہے۔ تجزیہ کاروں کے مطابق اگر صدر ٹرمپ کسی جوہری حملے کا حکم دیتے ہیں تو جنرل ہائی ٹین اُن کو ایسے حملوں کے حوالے سے  ایسی تجاویز پیش کر سکتے ہیں جو جائز اور قانونی طور پر درست ہوں۔

جنگی حالات میں امریکی اسٹریٹیجیک کمانڈ ہی جوہری فورسز کو کنٹرول کرتی ہے۔

USA Washington John Hyten (Getty Images/A. Wong)

جنرل ہائی ٹین اور امریکی بحریہ کے نائب سربراہ بِل موران کے ساتھ امریکی کانگریس میں

رواں مہینے کے اوائل میں کانگریس کی غیر ملکی تعلقات کی کمیٹی کے سامنے شہادت دیتے ہوئے سابق امریکی جنرل رابرٹ کہلر کا بھی کہنا تھا کہ امریکی فوج صرف جائز اور قانونی احکامات ماننے کی پابند ہے اور غیر قانونی حکم کو تسلیم کرنا لازم نہیں ہے۔ ریٹائرڈ جنرل رابرٹ کہلر امریکی اسٹریٹیجک کمانڈ کے جنوری سن 2011 سے نومبر سن 2013 تک سربراہ رہ چکے ہیں۔

امریکی جنرل جان ہائی ٹین کے خیالات ایسے موقع پر سامنے آئے ہیں جب امریکی صدر کو شمالی کوریا کے جوہری ہتھیاروں اور بیلسٹک میزائل سازی پر گہری تشویش لاحق ہے۔ یہ بھی اہم ہے کہ امریکی صدر کے ناقدین اُن کو جذباتی بھی قرار دیتے ہیں۔ امریکی کانگریس کے بعض ڈیموکریٹس اراکین نے ٹرمپ کے ٹویٹس کے تناظر میں ایسے خدشات ظاہر کیے ہیں کہ امریکی صدر شمالی کوریا کو جنگ کے لیے اکسا رہے ہیں۔

ویڈیو دیکھیے 00:40
Now live
00:40 منٹ

شمالی کوریا میں فوجی پریڈ کے مناظر

DW.COM

Audios and videos on the topic

اشتہار