شمالی وزیرستان واقعہ: پختون قوم پرست چراغ پا | حالات حاضرہ | DW | 27.05.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

شمالی وزیرستان واقعہ: پختون قوم پرست چراغ پا

شمالی وزیرستان کے واقعے پر خیبر پختونخوا اور ملک کے دیگر پشتون علاقوں میں غم و غصے کی لہر دوڑ گئی ہے۔ جب کہ پختون خواہ ملی عوامی پارٹی نے اس مسئلے کو ہر سطح پر اٹھانے کا اعلان کیا ہے۔

رات گئے اس واقعے کے خلاف کوئٹہ، لورالائی، پشین، ژوب، چمن، کراچی، قلعہ سیف اللہ، سوات، پشاور، بنوں اور موسیٰ خیل سمیت ملک کے کئی علاقوں میں مظاہرے ہوئے، جب کہ آج بھی ملک کے کچھ حصوں میں مظاہرے ہو رہے ہیں۔ سوشل میڈیا پر پختون قوم پرست جماعتوں کے کارکنان پاکستانی میڈیا کے رویے پر چراغ پا ہیں جب کہ پی ٹی ایم کے ذرائع کا دعویٰ ہے کہ دنیا بھر میں موجود پختون سیاسی کارکنان اور عوام اس واقعے کے خلاف احتجاجی پروگرامز ترتیب دے رہے ہیں۔

کئی ناقدین کے خیال میں اس واقعے نے پختون قوم پرستی کے جذبات کو ابھار دیا ہے اور پختون رہنماؤں کے بیانات ان جذبات کی عکاسی کرتے ہیں۔ پختونخوا ملی عوامی پارٹی کے رہنما اور معروف پشتون قوم پرست سینیٹر عثمان کاکڑ نے اس واقعے پر اپنا ردِ عمل دیتے ہوئے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ’’ہم سمجھتے ہیں کہ کل کا واقعہ پختونوں پر لشکر کشی کرنے اور ان کی نسل کشی کرنے کے مترادف ہے۔ پاکستان کی اسٹیبلشمنٹ نے دہشت گردی کی جنگ کے نام پر اربوں ڈالرز کمائے ہیں اور پختونوں نے ستر ہزار جانیں قربان کیں۔ ان کا گھر بار چھوٹا اور ان کا کاروبار تباہ ہوا۔ کل کے واقعے نے یہ ثابت کر دیا ہے کہ دہشت گردی کی یہ جنگ انتہا پسندوں کے خلاف نہیں بلکہ پختونوں کے خلاف ہے۔‘‘

Pakistan Taliban Attacke in Wana (DW/M. Shah)

ہماری اطلاعات یہ ہیں کہ پی ٹی ایم والے مسلح ہو کر آئے اور انہوں نے فائرنگ کی، جس سے پانچ سپاہی زخمی بھی ہوئے، اسحاق خاکوانی

پاکستان میں ذرائع ابلاغ اور ریاستی اداروں کی طرف سے کل کے واقعے کی ذمہ داری پی ٹی ایم پر ڈالی گئی لیکن عثمان کاکڑ کا یہ دعویٰ ہے کہ پی ٹی ایم اس واقعے کی بالکل ذمہ دار نہیں ہے: ’’فائرنگ فوج کی چوکیوں سے کی گئی۔ ہماری اسٹیبلشمنٹ فاٹا کو مفتوحہ علاقہ سمجھتی ہے۔ لیکن ہم یہ برداشت نہیں کریں گے۔ ہم نے کل بھی اس واقعے کے خلاف ملک کے مختلف حصوں میں احتجاج کیا اور ہم مزید احتجاج بھی کریں گے۔ ہماری پارٹی اس مسئلے کو پارلیمنٹ میں بھی اٹھائے گی۔‘‘

سوات سے تعلق رکھنے والے پی ٹی ایم کے رہنما علی حسن عثمان کاکڑ کے اس غصے کو جائز قرار دیتے ہیں: ’’کل کے واقعے کی وجہ سے پورے پختون بیلٹ میں بہت غصہ ہے لیکن ہم اپنی پر امن جدوجہد جاری رکھیں گے۔ ہم ایک جنگ مخالف تحریک ہیں۔ ہم کیوں کسی پر فائرنگ کریں گے۔ ہم اس واقعے کے خلاف پورے ملک اور دنیا کے مختلف حصوں میں پر امن طریقے سے مظاہرہ کریں گے۔‘‘

