شام میں داعش کے خلاف جنگی مشن، جرمنی بھی کود پڑا | حالات حاضرہ | DW | 01.12.2015
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شام میں داعش کے خلاف جنگی مشن، جرمنی بھی کود پڑا

وفاقی حکومت داعش کے خلاف جنگ میں اپنے بارہ سو فوجی بھیجنا چاہتی ہے۔ آج کابینہ نے اس فوجی مشن کی اجازت دے دی ہے جبکہ پارلیمان سے اس کی منظوری ابھی باقی ہے۔ جرمن فوج کا یہ سب سے بڑا غیر ملکی مشن ہوگا۔

جرمن میڈیا کے مطابق یہ ایک جنگی مشن ہے، جس کی منصوبہ بندی جرمن چانسلر انگیلا میرکل اور ان کے وزراء کر رہے ہیں۔ اس فوجی میں مشن میں ٹورناڈو جاسوس طیارے، فیولنگ طیارے، ایک فَرِيگيٹ اور علاقے میں بارہ سو تک جرمن فوجی تعینات کیے جائیں گے، جو داعش کے خلاف فرانسیسی فوج کو مدد فراہم کریں گے۔

جرمن وزیر دفاع اُرزولا فان ڈئیر لائن کی طرف سے اس منصوبے کا دفاع کرتے ہوئے کہنا تھا، ’’ سب سے بنیادی چیز یہ ہے کہ اسد حکومت اور اس کے ماتحت فوجیوں کے ساتھ کسی قسم کا بھی کوئی تعاون نہیں کیا جائے گا۔‘‘

لیکن ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ شام میں طویل المدتی حل میں ان عناصر کی شمولیت خارج از امکاں قرار نہیں دی جا سکتی، جو فی الحال اسد حکومت کے ساتھ ہیں، ’’ہمیں شامی ریاست کو تباہ ہونے سے بچانا ہوگا۔‘‘ جرمنی کی خاتون وزیر دفاع کا مزید کہنا تھا کہ اس غلطی کو دوبارہ نہیں دہرایا جانا چاہیے، جو عراق میں کی گئی تھی، ’’ شکست کے بعد صدام حسین کے حمایتیوں کو سیاسی نظام میں شامل نہیں ہونے دیا گیا تھا، اب اس غلطی کو دوبارہ نہیں دہرایا جانا چاہیے۔‘‘

Frank-Walter Steinmeier und Ursula von der Leyen

جرمن خاتون وزیر دفاع اُرزولا فان ڈئیر لائن اور جرمن وزیر خارجہ فرانک والٹر شٹائن مائر

تاہم انہوں نے یہ بات واضح کرتے ہوئے کہا کہ نئی ممکنہ حکومت میں اسد کا کوئی مستقبل نہیں ہے۔ جرمنی کی طرف سے شام کی جنگ میں شمولیت کا فیصلہ پیرس حملوں کے بعد فرانسیسی حکومت کی اپیل پر کیا گیا ہے۔ اس فیصلے کو جرمن حکومت کی طرف سے ایک بڑا قدم قرار دیا جا رہا ہے کیونکہ جرمنی ابھی تک شامی جنگ میں براہ راست شمولیت سے گریز کرتا آیا ہے۔

توقع کی جا رہی ہے کہ جرمنی کے ایوان زیریں ( بُنڈس ٹاگ) میں اس پر ووٹنگ بدھ کے روز ہو گی۔ برطانیہ بھی شام میں کی جانے والی فضائی کارروائیوں کا حصہ بننا چاہتا ہے اور اس کے پارلیمان میں بھی ووٹنگ رواں ہفتے ہی ہو رہی ہے۔

تاہم جرمن وزیر خارجہ فرانک والٹر شٹائن مائر کا کہنا تھا کہ صرف ٹورناڈو جاسوس طیاروں کے پائلٹ ان علاقوں پر پرواز کریں گے، جو داعش کے زیر کنٹرول ہیں۔

ملتے جلتے مندرجات

اشتہار