سربیا میں پھنسے مہاجر اور شدید جاڑے کے دن | مہاجرین کا بحران | DW | 11.12.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

سربیا میں پھنسے مہاجر اور شدید جاڑے کے دن

یورپی یونین کے رکن ملک کروشیا کے قریب سرب سرحدی علاقے سِڈ میں سینکڑوں تارکین وطن کئی ماہ سے پھنسے ہوئے ہیں اور اس وقت یہ یار و مددگار نوجوان شدید نوعیت کے موسم سرما کا سامنا کر رہے ہیں۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق یہ نوجوان روزانہ کی بنیاد پر سرحد عبور کر کے کروشیا میں داخلے کی کوشش کرتے ہیں اور سرحد کی بندش کی وجہ سے روزانہ ہی انہیں دوبارہ سربیا میں دھکیل دیا جاتا ہے۔

پرانے کمبل سردیوں کے لباس میں تبدیل

سربیا: مہاجرین  پر جوؤں اور سردی کے امراض کا حملہ

یورپی سردی، 23 ہزار مہاجر بچوں کے لیے خطرہ

ہر صبح شدید سردی میں سِڈ شہر کے اس حصے میں واقع ایک پرنٹنگ فیکٹری  کی جانب، جو یورپی یونین کے ساتھ سرحد سے پہلے سرب علاقے میں آخری اسٹاپ ہے، یہ نوجوان جاتے ہیں۔ اس پورے علاقے میں پولیس اور مقامی رضاکار ان تارکین وطن پر کڑی نگاہ رکھے ہوئے ہوتے ہیں اور بہت سے مغربی یورپی ممالک سے تعلق رکھنے والے رضاکار بھی ان افراد میں کافی، سیب، ابلے ہوئے انڈے اور پینے کا پانی تقسیم کرتے نظر آتے ہیں۔

ویڈیو دیکھیے 01:35
Now live
01:35 منٹ

سربیا کی شدید سردی میں پھنسے بے گھر تارکین وطن

اس علاقے میں ایک جنریٹر بھی لگایا گیا ہے، تاکہ یہ تارکین وطن اپنے موبائل فون چارج کر سکیں جب کہ ان تارکین وطن کو یہاں خیمے، جوتے اور کپڑے بھی دیے جاتے ہیں۔

ان میں سے چند تارکین وطن نے ایک قریبی جنگل میں ڈیرے ڈال رکھے ہیں تاکہ پولیس کی نگاہوں سے بچا جا سکے۔ ان کے کپڑے میلے اور کیچڑ زدہ ہیں اور چہروں پر شدید اور مسلسل تھکن کے آثار بھی نظر آتے ہیں۔

خود کو سرج کے نام سے متعارف کروانے والے ایک 28 سالہ افغان مہاجر کے مطابق، ’’میرے پاس کچھ نہیں بچا۔ سردی اتنی شدید ہے کہ ہمیں ہر روز یہی گمان ہوتا ہے کہ کل تک ہم مر چکے ہوں گے۔‘‘

اس افغان تارک وطن نے بتایا کہ اب تک وہ 60 مرتبہ کروشیا میں داخلے کی کوشش کر چکا ہے جب کہ ایک دفعہ تو وہ سلووینیا تک پہنچنے میں بھی کامیاب ہو گیا تھا، تاہم ہر بار اسے پکڑ کر دوبارہ سربیا لوٹا دیا گیا۔

کروشیا میں امدادی تنظیم ڈاکٹرز وِدآؤٹ بارڈرز کے مطابق سریبا میں اس وقت تقریباﹰ پانچ ہزار تارکین وطن موجود ہیں، جن کی بڑی تعداد مہاجرین کے باقاعدہ مراکز میں مقیم ہے، تاہم سِڈ میں تقریباﹰ پانچ سو تارکین وطن اس شدید نوعیت کی صورت حال کا سامنا کر رہے ہیں۔

DW.COM

Audios and videos on the topic

اشتہار