دہشت گردی کی مبینہ توثیق، آسٹریلوی مفتی اعظم کا جوابی مقدمہ | معاشرہ | DW | 23.04.2016
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

دہشت گردی کی مبینہ توثیق، آسٹریلوی مفتی اعظم کا جوابی مقدمہ

آسٹریلوی مسلمانوں کے اعلیٰ ترین مذہبی رہنما مفتی اعظم ابراہیم ابومحمد نے اپنے خلاف دہشت گردی کی مبینہ توثیق اور مذہبی خونریزی کی حمایت کے الزامات کے بعد ایک آسٹریلین جریدے کے خلاف ہتک عزت کا مقدمہ دائر کر دیا ہے۔

Australien Muslime Moschee in Sydney

سڈنی کی ایک مسجد میں مقامی مسلمان جمعے کا خطبہ سنتے ہوئے

سڈنی سے ہفتہ تئیس اپریل کے روز موصولہ نیوز ایجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں کے مطابق مقامی ذرائع ابلاغ نے آج لکھا کہ سڈنی سے شائع ہونے والے روزنامے ڈیلی ٹیلیگراف نے اپنے متعدد مضامین میں یہ تاثر دینے کی کوشش کی تھی کہ مفتی اعظم ابراہیم ابومحمد دہشت گردی کو جائز قرار دیتے ہیں۔

روزنامہ گارڈیئن کے مطابق اپنے خلاف اس طرح کے مضامین کی اشاعت کے بعد جمعہ بائیس اپریل کو مفتی اعظم نے اس بارے میں جریدے ڈیلی ٹیلیگراف کے خلاف باقاعدہ مقدمہ دائر کر دیا کہ اس اخبار نے انہیں ’فرانسیسی دارالحکومت پیرس میں دہشت گردانہ حملوں سے متعلق توثیقی رویہ اختیار کرنے والا مسلم رہنما‘ اور ’خونریز مسلم جہاد کا حمایتی‘ قرار دیا ہے۔

مفتی اعظم ابومحمد، جو آسٹریلوی سنی مسلم برادری کے سرکردہ ترین مذہبی رہنما ہیں، کے بارے میں سڈنی کے اخبار ڈیلی ٹیلیگراف نے یہ تاثر پیرس میں گزشتہ برس 13 نومبر کے دہشت گردانہ حملوں کے تناظر میں شائع ہونے والے اپنے مضامین میں دیا تھا۔

اس کثیر الاشاعت جریدے نے تب اپنے صفحہ اول پر مفتی اعظم کی تین مختلف جسمانی حالتوں میں تین ایسی تصویریں بھی شائع کی تھیں، جن میں انہیں ایک ایسی شخصیت کے طور پر پیش کیا گیا تھا، جس نے اپنی آنکھوں، کانوں اور منہ کو بند کر رکھا ہو۔ ان تین تصویروں کے نیچے کیپشن کے طور پر لکھا گیا تھا: ’’نہ کوئی مسئلہ دیکھو، نہ کوئی تشویش سنو، نہ انگلش بولو۔‘‘

اس کے بعد اسی آسٹریلین جریدے نے اپنے ایک اور آرٹیکل میں یہ سرخی بھی لگائی تھی: ’’(فلسطینی تنظیم) حماس تک نے پیرس حملوں کی مذمت کی ہے، لیکن آسٹریلیا کے مفتی اعظم ابراہیم ابومحمد ایسا کیوں نہیں کرتے؟‘‘

ڈی پی اے نے لکھا ہے کہ عسکریت پسند مسلمانوں کی تنظیم ’اسلامک اسٹیٹ‘ یا داعش کے جہادیوں کی طرف سے کیے گئے پیرس حملوں کے دو روز بعد مفتی اعظم ابومحمد نے ایک بیان جاری کیا تھا، جس میں انہوں نے ’معصوم انسانی جانوں کے ضیاع پر گہرے افسوس‘ کا اظہار کیا تھا۔

DW.COM