′حکومت کے لیے قدامت پسند ہی کافی ہیں‘ | حالات حاضرہ | DW | 08.07.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

'حکومت کے لیے قدامت پسند ہی کافی ہیں‘

جرمن پارلیمان کے اسپیکر وولفگانگ شوئبلے نے کہا ہے کہ اگر سوشل ڈیموکریٹک پارٹی مخلوط حکومت کا ساتھ چھوڑ بھی دے تو بھی چانسلر انگیلا میرکل کی حکومت پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔

سابق وزیر خزانہ اور پارلیمان کے موجودہ اسپیکر وولفگانگ شوئبلے کے مطابق،'' اگر ایس پی ڈی اپنی داخلی  مشاورت کے بعد پارلیمانی مدت ختم ہونے سے قبل ہی مخلوط حکومت کا ساتھ چھوڑ بھی دے تو اس صورت میں بھی یونین جماعتیں تنہا ہی کاروبار حکومت چلا سکتی ہیں۔‘‘شوئبلے نے یہ بات روزنامہ بلڈ سے بات کرتے ہوئے کی۔

جرمنی کی مخلوط حکومت چانسلر میرکل کی قدامت پسند کرسچن ڈیموکریٹک پارٹی(سی ڈی یو )، صوبہ باویریا میں ان کی ہم خیال جماعت کرسچن سوشل یونین ( سی ایس یو ) اور سوشل ڈیموکریکٹ پارٹی ( ایس پی ڈی) پر مشتمل ہے۔

عوامی جائزوں میں دوسری عالمی جنگ کے بعد ایس پی ڈی کی مقبولیت اپنی نچلی ترین سطح پر پہنچ چکی ہے۔ حکومت کا حصہ بننے کے فیصلے پر سوشل ڈیموکریٹک پارٹی کے حامی منقسم رائے رکھتے ہیں۔ساتھ ہی کئی حلقوں کا خیال ہے کہ ایس پی ڈی کو مزید دو برسوں تک حکومت کا ساتھ نہیں دینا چاہیے۔ جرمنی میں نئے پارلیمانی انتخابات 2021ء میں ہونا طے ہیں۔

وولفگانگ شوئبلے نے قدامت پسندوں اور بائیں بازو کی سوشل ڈیموکریٹس کے اتحاد پر کہا کہ اتنے بڑے اتحاد لازمی طور پر نہیں بلکہ صرف مخصوص حالات میں ہی ہونے چاہیں، '' گرینڈ کولیشن کو دس برس سے زائد ہو گئے ہیں اور ظاہر ہے یہ بہت زیادہ ہے‘‘۔

شوئبلے کا یہ بیان حکومتی حلقوں کی بے اطمینانی اور بے چینی کو عیاں کر رہا ہے۔ ایس پی ڈی کے حمایتوں کی ایک مخصوص تعداد کا خیال ہے کہ اس جماعت کو فوری طور پر حزب اختلاف کا کردار ادا کرنا چاہیے۔ اس طرح یا تو قدامت پسندوں کی اقلیتی حکومت ہو گی یا نیا حکومت اتحاد بننے کا اور یا پھر قبل از وقت انتخابات کرائے جائیں گے۔

ویڈیو دیکھیے 01:15

انگیلا میرکل نے چوتھی مرتبہ چانسلر کا حلف اٹھا لیا

DW.COM

Audios and videos on the topic