1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار
اشتہار
اشتہار

حالات حاضرہ

عالمی خبریں | 11.05.2021 | 07:00

غزہ پر اسرائیلی فضائی حملے، کئی بچوں سمیت بیس فلسطینی ہلاک

غزہ پر اسرائیل کے فضائی حملوں میں بچوں سمیت کم از کم بیس فلسطینی ہلاک ہو گئے ہیں۔ اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ اس کارروائی میں آٹھ شدت پسند مارے گئے ہیں۔ اس سے قبل پیر کی شب حماس نے غزہ سے اسرائیل پر متعدد راکٹ داغے۔ اطلاعات کے مطابق اسرائیلی دفاعی نظام نے بیشتر راکٹوں کو فضا میں ہی تباہ کر دیا۔ خطے میں یکا یک تشدد میں اضافہ اُس وقت ہوا جب بیت المقدس میں اسرائیلی پولیس اور فلسطینیوں کے درمیان شدید جھڑپیں ہوئیں۔ پیر کو مسجد اقصٰی کے احاطے میں موجود فلسطینیوں نے اسرائیلی فورسز پر پتھراؤ کیا جبکہ سکیورٹی فورسز نے آنسو گیس اور طاقت کے زور پر مظاہرین کو منتشر کرنے کی کوشش کی۔

مشرق وسطیٰ کی صورتحال پر یورپی یونین کی تشویش

یورپی یونین نے اسرائیل پر فلسطینیوں کے راکٹ حملوں کی مذمت کی ہے اور مشرقی یروشلم میں ہونے والی خونریزی بند کا مطالبہ کیا ہے۔ یورپی یونین کے خارجہ پالیسی کے چیف جوزپ بورل نے ایک بیان میں کہا،’’ اسرائیلی شہری آبادی پر غزہ سے راکٹ برسانے کا عمل ناقابل قبول ہے اور یہ مشرق وسطیٰ کے تنازعے کو مزید بڑھاوا دینے کا سبب بن رہا ہے۔‘‘ اُدھر امریکی وزیر خارجہ انٹونی بِلنکن نے بھی حماس سے فوری طور پر راکٹ حملے بند کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ بلنکن نے کہا ہے کہ صورتحال کو مزید خراب ہونے سے بچانا چاہیے اورتشددروکنے کے لیے ہر ممکن اقدامات کیے جائیں۔

ترکی میں اسرائیل کے خلاف مظاہرہ

فلسطینیوں کے خلاف اسرائیلی اقدامات کے پر ہزاروں ترک شہریوں نے انقرہ میں اسرائیلی قونصل خانے کے باہر بڑا مظاہرہ کیا ہے۔ پیر کو ہونے والے اس احتجاج میں ترک شہریوں کے ساتھ شامی اور فلسطینی باشندے بھی شامل تھے۔ مظاہرین نے ہاتھوں میں فلسطینی پرچم اُٹھا رکھے تھے اور وہ اسرائیل اور امریکا کے خلاف نعرے لگارہے تھے۔ اسی دوران ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے خطے کی تشویشناک صورتحال پر اردن کے شاہ عبداللہ، کویت کے امیر شیخ نواف الاحمد الصباح اور فلسطینی صدر محمود عباس کے علاوہ حماس کے رہنما اسماعیل حنیہ سے بھی فون پر بات چیت کی۔ ادھر ترکی کے وزیر خارجہ احمد چاؤش اُگلو نے مسلم امہ کی طرف سے کسی مشترکہ لائحہ عمل کے لیے پاکستان اور ایران سمت دیگر ملکوں سے مشاورت کی ہے۔