ویڈیو دیکھیے 04:19

منظور پشتین سے کچھ سوال اور ان کے جواب

اتوار 26 مئی کو پیش آنے والے واقعے پر جہاں پی پی پی سمیت مختلف سیاسی جماعتوں نے پی ٹی ایم کے پر امن احتجاج کے حق کو تسلیم کیا ہے وہیں کچھ تجزیہ نگاروں کا خیال ہے کہ موجودہ صورتِ حال کی کچھ ذمہ داری پی ٹی ایم پر بھی عائد ہوتی ہے۔ معروف تجزیہ کار رحیم اللہ یوسف زئی کا کہنا ہے کہ پی ٹی ایم کی طرف سے بھی اشتعال انگیز نعرے لگائے گئے، جس کی وجہ سے صورتِ حال کشیدہ ہوئی:  ’’کل کے واقعے کی وجہ سے درجہ حرارت بہت بڑھ گیا ہے۔ اب اس کو نیچے لانے کی ضرورت ہے۔ پی ٹی ایم کا جو بیانیہ ہے اور ان کے جو نعرے ہیں، ان کو کئی حلقے بہت اشتعال انگیز قرار دیتے ہیں اور ایسا نہیں ہے کہ انہیں اسپیس نہیں دیا گیا۔ ان کے پانچ امیدوار انتخابات میں کھڑے ہوئے۔ انہوں نے شروع میں پورے ملک میں جلسے بھی کیے لیکن ان کے اسٹیج سے ایسے نعرے لگائے گئے، جن کو کئی حلقے اشتعال انگیز سمجھتے ہیں۔ اگر آپ کو پاکستان میں سیاست کرنی ہے تو آپ کارویہ محتاط ہونا چاہیے۔‘‘

پاکستان میں ذرائع ابلاغ کے کردار پر اس واقعے کے حوالے سے بہت تنقید ہورہی ہے لیکن رحیم اللہ یوسف زئی کا کہنا ہے کہ جب ریاست کسی تنظیم کے لیے کہہ دے کہ اس کا وقت ہوگیا ہے تو پھر میڈیا محتاط ہو جاتا ہے: ’’ذرائع ابلاغ کیوں کسی ایسی تنظیم کے لیے رسک لیں گے، جس کے بارے میں ریاستی ادارے کہیں کہ اس کا وقت پورا ہو گیا ہے۔ ایسی صورت میں ذرائع ابلاغ سیف کھیلتے ہیں اور سیلف سینسر شپ بڑھ جاتی ہے۔ پھر مسئلہ یہ بھی ہے کہ ان علاقوں میں میڈیا کی رسائی بھی نہیں ہے تو وہ آئی ایس پی آر کی پریس ریلیز پر ہی انحصارکرنا مناسب سمجھتے ہیں۔ سیاسی جماعتیں بھی ایسے موقع پر اپنے مفادات کے تحت موقف اختیار کرتی ہیں۔‘‘

Pakistan Sadiq Zharak in Quetta

اس واقعے کے خلاف کوئٹہ، لورالائی، پشین، ژوب، چمن، کراچی، قلعہ سیف اللہ، سوات، پشاور، بنوں اور موسیٰ خیل سمیت ملک کے کئی علاقوں میں مظاہرے ہوئے۔

کئی مبصرین کا خیال ہے کہ آنے والے ہفتوں میں پی ٹی ایم کے خلاف سختیاں بڑھ سکتی ہیں۔ حکومت کا کہنا ہے کہ وہ کسی بھی صورت ریاستی رٹ کو چیلنج نہیں ہونے دے گی۔ پی ٹی آئی کے رہنما اور سابق وفاقی وزیر اسحاق خاکوانی کا کہنا ہے کہ اس واقعہ کی ذمہ داری پی ٹی ایم پر عائد ہوتی ہے: ’’ہماری اطلاعات یہ ہیں کہ پی ٹی ایم والے مسلح ہو کر آئے اور انہوں نے فائرنگ کی، جس سے پانچ سپاہی زخمی بھی ہوئے۔ آخر سپاہی خود تو اپنے آپ کو گولی نہیں ماریں گے۔ انہیں زخمی کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ یہ لوگ ریاست کے خلاف نعرے لگاتے ہیں، جس کو دشمن ممالک اپنے مقاصد کے لیے استعمال کرتے ہیں۔‘‘

ان کا کہنا تھا کہ حکومت کی پوزیشن بہت واضح ہے کہ پی ٹی ایم کےکچھ مطالبات جائز ہیں لیکن ان کو پیش کرنے کا طریقہ یہ نہیں ہونا چاہیے کہ وہ گالیاں نکالیں: ’’اگر پی ٹی ایم پر امن طریقے سے اپنی جدوجہد کرے گی تو ہم سنیں گے بھی اور ان کے مسائل کو حل بھی کرنے کی کوشش بھی کریں گے لیکن اگر انہوں نے ریاست کی رٹ کو چیلنج کیا تو پھر قانون حرکت میں آئے گا اور کسی کو بھی ریاستی رٹ کو چیلنج کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔‘‘

ویڈیو دیکھیے 03:19

آئی ایس آئی نے نہیں، پولیس نے گرفتار کیا تھا، گلالئی

 

ڈی ڈبلیو کے ایڈیٹرز ہر صبح اپنی تازہ ترین خبریں اور چنیدہ رپورٹس اپنے پڑھنے والوں کو بھیجتے ہیں۔ آپ بھی یہاں کلک کر کے یہ نیوز لیٹر موصول کر سکتے ہیں۔

DW.COM

Audios and videos on the topic