خاتون امیدوار کی انتخابی ریلی پر بم حملہ، 14 ہلاک | حالات حاضرہ | DW | 13.10.2018
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

خاتون امیدوار کی انتخابی ریلی پر بم حملہ، 14 ہلاک

افغانستان کے شمالی صوبہ تخار میں ایک خاتون پارلیمانی امیدوار کی انتخابی ریلی میں ہونے والے بم حملے میں کم از کم 14 افراد ہلاک جبکہ 30 سے زائد دیگر افراد زخمی ہیں۔ افغانستان میں 20 اکتوبر کو انتخابات ہونا ہیں۔

افغانستان کے شمال مشرقی صوبہ تخار کے پولیس ترجمان خلیل عسیر نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ دھماکا خیز مواد ایک موٹر سائیکل پر نصب کیا گیا تھا جسے ضلع روستک میں ہونے والی  اُس انتخابی ریلی کے قریب کھڑا کیا گیا تھا جس سے ایک خاتون پارلیمانی امیدوار نذیفہ یوسف بیک نے خطاب کرنا تھا۔ اس ریلی میں شرکت کے لیے کافی زیادہ لوگ جمع تھے تاہم پولیس کا کہنا تھا کہ دھماکے کے وقت نذیفہ وہاں موجود نہیں تھیں اس لیے وہ محفوظ رہیں۔

نذیفہ بیک اُن 417 خواتین میں شامل ہیں جو 20 اکتوبر کو ہونے والے پارلیمانی انتخابات میں امیدوار ہیں۔ ملک میں ہونے والے کسی پارلیمانی انتخابات میں خواتین امیدواروں کی یہ سب سے بڑی تعداد ہے۔ خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق ان پارلیمانی انتخابات کے لیے ملک بھر میں کُل 2500 امیدوار میدان میں موجود ہیں۔

Afghanistan Wahlen

نذیفہ بیک اُن 417 خواتین میں شامل ہیں جو 20 اکتوبر کو ہونے والے پارلیمانی انتخابات میں امیدوار ہیں۔

ایک عینی شاہد خان جان نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ یہ ایک انتہائی شدید دھماکا تھا اور اس میں ’’بہت زیادہ لوگ‘‘ مارے گئے ہیں۔

ابھی تک اس حملے کی ذمہ داری کسی عسکریت پسند گروپ نے قبول نہیں کی۔ تاہم طالبان کی طرف سے دھمکی دی جا چکی ہے کہ وہ ان انتخابات کو کامیاب بنانے کی کوشش کرنے والے ہر شخص کو نشانہ بنائیں گے اور خاص طور پر سکیورٹی فورسز۔

ان انتخابات کے حوالے سے ہونے والی پر تشدد کارروائیوں کے نتیجے میں اب تک پانچ امیدوار ہلاک ہو چکے ہیں۔ افغان الیکشن اہلکاروں کے مطابق دو امیدواروں کو اغواء کیا گیا ہے اور چار دیگر امیدوار شدید زخمی بھی ہوئے۔

تاجکستان کی سرحد کے قریب موجود افغان صوبہ تخار طویل عرصے سے طالبان عسکریت پسندی کا گڑھ بنا ہوا ہے۔ طالبان چاہتے ہیں کہ افغان قوم 20 اکتوبر کو ہونے والے انتخابات کا بائیکاٹ کرے۔

ویڈیو دیکھیے 01:55

افغانستان میں انتخابات کی تیاریاں

ا ب ا /ع ح (روئٹرز، اے ایف پی)

DW.COM