دبئی میں عمارات کے لیے آگ سے تحفظ کے نئے زیادہ سخت ضوابط | حالات حاضرہ | DW | 22.01.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

دبئی میں عمارات کے لیے آگ سے تحفظ کے نئے زیادہ سخت ضوابط

خلیجی عرب ریاست دبئی میں عمارات کے لیے آگ سے تحفظ کے ضوابط سخت تر بنا دیے گئے ہیں۔ یہ ضوابط اس جدید ریاست میں حال ہی میں مختلف کثیر المنزلہ عمارات میں ہونے والی آتش زدگی کے واقعات کی روشنی میں متعارف کروائے گئے ہیں۔

Dubai - Brand im Hochhaus (Reuters/A. Jadallah)

صلفہ ٹاورز میں لگنے والی آگ نے دیکھتے ہی دیکھتے پندرہ منزلوں کو اپنی لپیٹ میں لے لیا تھا

حالیہ برسوں کے دوران دبئی کی مختلف کثیر المنزلہ عمارات میں آگ لگنے کے واقعات رونما ہوئے تھے اور یہ آگ تیزی سے پھیل گئی تھی۔ آگ کے تیزی سے پھیلنے کی وجہ وہ تعمیراتی مواد تھا، جو عمارات پر باہر کی جانب لگایا جاتا ہے۔

ان نئے ضوابط کا اعلان شہری دفاع کے لیفٹیننٹ طاہر حسن الطاہر نے ایک سکیورٹی نمائش کے موقع پر کیا۔ اسی دوران دبئی کے لیے آگ اور سکیورٹی کا نیا کوڈ بھی لانچ کیا گیا۔

طاہر حسن الطاہر نے کہا کہ تعمیراتی کمپنیوں کو نئے ضوابط کی پاسداری کرنا ہو گی اور اس امر کو یقینی بنانا ہو گا کہ عمارات پر بیرونی جانب جو کوٹنگ کی جاتی ہے، اُس کے آگ پکڑنے کے امکانات صفر کے برابر ہوں۔ طاہر کے مطابق ان کمپنیوں کو ہدایات دی گئی ہیں کہ وہ باقاعدگی کے ساتھ عمارات پر لگے ’کلیڈنگ پینلز‘ کے معائنے کیا کریں اور ایک مخصوص مدت کے بعد اُنہیں بدل دیا کریں۔ اُنہوں نے کہا کہ اِن نئے ضوابط کی خلاف ورزی کرنے والوں کو پچاس ہزار درہم تک کے جرمانے کی سزا کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق نئے ضوابط کے اعلان کے موقع پر یہ بتانے کی بجائے کہ آئندہ کیا کچھ نیا ہو گا، حکام اس طرح کی تفصیلات پر زیادہ توجہ دیتے رہے کہ مثلاً پہلے آگ سے بچاؤ کے ضوابط کی فہرست سات سو سات صفحات پر مشتمل ہوا کرتی تھی، جو آئندہ ایک ہزار تین سو چوراسی صفحات پر مشتمل ہو گی۔

Address Downtown Hotel in Dubai (picture-alliance/AP Photo/S. Alamba)

2015ء میں سالِ نو کے موقع پر ایک لگژری ہوٹل ’دی ایڈریس ڈاؤن ٹاؤن‘ میں آگ لگنے کے نتیجے میں سولہ افراد زخمی ہو گئے تھے

دبئی میں گزشتہ کچھ عرصے کے دوران تیزی سے نئی عمارات تعمیر کی گئی ہیں اور مختصر مدت کے اندر اندر ایسی سینکڑوں کثیرالمنزلہ عمارات وجود میں آ گئی ہیں، جن کے باہر کی جانب جلد آگ پکڑنے والی کوٹنگ کی گئی ہے۔ خاص طور پر سن 2012ء سے پہلے جتنی بھی عمارتیں تعمیر ہوئیں، اُن کے باہر ایسے پینل لگائے گئے، جو آگ کے خلاف مزاحمت نہیں کرتے۔

ایک سرکاری اندازے کے مطابق دبئی میں ایسی عمارات کی تعداد کم از کم تیس ہزار ہے۔ اگرچہ ایسی تمام عمارات کو اپنے بیرونی پینل تبدیل کرنے کے لیے کہا گیا ہے تاہم اس حوالے سے کچھ نہیں بتایا گیا کہ اس مہنگے عمل کے اخراجات کس کے ذمے ہوں گے۔ 

2015ء میں سالِ نو کے موقع پر دبئی کی مشہورِ عالم آتش بازی سے چند ہی گھنٹے پہلے ایک لگژری ہوٹل ’دی ایڈریس ڈاؤن ٹاؤن‘ میں آگ لگنے کے نتیجے میں سولہ افراد زخمی ہو گئے تھے۔

گزشتہ سال جولائی میں دبئی مرینہ میں واقع پچھتر منزلہ عمارت صلفہ ٹاورز میں آگ لگ گئی تھی اور شعلوں نے دیکھتے ہی دیکھتے پندرہ منزلوں کو اپنی لپیٹ میں لے لیا تھا۔

اشتہار