رضوان کی جلد صحت یابی کسی معجزے سے کم نہيں تھی، بھارتی ڈاکٹر | کھیل | DW | 14.11.2021
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

کھیل

رضوان کی جلد صحت یابی کسی معجزے سے کم نہيں تھی، بھارتی ڈاکٹر

محمد رضوان پاکستانی کرکٹ ٹیم کے وکٹ کیپر اور ایک شاندار کھلاڑی خیال کیے جاتے ہیں۔ وہ ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے سیمی فائنل سے قبل بیمار ہو گئے تھے لیکن انہوں نے صحت یاب ہو کر ميچ کھيلا اور شاندار کارکردگی کا مظاہرہ بھی کيا۔

خلیجی ریاست متحدہ عرب امارات میں ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے دوسرے سیمی فائنل میچ میں پاکستانی کرکٹ ٹیم شکست کھا کر ٹورنامنٹ سے باہر ہو چکی ہے۔ اس میچ سے قبل پاکستانی ٹیم کے اہم بلے باز محمد رضوان کے بیمار ہونے کی اطلاع سامنے آئی تھی اور پھر وہ میچ سے قبل صحت یاب قرار دے دیے گئے۔

"گرتے ہیں شہسوار ہی" ۔۔۔۔ پاکستانی کپتان بابر اعظم

رضوان نے سیمی فائنل میں پاکستانی ٹیم کی جانب سے سب سے زیادہ اسکور بھی کیا۔ یہ میچ آسٹریلا جیت گیا لیکن ان کی ٹیم میں سے بھی کسی کھلاڑی نے نصف سینچری نہیں بنائی تھی۔

رضوان کے بیمار اور ہسپتال میں داخل ہونے کی خبر سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی تھی۔ البتہ ان کے اتنی جلدی صحت مند ہونے کو ان کے معالج نے حیران کن قرار دیا ہے۔

Neuseeland T20 Cricket Pakistan vs Neuseeland

محمد رضوان ایک وکٹ کیپر ہونے کے علاوہ بہتر بیٹر بھی ہیں

معجزانہ صحت یابی

دبئی میں محمد رضوان کے معالج  ظہیر زین العابدین کا تعلق بھارت سے ہے اور وہ میڈیور ہسپتال سے وابستہ ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ پاکستان بيٹسمين پھیپھڑے کے انفیکشن میں مبتلا ہونے کی وجہ سے انتہائی نگہداشت کے یونٹ میں تھے اور ان کے سیمی فائنل کھیلنے کے امکانات بظاہر محدود دکھائی دے رہے تھے۔ سینے کے امراض کے ماہر ڈاکٹر ظہیر زین العابدین کا کہنا ہے کہ ان کو یقین نہیں تھا کہ وہ اتنی تیزی کے ساتھ بیماری کی گرفت سے باہر نکل سکیں گے لیکن میچ سے قبل جس طرح انہیں صحتیابی ملی، وہ یقینی طور پر حیران کن اور معجزانہ قرار دی جا سکتی ہے۔

آسٹریلوی کرکٹ ٹیم چوبیس برس بعد پاکستان کا دورہ کرے گی

بھارت سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر ظہیر زین العابدین کا تعلق جنوبی ریاست کیرالا سے ہے۔ انہوں نے نیوز ایجنسی اے ایف پی کو بتایا کہ چیسٹ انفیکشن جیسی بیماری میں صحتیاب ہونے کے لیے کم از کم پانچ سے سات روز درکار ہوتے ہیں لیکن یہ محمد رضوان کا اللہ پر کامل یقین اور میچ کھیلنے کی بیتابی تھی کہ جس نے انہیں صحت عطا کی۔

India vs Pakistan - T20 world cup cricket

بھارتی ٹیم کے کپتان ویراٹ کوہلی محمد رضوان کو شاندار بیٹنگ کرنے پر شاباش دیتے ہوئے

ڈاکٹر زین العابدین کے مطابق پاکستانی بیٹر نو نومبر کو ہسپتال لائے گئے تھے اور انہیں بیماری کی شدت دیکھتے ہوئے فوری طور پر داخل بھی کر لیا گیا۔ ڈاکٹر کے مطابق ان کو گلے میں شدید درد تھا اور جب کلینیکل ٹیسٹ مکمل کیے گئے تو ان کے سینے میں انفیکشن ظاہر ہوا۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ابتدا میں ایسا بھی محسوس ہوا کہ کہیں انہیں دل کی تکلیف نہ ہو، لیکن تمام ٹیسٹوں کے بعد یہ پھیپھڑے کا انفیکشن نکلا۔

نیوزی لینڈ سیمی فائنل میں، بھارت کی چھُٹی

حوصلہ مندی کی تعریف

محمد رضوان کے بیمار اور پھر حیران کن صحت یابی کی تعریف پاکستانی کرکٹ ٹیم کی بیٹنگ کوچ میتھیو ہیڈن نے بھی کی۔ آسٹریلیا سے تعلق رکھنے والے عالمی شہرت کے بلے باز میتھیو ہیڈن نے رضوان کی سیمی فائنل میچ میں شاندار بیٹنگ اور پھر وکٹ کیپنگ کو انتہائی دلیرانہ اور شاندار قرار دیا تھا۔ ٹیم کی مینیجمنٹ اور بقیہ کھلاڑی بھی رضوان کی فوری ریکوری پر بہت خوش ہوئے اور میچ میں ان کی کارکردگی کو متاثر کن قرار دیا تھا۔

ع ح/ع س (اے ایف پی)