امریکا، بائیو این ٹیک فائزر ویکسین بچوں کے لیے منظور

کینیڈا کے بعد امریکا نے بھی بارہ سال سے کم عمر کے بچوں کے لیے بائیو این ٹیک فائزر کی تیار کردہ کورونا ویکسین کی منظوری دے دی ہے۔ اس کا اعلان امریکی ’فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن‘ ایف ڈی اے نے کیا۔ ادارے کی ایک سینئر اہلکار جینٹ ووڈ کوک کے مطابق 16 سال سے کم عمر بچوں کو ویکسین لگانے پر بھی موثرعملدرآمد کے لیے اقداماے کیے جا رہے ہیں۔ یورپی یونین کی ادویات کی چھان بین کی ایجنسی EMA بھی 12 سے 15 سال تک کی عمر کے لیے بائیو این ٹیک فائزر کی ویکسین کی منظوری پر غور کر رہی ہے۔

کورونا وائرس کی بھارتی قسم عالمی تشویش کا باعث ہے: ڈبلیو ایچ او

عالمی ادارہ صحت نے بھارت میں کورونا وائرس کی تبدیل شدہ قسم B.1.617 کو باقی ملکوں کے لیے بھی تشویشناک قرار دیا ہے۔ اس سے پہلے ڈبلیو ایچ او نے برطانیہ، جنوبی افریقہ اور برازیل میں تغیرشدہ کورونا وائرس پر تشویش کا اظہار کیا تھا۔ جنیوا میں ڈبلیو ایچ او کی ایک ماہر متعدی امراض ماریا فان کیہوف نے کہا کہ کورونا وائرس کی تبدیل شدہ قسم B.1.617 دیگر اقسام سے کہیں زیادہ مہلک اور تیزی سے پھیلنے والی قسم ثابت ہو رہی ہے، جس پر بعض ویکسین بھی اثر نہیں کررہیں۔ بھارت میں روزانہ لاکھوں افراد کورونا کا شکار ہو رہے ہیں اور وبا نے ملک میں ایک بحران پیدا کر دیا ہے۔

خلیج فارس میں امریکی بحریہ اور ایرانی جہازوں کشیدگی

آبنائے ہرمز میں تعینات امریکی بحریہ کے جہاز نے متعدد ایرانی کشتیوں کی بظاہر جارحانہ نقل و حرکت روکنے کے لیے مشین گن سے وارننگ شاٹس فائر کیے ہیں۔ امریکی وزارت دفاع کے مطابق پینٹاگون کے مطابق ایرانی فورسز پاسداران انقلاب سے وابستہ تیرہ ایرانی کشتیاں اس علاقے میں مشکوک نقل و حرکت میں ملوث تھیں اور امریکی بحری جہاز یو ایس ایس مونٹیری سے محض 137 میٹر کے فاصلے پر آ گئی تھیں۔ وارننگ شاٹ فائر کیے جانے کے بعد ایرانی کشتیاں واپس لوٹ گئیں۔ پینٹاگون کے مطابق ایرانی پاسداران انقلاب کی طرف سے اس قسم کے مشکوک رویے کا یہ پہلا واقعہ نہیں۔

چین میں شرح پیدائش میں ڈرامائی کمی

چین میں بچوں کی پیدائش کی شرح میں بہت واضح کمی دیکھنے میں آئی ہے۔ ساتھ ہی اس ملک کی آبادی میں عمر رسیدہ افراد کی تعداد بھی تیزی سے بڑھ رہی ہے۔ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ دس سالوں کے دوران چین کی آبادی میں محض 0,53 فیصد اضافہ ہوا۔ آج چین کی کُل آبادی ایک عشاریہ اکتالیس ارب ہے، جس کے بعد بعض حلقوں میں وہاں آبادی سکڑنے کے خدشات پیدا ہوگئے ہیں۔ چین میں ہر پانچویں شہری کی عمر ساٹھ برس سے زیادہ ہے اور نوجوان افرادی قوت کی تعداد میں کمی واقع ہو رہی ہے۔ ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ یہ صورتحال دنیا کی دوسری سب سے بڑی معیشت کو سست کر سکتی ہے۔

ویڈیو دیکھیے 05:44
ویڈیو دیکھیے 04:54
آڈیو سنیے 04:00
اشتہار

ڈی ڈبلیو پکچر گیلری